1. احباب کو اردو ویب کے سالانہ اخراجات کی مد میں تعاون کی دعوت دی جاتی ہے۔ مزید تفصیلات ملاحظہ فرمائیں!

    ہدف: $450
    $368.00
    اعلان ختم کریں
  2. اردو محفل سالگرہ سیزدہم

    اردو محفل کی یوم تاسیس کی تیرہویں سالگرہ کے موقع پر تمام اردو طبقہ و محفلین کو دلی مبارکباد!

    اعلان ختم کریں
  3. دو ملین پیغامات کا کاؤنٹ ڈاؤن

    اردو محفل فورم پر دو ملین پیغامات مکمل ہونے میں صرف 1500 پیغامات باقی رہ گئے ہیں۔ مزید تفصیل ملاحظہ فرمائیے۔

    اعلان ختم کریں

سلطان محمد فاتح کی مجلس میں حافظِ شیرازی کا ذکرِ خیر اور احمد پاشا کی بدیہہ گوئی

حسان خان نے 'ادبیات و لسانیات' کی ذیل میں اس موضوع کا آغاز کیا، ‏اپریل 9, 2018

  1. حسان خان

    حسان خان لائبریرین

    مراسلے:
    13,697
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Bookworm
    عُثمانی مؤلّف محمد توفیق اپنے تذکرے 'قافلهٔ شُعَراء' (‌۱۲۹۰ھ/۱۸۷۳ء) میں احمد پاشا کے ذیل میں لکھتے ہیں:

    "یینه احمد پاشانېن بدیهیّاتېندان‌دېر که بیر گۆن فاتح سلطان محمد خانېن مجلسینده خواجه حافظې مدح و ﺍﻃﺮﺍﺀ ائدرلر و دیوانېندان تفأُّل ائیلرلر. اتفاقاً بو بیت چېقار:
    آنان که خاک را به نظر کیمیا کنند
    آیا بُوَد که گوشهٔ چشمی به ما کنند
    احمد پاشا بِالْبِداهه:
    آنان که خاک را به نظر کیمیا کنند
    خاکِ جواهرِ قدمت توتیا کنند
    بیتی‌نی اۏقور. حضرتِ پادشاه غایت پسند ائدر."


    ترجمہ:
    احمد پاشا کی بدیہیّات میں سے ایک دیگر یہ ہے کہ ایک روز فاتح سلطان محمد خان کی مجلس میں خواجہ حافظ کی بے حساب مدح و ستائش کی جا رہی تھی اور اُن کے دیوان سے فال گیری ہو رہی تھی۔ اتفاقاً یہ بیت نِکلی:
    آنان که خاک را به نظر کیمیا کنند
    آیا بُوَد که گوشهٔ چشمی به ما کنند

    جو افراد خاک کو [اپنی ایک] نظر سے کیمیا کر دیتے ہیں۔۔۔ کیا ایسا ہو گا کہ وہ ایک گوشۂ چشم ہماری جانب [بھی] کر دیں؟
    احمد پاشا نے فی البدیہہ یہ بیت خوانی (پڑھی):
    آنان که خاک را به نظر کیمیا کنند
    خاکِ جواهرِ قدمت توتیا کنند

    جو افراد خاک کو [اپنی ایک] نظر سے کیمیا کر دیتے ہیں۔۔۔ وہ تمہارے قدموں کی خاکِ جواہر کو [اپنی نظر] کا سُرمہ کرتے ہیں۔
    حضرتِ پادشاہ کو [یہ بیت] نہایت پسند آئی۔

    لاطینی رسم الخط میں:
    Yine Ahmed Paşanın bedîhiyyâtındandır ki bir gün Fâtih Sultân Mehmed Hân’ın meclisinde Hâce Hâfız’ı medh ve ıtrâ ederler ve dîvânından tefe’ül eylerler. İttifâken bu beyt çıkar:
    Ânân ki hâk-râ be-nazar kîmyâ konend
    Âyâ buved ki gûşe-i çeşmî be-mâ konend
    Ahmed Paşa bi’l-bedâhe:
    Ânân ki hâk-râ be-nazar kîmyâ konend
    Hâk-i cevâhir-i kademet tûtyâ konend
    beytini okur. Hazret-i pâdişâh gâyet pesend eder.
     
