اقبال عظیم غزل: شکستِ ظرف کو پندارِ رندانہ نہیں کہتے

محمد تابش صدیقی نے 'پسندیدہ کلام' کی ذیل میں اس موضوع کا آغاز کیا، ‏مارچ 23, 2020

  1. محمد تابش صدیقی

    محمد تابش صدیقی منتظم

    مراسلے:
    24,852
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Breezy
    شکستِ ظرف کو پندارِ رندانہ نہیں کہتے
    جو مانگے سے ملے ہم اس کو پیمانہ نہیں کہتے

    جہاں ساقی کے پائے ناز پر سجدہ ضروری ہو
    وہ بت خانہ ہے، اس کو رند میخانہ نہیں کہتے

    جنوں کی شرطِ اوّل ضبط ہے اور ضبط مشکل ہے
    جو دامن چاک کر لے اس کو دیوانہ نہیں کہتے

    جو ہو جائے کسی کا مستقل، بے شرکتِ غیرے
    وہ دل کعبہ ہے، اس دل کو صنم خانہ نہیں کہتے

    نہایت شکریہ اس پرسشِ احوال کا لیکن
    ہمیں عادت نہیں، ہم اپنا افسانہ نہیں کہتے

    جہاں ہر وقت اک محفل سجی ہو تیری یادوں کی
    اسے عشرت کدہ کہتے ہیں غم خانہ نہیں کہتے

    غرض کچھ بھی ہو ہم کو یاد تو رکھتا ہے ہر لحظہ
    عدو کو اپنے ہم اقبالؔ! بیگانہ نہیں کہتے

    ٭٭٭
    اقبالؔ عظیم
     
    • زبردست زبردست × 2
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1
  2. محمد خلیل الرحمٰن

    محمد خلیل الرحمٰن مدیر

    مراسلے:
    8,688
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Festive
    خوبصورت انتخاب۔
     
    • دوستانہ دوستانہ × 1

اس صفحے کی تشہیر