خورشید رضوی غزل:زمیں کا رزق ہے یا سُوئے آسماں گئی ہے -خورشید رضوی

فرحان محمد خان نے 'پسندیدہ کلام' کی ذیل میں اس موضوع کا آغاز کیا، ‏اکتوبر 28, 2019

  1. فرحان محمد خان

    فرحان محمد خان محفلین

    مراسلے:
    2,109
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Cheeky
    غزل
    زمیں کا رزق ہے یا سُوئے آسماں گئی ہے
    ہمارے گنبدِ دل کی صدا کہاں گئی ہے

    ملے کہاں سے کہ اب رائیگاں نہ ہونے دوں
    یہ زندگی تو مری سخت رائیگاں گئی ہے

    میں دل ہی دل میں نشیمن کی خیر مانگتا ہوں
    چمن کی سمت صبا یوں تو مہرباں گئی ہے

    گماں یہی تھا کہ اب وہ شبیہِ خون آلود
    چلی گئی تہِ دل سے مگر کہاں گئی ہے

    یہ سوچتا ہوں بھٹکتی ہوی نظر سے کاش
    وہیں وہیں پہ نہ جاتی جہاں جہاں گئی ہے

    ہر ایک شے پہ مجھے اعتبار آنے لگا
    یقیں کی لہر بہ اندازۂ گماں گئی ہے

    سمجھ نہ خود کو تو اے بحرِ بیکراں تنہا
    نظر بھی ساتھ ترے ہو کے بے کراں گئی ہے

    ہزار ساعتِ آئندہ خون روتی ہے
    یہ چشمِ نم جو کبھی سُوئے رفتگاں گئی ہے

    یہ موج، اس کو چٹانوں پہ سر پٹکنا ہے
    جو آبشار کی جانب رواں دواں گئی ہے

    ہر ایک نیند میں ڈوبے ہوے شبستاں تک
    بلا سے کوئی نہ جاگے، مگر اذاں گئی ہے
    خورشید رضوی
     

اس صفحے کی تشہیر