    آخری تدوین: ‏اپریل 9, 2018
    • پسندیدہ پسندیدہ × 4
    • زبردست زبردست × 4
  2. اریب آغا

    اریب آغا محفلین

    مراسلے:
    675
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Bookworm
    سلطنتِ عثمانیہ پر زبانِ فارسی کی فرمانفرمائی کی سب سے قوی دلیل یہ ہے! سلام بر عثمانیانی که فارسی را دوست می‌داشتند
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 3
    • زبردست زبردست × 1
  3. حسان خان

    حسان خان لائبریرین

    مراسلے:
    13,697
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Bookworm
    ضِمناً، ایک جالبِ توجہ و دلچسپ چیز یہ بھی ہے کہ سلطان محمد فاتح کے دیوانِ اشعار میں جو صرف ایک فارسی بیت ہے وہ حافظ شیرازی کی ایک مشہور ترین بیت سے متاثر ہو کر کہی گئی ہے:

    اگر آن تُرکِ شیرازی به دست آرد دلِ ما را
    به خالِ هندویش بخشم سمرقند و بخارا را

    (حافظ شیرازی)
    اگر وہ تُرکِ شیرازی ہمارے دل کو دست میں تھام لے تو میں اُس کے سیاہ خال کے عِوض میں سمرقند و بُخارا بخش دوں۔

    اگر آن گبرِ افرنجی به دست آرد دلِ ما را
    به خالِ هندویش بخشم سِتنبول و قلاتا را

    (سلطان محمد فاتح 'عَونی')
    اگر وہ کافرِ فرنگی ہمارے دل کو [اپنے] تصرُّف میں لے لے تو میں اُس کے سیاہ خال کے عِوض میں استانبول و قلاتا [جیسے شہر] بخش دوں۔
     
    • زبردست زبردست × 2
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1
  4. یاز

    یاز مدیر

    مراسلے:
    17,480
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Confused
    زبردست۔
    سلطان فاتح بھی بیت کہتے تھے کیا؟
     
  5. اریب آغا

    اریب آغا محفلین

    مراسلے:
    675
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Bookworm
    برادرم، لطفاََ اس پوری غزل کی اشتراک گذاری کردیں
     
    • متفق متفق × 1
  6. حسان خان

    حسان خان لائبریرین

    مراسلے:
    13,697
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Bookworm
    یہ بیت کسی غزل کا مطلع نہیں ہے، بلکہ دیوان کے حصّۂ فردیات میں درج ہے۔
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1
  7. حسان خان

    حسان خان لائبریرین

    مراسلے:
    13,697
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Bookworm
    سلطان محمد فاتح متخلّص بہ 'عَونی' کا تُرکی میں ایک کامل شعری دیوان ہے، جس کا انگریزی ترجمہ و تشریح بھی موجود ہے۔
     
    • زبردست زبردست × 1
  8. ربیع م

    ربیع م محفلین

    مراسلے:
    968
    اکثر ترک سلاطین شاعر تھے اور ان کے دیوان ملتے ہیں
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1
    • متفق متفق × 1
  9. حسان خان

    حسان خان لائبریرین

    مراسلے:
    13,697
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Bookworm
    تا حال میں سلطان محمد فاتح کی مندرجۂ ذیل تُرکی ابیات کا اردو ترجمہ کر چکا ہوں:

    زُلفۆڭۆڭ زنجیرینه بند ائیله‌دۆڭ شاهوم بنی
    قول‌لېغېندان قېلماسون آزاد اللٰهوم بنی

    (سلطان محمد فاتح 'عونی')
    اے میرے شاہ! تم نے مجھے اپنی زُلف کی زنجیر میں اسیر کر دیا
    میرا اللہ مجھے اُس (زُلف) کی غلامی سے آزاد نہ کرے!
    Zülfüñüñ zencîrine bend eyledüñ şâhum beni
    Kullıgından kılmasun âzâd Allahum beni


    جورِ دل‌بر طعنِ دشمن سوزِ فرقت ضعفِ دل
    دۆرلۆ دۆرلۆ درد ایچۆن یاراتمېش اللٰهوم بنی

    (سلطان محمد فاتح 'عونی')
    جورِ دلبر، طعنِ دشمن، سوزِ فرقت، ضعفِ دل۔۔۔۔ [ظاہراً] میرے اللہ نے مجھے طرح طرح کے درد کے لیے خَلق کیا ہے۔
    Cevr-i dilber ta'n-ı düşmen sûz-ı fürkat za'f-ı dil
    Dürlü dürlü derd içün yaratmış Allahum beni


