سلیم احمد سلیمؔ کس کو بتاؤں ابھی سے کیا ہوں میں - سلیم احمد

فرحان محمد خان نے 'پسندیدہ کلام' کی ذیل میں اس موضوع کا آغاز کیا، ‏مئی 19, 2018

  1. فرحان محمد خان

    فرحان محمد خان محفلین

    مراسلے:
    2,138
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Cheeky
    سلیمؔ کس کو بتاؤں ابھی سے کیا ہوں میں
    ابھی تو کارِ تمنا کی ابتدا ہوں میں

    تری کشش سے ترے گرد رقصِ شوق میں ہوں
    جو قُرب سے نہیں گھٹا وہ فاصلہ ہوں میں

    مری شکست سے تو بھی بکھر نہ جائے کہیں
    مجھے سنبھال کے رکھ تیرا آئینہ ہوں میں

    نشاط و درد کے ہر حال میں ہوا محسوس
    کہ جیسے دور کھڑا خود کو دیکھتا ہوں میں

    تو یاد ہے ترا کوئی حوالہ یاد نہیں
    وفا جفا کے وہ قصے بھلا چکا ہوں میں​
    سلیم احمد
     

اس صفحے کی تشہیر