غزل

رشید حسرت نے 'آپ کی شاعری (پابندِ بحور شاعری)' کی ذیل میں اس موضوع کا آغاز کیا، ‏جون 14, 2021

ٹیگ:
  1. رشید حسرت

    رشید حسرت محفلین

    مراسلے:
    181
    جھنڈا:
    Pakistan
    غزل

    مُفتی و قاضی کی کرتے ہیں نہ مُلّاؤں کی بات
    ہم تو کرتے ہیں فقط اے دوستو گاؤں کی بات

    دور لوّر کا ہے سو بیٹھے ہیں اُس کے پاؤں میں
    مانتے ہیں باپ کی نہ نوجواں ماؤں کی بات

    اور بھی تو مسئلے تھے حل طلب اِس بِیچ میں
    پاک و بھارت کر رہے ہیں صِرف دریاؤں کی بات

    ہم کہ صحرا، خُشکی و دشت و بیاباں کے اسِیر
    کیا جچے گی لب پہ اپنے کوہ پیماؤں کی بات

    کُچھ چُنیدہ لوگوں پہ کرتے ہیں یہ لُطف و کرم
    کیا کریں ہم آج کے اِن بزم آراؤں کی بات

    فلسفہ و حِکمٹ و منطق سے کیا لینا اِنہیں
    گُفتگُو چہرے پہ یا کرتے ہیں یہ پاؤں کی بات

    گُفتگُو کرتے ہوئے یہ احتیاطیں اِس لیئے
    آ ہی جائے لب پہ نہ کُچلی تمنّاؤں کی بات

    جِن کے ہونے سے نہ تھا سُکھ چین کا جِینا نصِیب
    چہچہا کے کرتے ہو کیا ایسے آقاؤں کی بات

    یُوسفِؔ ثانی ہیں حسرتؔ، ہم پہ ہو گی بے اثر
    لیلاؔ و شیرینؔ و سسّیؔ اور زلیخاؤںؔ کی بات

    رشید حسرتؔ
     

اس صفحے کی تشہیر