عمر خیام --- کے منظوم اردو تراجم

شاکرالقادری نے 'تراجم' کی ذیل میں اس موضوع کا آغاز کیا، ‏ستمبر 17, 2006

  1. شاکرالقادری

    شاکرالقادری لائبریرین

    مراسلے:
    2,696
    موڈ:
    Cheerful
    عمر خیام
    ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
    ایزد چو وجود و گل ما می آراست
    دانست ز فعل ما چہ بر خواند خواست
    بی حکمش نیست ہر گناہی کہ مراست
    پس سوختن روز قیامت زکجاست
    شاکر القادری
    ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
    جس نے ڈھالا جسم خاکی، جس نے یہ اعضا دیے
    جانتا تھا وہ ازل سے جو گنہ میں نے کیے
    اس کی مرضی کے بنا پتا بھی ہل سکتا نہیں
    پھر بروز حشر یہ مجھ کو جلانا کس لیے
     
  2. شاکرالقادری

    شاکرالقادری لائبریرین

    مراسلے:
    2,696
    موڈ:
    Cheerful
    عمر خیام
    ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
    در دھر ھر آنکہ نیم نانی دارد
    از بہر نشست آشیانی دارد
    نہ خادم کس بود نہ مخدوم کسی
    گو شاد بزی کہ خوش جہانی دارد
    شاکر القادری
    ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
    وہ کہ جو رکھتا ہے آدھا نان کھانے کے لیے
    اور اک کٹیا بھی ہے سر کو چھپانے کے لیے
    وہ نہ خادم ہے کسی کا اور نہ مخدوم ہے
    قابل رشک و محبت ہے زمانے کے لیے
     
  3. شاکرالقادری

    شاکرالقادری لائبریرین

    مراسلے:
    2,696
    موڈ:
    Cheerful
    عمر خیام
    ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
    افسوس کہ نامہ جوانی طی شد
    واں تازہ بہار زندگانی دی شد
    آن مرغ طرب کہ نام او بود شباب
    فریاد! ندانیم کہ کی آمد و کی شد

    شاکر القادری
    ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
    ہائے صد افسوس کہ وقت جوانی طے ہوا
    آگیا وقت خزاں دور بہاراں جا چکا
    شادمانی کا پرندہ نام تھا جس کا شباب
    کب خدا معلوم آیا اور کس دم اڑ گیا
     
  4. شاکرالقادری

    شاکرالقادری لائبریرین

    مراسلے:
    2,696
    موڈ:
    Cheerful
    عمر خیام
    ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
    بر من قلم قضا چو بی من رانند
    پس نیک و بدش زمن چرا میدانند
    دی بی من و امروز چو دی بی من و تو
    فردا بچہ حجتم بداور خوانند
    ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
    شاکر القادری
    ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
    مجھ سے بن پوچھے ہی جب قسمت میں سب کچھ لکھ دیا
    پھر یہ نیکی اور بدی ہے میرے ذمہ کیوں بھلا
    حال اور ماضی ہیں دونوں میری مرضی کے بغیر
    کل بروز حشر پھر کیوں مجھ سے پوچھا جائے گا
     

اس صفحے کی تشہیر