1. احباب کو اردو ویب کے سالانہ اخراجات کی مد میں تعاون کی دعوت دی جاتی ہے۔ مزید تفصیلات ملاحظہ فرمائیں!

    ہدف: $500
    $453.00
    اعلان ختم کریں

غزل برائے اصلاح

Misbahuddin Ansari Misbah نے 'اِصلاحِ سخن' کی ذیل میں اس موضوع کا آغاز کیا، ‏جولائی 7, 2019

  1. Misbahuddin Ansari Misbah

    Misbahuddin Ansari Misbah محفلین

    مراسلے:
    30
    جھنڈا:
    India
    موڈ:
    Cheerful
    اسلام وعلیکم محفلین.......اصلاح کی غرض سے ایک غزل پیش خدمت ہے
    استاد محترم جناب الف عین صاحب اصلاح کی زحمت کریں....شکریہ

    غزل

    سوالوں کی گٹھری اٹھانے لگے ہیں
    زمانے کے ڈر سے ستانے لگے ہیں


    وہی جس نے مجھکو بنایا تھا ہمدم
    نہ جانےوہ کیوں کر بھلانے لگے ہیں


    کبھی جس نے وعدہ وفا کا کیا تھا
    ستم اب وہی مجھ پہ ڈھانے لگے ہیں


    کریں گر شکایت تو کس سے کریں ہم
    وہ آنکھیں مجھے اب دکھا نے لگے ہیں


    اے مصباح تو ہی بتا کس خطا کے
    ترے سر پہ الزام آنے لگے ہیں


    مصباح انصاری ,گورکھپور,یو.پی.
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1
  2. الف عین

    الف عین لائبریرین

    مراسلے:
    33,523
    جھنڈا:
    India
    موڈ:
    Psychedelic
    سوالوں کی گٹھری اٹھانے لگے ہیں
    زمانے کے ڈر سے ستانے لگے ہیں
    ... کس کو ستانے لگے ہیں، محبوب کو؟ دوسرا مصرع بے معنی ہے

    وہی جس نے مجھکو بنایا تھا ہمدم
    نہ جانےوہ کیوں کر بھلانے لگے ہیں
    ... شتر گربہ ہے، جمع کے صیغے کی ردیف ہی ہے، پھر پہلے مصرع میں واحد کیسے ہو سکتی ہے؟
    انہوں نے ہی مجھ......
    ہو سکتا ہے

    کبھی جس نے وعدہ وفا کا کیا تھا
    ستم اب وہی مجھ پہ ڈھانے لگے ہیں
    ... وہی شتر گربہ!

    کریں گر شکایت تو کس سے کریں ہم
    وہ آنکھیں مجھے اب دکھا نے لگے ہیں
    یہ بھی شتر گربہ، اس بار ہم اور مجھے کے سبب
    ہمیں اب وہ آنکھیں.....

    اے مصباح تو ہی بتا کس خطا کے
    ترے سر پہ الزام آنے لگے ہیں
    .. درسر
     
  3. Misbahuddin Ansari Misbah

    Misbahuddin Ansari Misbah محفلین

    مراسلے:
    30
    جھنڈا:
    India
    موڈ:
    Cheerful
    سوالوں کی گٹھری اٹھانے لگے ہیں
    رہ رہ کہ ہمیں ہی ستانے لگے ہیں
    انھوں نے ہی مجھکو بنایا تھا ہمدم
    نہ جانے وہ کیوں کر بھلانے لگے ہیں
    کبھی جس نے وعدے وفا کے کیے تھے
    ستم اب وہی ہم پہ ڈھانے لگے ہیں
    کریں گر شکایت تو کس سے کریں ہم
    ہمیں اب وہ آنکھیں دکھانے لگے ہیں
    اے مصباح تو ہی بتا کس خطا کے
    در سر یہ الزام آنے لگے ہیں
    جناب الف عین صاحب کچھ ترمیم کے بعد پوسٹ کیا ہوں نظر ثانی کرنے کی زحمت کریں
     
    آخری تدوین: ‏جولائی 7, 2019
  4. الف عین

    الف عین لائبریرین

    مراسلے:
    33,523
    جھنڈا:
    India
    موڈ:
    Psychedelic
    مطلع کا دوسرا مصرع بحر سے خارج ہے اور دو لخت بھی۔ سوالوں کی گٹھری یا اس کو اٹھانے کے متعلق دوسرے مصرعے میں کچھ مربوط کہا جائے
    باقی اشعار درست ہیں
     
  5. Misbahuddin Ansari Misbah

    Misbahuddin Ansari Misbah محفلین

    مراسلے:
    30
    جھنڈا:
    India
    موڈ:
    Cheerful
    شکریہ محترم...
     
  6. Misbahuddin Ansari Misbah

    Misbahuddin Ansari Misbah محفلین

    مراسلے:
    30
    جھنڈا:
    India
    موڈ:
    Cheerful
    سوالوں کی گٹھری اٹھانے لگے ہیں
    سبھی ہم کو آنکھیں دکھانے لگے ہیں
    جناب الف عین صاحب مطلع دیکھیے....
     
  7. الف عین

    الف عین لائبریرین

    مراسلے:
    33,523
    جھنڈا:
    India
    موڈ:
    Psychedelic
    مطلع اب بھی دو لخت ہے۔ سوالوں کی گٹھری اٹھانے والا کون ہے؟ کچھ پتہ نہیں چلتا، دوسرے مصرعے میں وضاحت ہوتی تو بہتر ہوتا مگر دوسرے مصرعے میں ایک غیر متعلق بات کہی گئی ہے
     

اس صفحے کی تشہیر