نصیر ترابی غزل : ہے دگر سب سے مرے سَروِ سر افراز کا رنگ - نصیر ترابی

فرحان محمد خان نے 'پسندیدہ کلام' کی ذیل میں اس موضوع کا آغاز کیا، ‏نومبر 24, 2018

  1. فرحان محمد خان

    فرحان محمد خان محفلین

    مراسلے:
    2,125
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Cheeky
    غزل
    ہے دگر سب سے مرے سَروِ سر افراز کا رنگ
    وہ تو بول اُٹھتا ہے رنگوں میں اس انداز کا رنگ

    میرے موسم کو طبق مرے لہو کی گردش
    تیرے الفاظ کی خوشبو تری آواز کا رنگ

    تیری آنکھوں سے نمایاں مرے دل میں پیچاں
    کسی انجام کا پرتو کسی آغاز کا رنگ

    فصلِ آئندہ کے قصوں میں بھی کام آئے گا
    میرے پندار کا اسلوب ترے ناز کا رنگ

    کون سی رُت میں فضا دل کی کھلے گی آخر
    کِن ہواؤں میں کھلے گا مری آواز کا رنگ

    کم سخن ہو کے بھی لبریزِ سخن ہے گویا
    اب کے گہرا ہے بہت غمزۂ غماز کا رنگ

    دل ربائی میں رہی چہرہء خاموش کی بات
    خوش نمائی میں رہا طعنۂ طناز کا رنگ

    شب اگر ہے تو کسی توشۂ آزار کی شب
    رنگ اگر ہے تو کسی خوابِ پس انداز کا رنگ

    خاک اُڑاتے ہوئے جھونکے ہیں کہ سناٹا ہے
    رقص کرتا ہوا شعلہ ہے کہ آواز کا رنگ

    اُس کے جاتے ہی ہر اک آس کی لَے ٹوٹ گئی
    پھر نہ وہ شمع کی لَو ٹہری نہ وہ ساز کا رنگ

    فیضؔ کے بعد کہاں کوئی نواگر کہ نصیرؔ
    "حرفِ سادہ کو عنایت کرے اعجاز کا رنگ"
    نصیرؔ ترابی
    1985ء
     

اس صفحے کی تشہیر