اقبال غزل: شیخ صاحب بھی تو پردے کے کوئی حامی نہیں

فرخ نے 'پسندیدہ کلام' کی ذیل میں اس موضوع کا آغاز کیا، ‏فروری 26, 2015

  1. فرخ

    فرخ محفلین

    مراسلے:
    1,722
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Aggressive
    شیخ صاحب بھی تو پردے کے کوئی حامی نہیں
    مفت میں کالج کے لڑکے ان سے بد ظن ہو گئے
    وعظ میں فرما دیا کل آپ نے یہ صاف صاف
    ''پردہ آخر کس سے ہو جب مرد ہی زن ہو گئے''
    یہ کوئی دن کی بات ہے اے مرد ہوش مند!
    غیرت نہ تجھ میں ہو گی، نہ زن اوٹ چاہے گی
    آتا ہے اب وہ دور کہ اولاد کے عوض
    کونسل کی ممبری کے لیے ووٹ چاہے گی

    بانگ درا از علامہ محمد اقبالؒ
     

اس صفحے کی تشہیر