علی زریون کا خوبصورت کلام

شعیب اصغر نے 'پسندیدہ کلام' کی ذیل میں اس موضوع کا آغاز کیا، ‏مئی 23, 2017

  1. شعیب اصغر

    شعیب اصغر محفلین

    مراسلے:
    41
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Relaxed
    ﺣﺎﻟﺖ ﺟﻮ ﮬﻤﺎﺭﯼ ﮬﮯ ﺗﻤﮭﺎﺭﯼ ﺗﻮ ﻧﮩﯿﮟ ﮬﮯ​
    ایسا ھے تو پھر یہ کوئی یاری تو نہیں ھے

    جتنی بھی بنا لی ھو، کما لی ھو یہ دنیا
    دنیا ھے تو پھر دوست ! تمھاری تو نہیں ھے

    تحقیر نہ کر ! یہ مِری اُدھڑی ھُوئی گدڑی
    جیسی بھی ھے اپنی ھے ادھاری تو نہیں ھے ۔۔ !

    یہ تُو جو محبت میں صلہ مانگ رھا ھے
    اے شخص تو اندر سے بھکاری تو نہیں ھے ؟

    ﻣﯿﮟ " ﺫﺍﺕ " ﻧﮩﯿﮟ ، ﺑﺎﺕ ﮐﮯ ﻧﺸّﮯ ﻣﯿﮟ ﮬﻮﮞ ﭘﯿﺎﺭﮮ
    ﺍﺱ ﻭﻗﺖ ﻣﺠﮭﮯ ﺗﯿﺮﯼ ﺧﻤﺎﺭﯼ ﺗﻮ ﻧﮩﯿﮟ ﮬﮯ

    ﺗﻨﮩﺎ ﮬﯽ ﺳﮩﯽ ، ﻟﮍ ﺗﻮ ﺭﮬﯽ ﮬﮯ ﻭﮦ ﺍﮐﯿﻠﯽ
    ﺑﺲ ﺗﮭﮏ ﮐﮯ ﮔﺮﯼ ﮬﮯ ﺍﺑﮭﯽ ﮬﺎﺭﯼ ﺗﻮ ﻧﮩﯿﮟ ﮬﮯ

    ﻣﺠﻤﻊ ﺳﮯ ﺍُﺳﮯ ﯾﻮﮞ ﺑﮭﯽ ﺑﮩﺖ ﭼﮍ ﮬﮯ ﮐﮧ ﺯﺭﯾﻮﻥ
    ﻋﺎﺷﻖ ﮬﮯ ﻣﺮﯼ ﺟﺎﻥ ! ﻣﺪﺍﺭﯼ ﺗﻮ ﻧﮩﯿﮟ ﮬﮯ.
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1
    • زبردست زبردست × 1

اس صفحے کی تشہیر