عزیز حامد مدنی غزل : ہوا آشفتہ سر رکھتی ہے ہم آشفتہ حالوں کو - عزیز حامد مدنی

فرحان محمد خان نے 'پسندیدہ کلام' کی ذیل میں اس موضوع کا آغاز کیا، ‏اکتوبر 15, 2018

  1. فرحان محمد خان

    فرحان محمد خان محفلین

    مراسلے:
    2,138
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Cheeky
    غزل
    ہوا آشفتہ سر رکھتی ہے ہم آشفتہ حالوں کو
    برتنا چاہتی ہے دشتِ مجنوں کے حوالوں کو

    نہ آٰیا کچھ ، مگر ہم کشتگانِ شوق کو آیا
    ہوا کی زد میں آخر بے سپر رکھنا خیالوں کو

    خدا رکھے تجھے اے نفشِ دیوارِ صنم خانہ
    کہیں گے لوگ دیوارِ ابد تیری مثالوں کو

    اندھیری رات میں اک دشتِ وحشت زندگی نکلی
    چلا جاتا ہوں دامانِ نظر دیتا اُجالوں کو

    بجھا جاتا ہے دل سا ایک لعلِ شب چراغ آخر
    کہاں لے جاؤں اس کے ساتھ کے صاحب جمالوں کو

    کھڑی ہے تاج پہنے شہر میں خارِ مغیلاں کا
    جوابِ تازہ دینے زندگی کہنہ سوالوں کو

    خیاباں خندقوں میں کھل گئے وہ موجِ خوں گزری
    ہوائے زخمہ ور نے ساز سمجھا ہے نہالوں کو

    نکلنے ہی نہ پائے حلقۂ دشتِ تمنا سے
    ملی تھی گردشِ پرکار ایسی کچھ غزالوں کو

    سبو میں موج زن آبِ ضمیرِ مے گساراں ہے
    طلوعِ صبح تک روشن رکھیں گے ہم پیالوں کو

    کبود و سرخ میں تھی ، نیک و بد میں ، داغ و درماں میں
    ہوا سیّاح تھی دیکھ آئی سب غم کے شوالوں کو

    تغیّر کی زمیں پر آدمی کا تیز رو پرتو
    گیا ہے صورتِ مشعل لیے آئندہ سالوں کو
    عزیز حامد مدنی
    1962ء
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1

اس صفحے کی تشہیر