    یاقماغا و یېقماغا هپ جُمله ال بیر ایتدیلر
    سوزِ سینه اشکِ دیده آتشِ آهوم بنی

    (سلطان محمد فاتح 'عونی')
    سوزِ سینہ، اشکِ دیدہ اور میری آتشِ آہ۔۔۔ مجھے جلانے اور تباہ کرنے کے لیے سب کے سب متّحد و متّفق ہو گئے [ہیں]۔
    Yakmağa vü yıkmağa hep cümle el bir itdiler
    Sûz-ı sîne eşk-i dîde âteş-i âhum beni


    فاتحِ قسطنطنیہ سلطان محمد فاتح متخلّص بہ عونی کی ایک 'جہادی' نظم کا مقطع:

    ای محمّد معجزاتِ احمدِ مُختار ایله
    اومارام غالب اۏلا اعدایِ دینه دولتۆم

    (سلطان محمد فاتح 'عونی')
    اے محمّد [فاتح]! میرا گُمان ہے کہ حضرتِ احمدِ مُختار کے معجزات کے ساتھ میری سلطنت و حکومت اعدائے دین پر غالب آ جائے گی۔
    Ey Muhammed mu'cizât-ı Ahmed-i Muhtâr ile
    Umaram gâlib ola a'da-yı dîne devletüm


    نفس و مال ایله نۏلا قېلسام جهان‌دا اجتهاد
    حمدُلله وار غزایا صدهزاران رغبتۆم

    (سلطان محمد فاتح 'عونی')
    اگر میں نفس و مال کے ساتھ جہان میں جہاد کرو‌ں تو کیا ہوا؟۔۔۔ الحمد للہ کہ مجھ میں غزا و جہاد [کرنے] کے لیے صد ہزاراں رغبت ہے۔
    Nefs ü mâl ile n'ola kılsam cihanda ictihâd
    Hamdüllillâh var gazâya sad-hezâran ragbetüm


    فضلِ حقّ و هِمّتِ جُندِ رجال‌الله ایله
    اهلِ کُفرۆ سرتاسر قهر ائیله‌مک‌دیر نِیّتیم

    (سلطان محمد فاتح 'عونی')
    حق تعالیٰ کے فضل، اور فوجِ مردان خُدا کی سعی و کوشش و مدد کے ساتھ اہلِ کُفر کو سرتاسر مغلوب کرنا میری نیّت ہے۔
    Fazl-ı Hakk u himmet-i cünd-i ricâlullâh ile
    Ehl-i küfrü ser-te-ser kahr eylemektir niyyetim


    کسمه‌زم اغیار جوری ایله جانان‌دان اُمید
    کیم کسیلمه‌ز خوفِ شیطان ایله ایمان‌دان اُمید

    (سلطان محمد فاتح 'عَونی')
    میں غیروں کے سِتم کے سبب محبوب سے اُمید قطع نہیں کروں گا۔۔۔ کیونکہ شیطان کے خوف کے باعث ایمان سے اُمید نہیں قطع کر لی جاتی۔
    Kesmezem ağyâr cevri ile cânândan ümîd
    Kim kesilmez havf-ı şeytân ile îmândan ümîd


    یۆزۆڭ مهِ عید و سرِ زُلفۆڭ شبِ اِسرا
    غمزه‌ڭ یدِ موسیٰ لبِ لعلۆڭ دمِ عیسیٰ

    (سلطان محمد فاتح 'عونی')
    تمہارا چہرہ ماہِ عید، تمہاری زُلف کا سِرا شبِ معراج، تمہارا غمزہ دستِ موسیٰ، اور تمہارا لبِ لعل نفَسِ عیسیٰ ہے۔
    Yüzüñ meh-i 'îd ü ser-i zülfüñ şeb-i İsrâ
    Gamzeñ yed-i Mûsâ leb-i la'lüñ dem-i 'Îsâ


    حرامی غمزه‌ڭ و طرّار زُلفۆڭ
    گؤڭۆل شهرینده بیلمن نه آرارلار

    (سلطان محمد فاتح 'عونی')
    میں نہیں جانتا کہ تمہارا راہزن غمزہ اور تمہاری طرّار زُلف [میرے] شہرِ دل میں کیا چیز تلاش کرتی ہے۔
    Harâmî gamzeñ ü tarrâr zülfüñ
    Göñül şehrinde bilmen ne ararlar


    گؤرسک اۏل غُنجه‌لبی چاکِ گریبان ایدرۆز
    گُل یۆزۆڭ یادېنا بُلبُل گیبی افغان ایدرۆز

