فراق غزل : میں کہ گا نہیں سکتا نغمۂ وطن تنہا - فراق گورکھپوری

فرحان محمد خان نے 'پسندیدہ کلام' کی ذیل میں اس موضوع کا آغاز کیا، ‏مئی 15, 2020

  1. فرحان محمد خان

    فرحان محمد خان محفلین

    مراسلے:
    2,138
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Cheeky
    آج سے کوئی پینتالیس برس پہلے کی بات ہے الہ آباد کہ ایک مشاعرے میں میرزا یگانہ نے اپنی تازہ ترین فارسی غزل سنائی جس کی شہرت اب تک اُردو دنیا کے خاص خاص حلقوں میں ہے اس زمین یا اسی بحر میں قافیہ بدل کر صرف تنہا کی ردیف کے ساتھ ہندوستان اور پاکستان میں کہیں اُردو غزلیں کہیں گئیں مگر اُنھیں میرزا یگانہ کی غزل کی مقبولیت نصیب نہیں ہوئی میرا دل بھی اس زمین میں غزل کہنے کو برسوں سے چاہ رہا تھا آج پینتالیس برس بعد یہ تمنا پوری ہوئی! فراق گورکھپوری
    (بحوالہ ماہنامہ آج کل دہلی بابت جون 1968ء )

    غزل
    میں کہ گا نہیں سکتا نغمۂ وطن تنہا
    کیسے دہر کا چھیڑوں سازِ انجمن تنہا

    جب بھی غور سے دیکھا تھی ہر انجمن تنہا
    سازِ ایں و آں تنہا ، سوزِ ما و من تنہا

    رنگ اور بے رنگی ، شادی و محن تنہا
    رونق اور ویرانی باغ اور بن تنہا

    ہر کوئی سمجھتا ہے اپنی ہی نگاہ اُس کو
    پڑ رہی ہے اس رُخ پر آج اک کرن تنہا

    کون آنکھ اُٹھتا ہے ، کون کان دیتا ہے
    میری خامشی تنہا ، شیوۂ سخن تنہا

    اس کی ہی بدولت ہے خطۂ ختن آباد
    اور خوشبوئے مشکِ آہوئے ختن تنہا

    آج تم کو جانا ہے ، جاؤ خوش رہو بھائی
    مجھ کو تو اُٹھانا ہے ہر غم و محن تنہا

    لے کے ایک انگڑائی بزم ہو گئی رخصت
    یادکارِ محفل ہے شمعِ انجمن تنہا

    اجنبی فضاؤں کی بھیگتی چلیں پلکیں
    گا رہا ہوں غربت میں نغمۂ وطن تنہا

    میں نے خواب میں دیکھا پچھلی رات کو ہمراز
    حلقۂ گنہگاراں اور اہرمن تنہا

    درسِ گاۂ اعظم ہے درسِ گاۂ تنہائی
    عشق کسب کرتا ہے زندگی کے فن تنہا

    سینۂ زماں میں ، میں بُو رہا ہوں آوازیں
    خامشی کے پردوں میں ، میں ہوں نغمہ زن تنہا

    جانے اور انجانے کتنے قیس گزرے ہیں
    پھر بھی روزِ اوّل سے نجد کا ہے بن تنہا

    شب کی کیا ضرورت تھی اہلِ دل کو دنیا میں
    تیرگی کو کافی تھی زلفِ پُر شکن تنہا

    کاش یہ غزل سنتے میرزا یگانہ بھی
    مجھ سے اُٹھ نہیں سکتا بارِ فکر و فن تنہا

    میں فراق سنتا ہوں سرمدی نواؤں کو
    بیکراں فضاؤں میں دل ہے نغمہ زن تنہا

    بزم میں بُلاتے ہو اس فراقّ کو جس نے
    عمر بھر پیا غم کا بادۂ کہن تنہا
    فراق گورکھپوری​
     
    آخری تدوین: ‏مئی 15, 2020
    • پسندیدہ پسندیدہ × 2

اس صفحے کی تشہیر