خورشید رضوی غزل : احساس کی تہوں میں جو موجِ قلق چلے - خورشید رضوی

فرحان محمد خان نے 'پسندیدہ کلام' کی ذیل میں اس موضوع کا آغاز کیا، ‏مئی 3, 2019

  1. فرحان محمد خان

    فرحان محمد خان محفلین

    مراسلے:
    2,109
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Cheeky
    غزل
    احساس کی تہوں میں جو موجِ قلق چلے
    قرطاس پر زبانِ قلم ہو کے شق چلے

    ہے دہر کی نہاد ہی سرگشتۂ رسوم
    حق کو بھی ایک رسم بنائیں تو حق چلے

    کب تک بچا بچا کے رکھوں اک نگہ کی یاد
    مانگے کی زندگی کی کہاں تک رمق چلے

    اُس کے نقوشِ پائے حنا بستہ دیکھ کر
    مٹی پہ آسماں سے اُتر کر شفق چلے

    ہم جس کو پڑھ رہے ہیں دبستانِ عشق میں
    فرہاد و قیس سے نہ وہ تازہ سبق چلے

    مشکل ہے ضبط سیل سخن بسکہ دوستو
    سی لوں اگر لبوں کو تو چھاتی تڑق چلے

    جو لب پہ نیم شب تہِ دل سے نکل کے آئے
    وہ بات سینہ سینہ ورق در ورق چلے

    ہستی ندامتوں کے دو آبے میں ڈوب جائے
    آنکھوں سے اشک اور جبیں سے عرق چلے

    خورشیدؔ کہہ گزر یہ سخن گسترانہ بات
    دیکھیں کسی سے گر یہ زمینِ ادق چلے
    خورشید رضوی
     
    • زبردست زبردست × 3
  2. عباد اللہ

    عباد اللہ محفلین

    مراسلے:
    1,268
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Cheeky
    دیکھیں کسی سے گر یہ زمین ادق چلے
    واہ واہ
     

اس صفحے کی تشہیر