    (سلطان محمد فاتح 'عونی')
    اگر ہم اُس غُنچہ لب [محبوب] کو دیکھ لیں تو [اپنے] گریبان کو چاک کرتے ہیں۔۔۔ [اُس مثلِ] گُل چہرے کی یاد میں ہم بُلبُل کی مانند فغاں کرتے ہیں۔
    Görsek ol gonca-lebi çâk-ı girîbân iderüz
    Gül yüzüñ yâdına bülbül gibi efgân iderüz


    گؤزلرۆم خاکِ درِ دل‌دار ایله پُرنورمېش
    خاطِروم زخمِ فراقِ یار ایله مسرورمېش

    (سلطان محمد فاتح 'عونی')
    [ظاہراً] میری چشمیں دلدار کے در کی خاک سے پُرنور تھیں۔۔۔ [ظاہراً] میرا قلب و ذہن یار کے فراق کے زخم سے مسرور تھا۔
    Gözlerüm hâk-i der-i dildâr ile pür-nûrmış
    Hâtırum zahm-ı firâk-ı yâr ile mesrûrmış


    غم بیابانېندا شیدا ایدۆپ ای لیلی‌خرام
    عقل و هوشوم‌دن آیېردوڭ بنی مجنون ائیله‌دۆڭ

    (سلطان محمد فاتح 'عونی')
    اے لیلیٰ جیسے خِرام والے [محبوب]! تم نے بیابانِ غم میں شیدا کر کے [مجھ کو] عقل و ہوش سے جُدا کر دیا [اور] مجھ کو مجنون کر دیا۔
    Gam beyâbânında şeydâ idüp ey Leylî-hırâm
    'Akl ü hûşumdan ayırduñ beni Mecnûn eyledüñ


    ساقیا مَی ویر که بیر گۆن لاله‌زار ائل‌دن گیدر
    چۆن ایرر فصلِ خزان باغ و بهار ائل‌دن گیدر

    (سلطان محمد فاتح 'عونی')
    اے ساقی! شراب دو کہ ایک روز لالہ زار دست سے چلا جائے گا
    جب موسمِ خَزاں پہنچے گا، باغ و بہار دست سے چلی جائے گی
    Sâkîyâ mey vir ki bir gün lâle-zâr elden gider
    Çün irer fasl-ı hazân bâğ ü behâr elden gider
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1
    • زبردست زبردست × 1
  10. یاز

    یاز مدیر

    مراسلے:
    17,480
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Confused
    بہت نوازش۔
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1
  11. حسان خان

    حسان خان لائبریرین

    مراسلے:
    13,697
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Bookworm
    عُثمانی سلطنت کا عظیم ترین سلطان، سلطان سلیمان قانونی تُرکی شاعری کا بھی ایک بُزُرگ نام ہے۔ وہ 'مُحِبّی' کے تخلُّص سے شاعری کرتا تھا اور اُس کے دیوانِ اشعار میں ۴۱۰۰ سے زیادہ تُرکی غزلیات ہیں۔ :bulgy-eyes:

    امیر خسرو دہلوی کی ایک فارسی بیت پر سلطان سُلیمان قانونی 'مُحِبّی' کی تُرکی تخمیس:
    بندِ زُلفۆڭه ازل دۆشدۆم گرفتارم هنوز
    اۏل سبب‌دن خسته و عشقېلا بیمارم هنوز
    اویخو گلمز گؤزۆمه تا صُبح بیدارم هنوز

    بر جمالت همچنان من عاشقِ زارم هنوز
    ناله‌ای کز سوزِ عشقت داشتم دارم هنوز

    (سلطان سلیمان قانونی 'مُحِبّی')
    میں تمہاری زُلف کی قید میں بہ روزِ ازل گِرا تھا، [لیکن] ہنوز اسیر و گرفتار ہوں۔۔۔ اُس سبب سے میں ہنوز خستہ اور عشق کے باعث بیمار ہوں۔۔۔ میری چشم میں نیند نہیں آتی، میں تا صُبح ہنوز بیدار ہوں۔۔۔ میں تمہارے جمال پر ہنوز اُسی طرح عاشقِ زار ہوں۔۔۔۔ جو نالہ میں تمہارے سوزِ عشق کے باعث رکھتا تھا، ہنوز رکھتا ہوں۔

    Bend-i zülfüñe ezel düşdüm giriftâram henûz
    Ol sebebden ḫasta vü 'ışḳ-ıla bîmâram henûz
    Uyḫu gelmez gözüme tâ subh bî-dâram henûz

    Ber cemâlet hem-çünân men 'aşıḳ-ı zâram henûz
    Nâleî kez sûz-ı 'ışḳet dâştem dâram henûz
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 3

اس صفحے کی تشہیر