1. اردو ویب کے سالانہ اخراجات کی مد میں فراخدلانہ تعاون پر احباب کا بے حد شکریہ نیز ہدف کی تکمیل پر مبارکباد۔ مزید تفصیلات ملاحظہ فرمائیں!

    $500.00
    اعلان ختم کریں

غزل برائے اصلاح

ارشد چوہدری نے 'اِصلاحِ سخن' کی ذیل میں اس موضوع کا آغاز کیا، ‏نومبر 29, 2018

ٹیگ:
  1. ارشد چوہدری

    ارشد چوہدری محفلین

    مراسلے:
    1,177
    جھنڈا:
    UnitedStates
    موڈ:
    Brooding
    بحر ۔۔ جمیل مثمن سالم ( مفاعلاتن مفاعلاتن مفاعلاتن مفاعلاتن )
    ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
    یہی تو دنیا میں ہو رہا ہے کسی کے دل میں وفا نہیں ہے
    یہاں اُسی کو سزا ملے گی اگر کسی کی خطا نہیں ہے
    ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
    نہیں جو کرتا کسی کی عزّت اُسے بھی عزّت ملے گی کیسے
    مگر یہاں ہے اُسی کی عزّت کسی کی جس کو حیا نہیں ہے
    ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
    نہ جرم کرنا بُری ہے عادت بُری لگے گی یہ تو سبھی کو
    تمیں اسی کی سزا ملے گی جو جرم تم نے کیا نہیں ہے
    ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
    کرو گے اچھا بُرے بنو گے جو ہو رہا ہے بتا رہا ہوں
    تمہیں شرابی کہے گی دنیا اگر تو دارو پیا نہیں ہے
    ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
    مجھے شکایت نہیں کسی سے یہی ہے دنیا رہے گی ایسے
    کبھی کسی سے نہ پیار کرنا اگر کسی سے ملا نہیں ہے
    ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
    وفا کا وعدہ نبھا رہا ہوں تمہیں نہیں ہے خیال جس کا
    وہی میں رشتہ نبھا رہا ہوں مجھے جو تم سے ملا نہیں ہے
    ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
    کسی کو ارشد معاف کرنا یہی ہے اچھی ادا کسی کی
    خدا تمہیں وہ عطا کرے گا جہاں میں جو کچھ ملا نہیں ہے
     
  2. ارشد چوہدری

    ارشد چوہدری محفلین

    مراسلے:
    1,177
    جھنڈا:
    UnitedStates
    موڈ:
    Brooding
  3. الف عین

    الف عین لائبریرین

    مراسلے:
    33,589
    جھنڈا:
    India
    موڈ:
    Psychedelic
    .نہیں بھائی ارشد صاحب۔ غزل فنی طور پر درست ہے لیکن مفہوم کے اعتبار سے کئی سوالات پیدا ہوتے ہیں جو بالکل غیر متعلق لگتے ہیں

    یہی تو دنیا میں ہو رہا ہے کسی کے دل میں وفا نہیں ہے
    یہاں اُسی کو سزا ملے گی اگر کسی کی خطا نہیں ہے
    ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ بے وفائی کا بے گناہی سے تعلق

    نہیں جو کرتا کسی کی عزّت اُسے بھی عزّت ملے گی کیسے
    مگر یہاں ہے اُسی کی عزّت کسی کی جس کو حیا نہیں ہے
    ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ بے حیائی کا عزت سے ربط؟

    نہ جرم کرنا بُری ہے عادت بُری لگے گی یہ تو سبھی کو
    تمیں اسی کی سزا ملے گی جو جرم تم نے کیا نہیں ہے
    ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ مطلب جرم کرنا بہت ضروری ہے!

    کرو گے اچھا بُرے بنو گے جو ہو رہا ہے بتا رہا ہوں
    تمہیں شرابی کہے گی دنیا اگر تو دارو پیا نہیں ہے
    ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ گرامر کی رو سے دوسرا نصف درست نہیں۔ خیال بھی پسند نہیں آیا

    مجھے شکایت نہیں کسی سے یہی ہے دنیا رہے گی ایسے
    کبھی کسی سے نہ پیار کرنا اگر کسی سے ملا نہیں ہے
    ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ بغیر ملے کون پیار کر سکتا ہے؟

    وفا کا وعدہ نبھا رہا ہوں تمہیں نہیں ہے خیال جس کا
    وہی میں رشتہ نبھا رہا ہوں مجھے جو تم سے ملا نہیں ہے
    ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ خیال کس کا؟ رشتہ ملنا؟

    کسی کو ارشد معاف کرنا یہی ہے اچھی ادا کسی کی
    خدا تمہیں وہ عطا کرے گا جہاں میں جو کچھ ملا نہیں ہے
    کس کی ادا؟ اس بات کا خدا کی عطا سے تعلق؟
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1

اس صفحے کی تشہیر