زیرک کی پسندیدہ غزلیں

زیرک نے 'پسندیدہ کلام' کی ذیل میں اس موضوع کا آغاز کیا، ‏جولائی 19, 2019

  1. زیرک

    زیرک محفلین

    مراسلے:
    3,448
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Buzzed
    آج ایک نیا سلسلہ "زیرک کی پسندیدہ غزلیں" شروع کرنے جا رہا ہوں، امید ہے کہ نیا سلسلہ بھی سب احباب کو پسند آئے گا۔

    جو ترے شہر میں آیا ہے اسے راضی کر
    جس نے کشکول اٹھایا ہے اسے راضی کر
    جو تری بزم سے جاتا ہے اسے جانے دے
    جو تری بزم میں آیا ہے اسے راضی کر
    تجھ پہ جادو ہے نہ آسیب نہ سایہ ہے کوئی
    جس گداگر کو رُلایا ہے اسے راضی کر
    میں نے مانا کہ شفا دَم میں بھی ہوتی ہے مگر
    تُو نے جس جس کو ستایا ہے اسے راضی کر
    آج محفل میں ترے سخت رویے کے سبب
    جس کا آنسو نکل آیا ہے اسے راضی کر
    جس نے راہوں میں تری پھول بچھائے تھے کبھی
    جس نے ہر خار اٹھایا ہے اسے راضی کر

    نامعلوم
    جاسمن
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 3
    • زبردست زبردست × 1
  2. زیرک

    زیرک محفلین

    مراسلے:
    3,448
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Buzzed
    نیم کی چھاؤں وہ پُروائی کہیں سے لا دو
    میری بستی مری انگنائی کہیں سے لا دو
    صبحِ پُر نور، حسیں شام نہ وہ بزمِ طرب
    مجھ کو میری شبِ تنہائی کہیں سے لا دو
    مجھ کو احساس دلائے جو مرے ہونے کا
    ایک خاموش تماشائی کہیں سے لا دو
    غم کی حدت سے دہکتا ہےمرا سارا وجود
    آج اک دستِ مسیحائی کہیں سے لا دو
    اب گراں بار گزرتی ہیں وفائیں مجھ پر
    دام لے لو، دلِ ہرجائی کہیں سے لا دو
    آج اس شہرِ پریشاں میں اکیلا ہوں بہت
    مجھ کو اے وقت مرے بھائی کہیں سے لا دو
    چیختے رہتے ہیں سناٹے شب و روز امیؔن
    کھوئی اس شہر کی رعنائی کہیں سے لا دو
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 2
  3. زیرک

    زیرک محفلین

    مراسلے:
    3,448
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Buzzed
    وہ ہمسفر تھا مگر اس سے ہمنوائی نہ تھی
    کہ دھوپ چھاؤں کا عالم رہا جدائی نہ تھی
    محبتوں کا سفر اس طرح بھی گزرا تھا
    شکستہ دل تھے مسافر، شکستہ پائی نہ تھی
    عداوتیں تھیں، تغافل تھا، رنجشیں تھیں بہت
    بچھڑنے والے میں سب کچھ تھا، بیوفائی نہ تھی
    بچھڑتے وقت ان آنکھوں میں تھی ہماری غزل
    غزل بھی وہ جو کسی کو ابھی سنائی نہ تھی
    کسے پکار رہا تھا وہ ڈوبتا ہوا دن؟
    سدا تو آئی تھی لیکن کوئی دُہائی نہ تھی
    عجیب ہوتی ہے راہِ سخن بھی دیکھ نصیؔر
    وہاں بھی آ گئے آخر، جہاں رسائی نہ تھی

    نصیر ترابی
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1
    • زبردست زبردست × 1
  4. زیرک

    زیرک محفلین

    مراسلے:
    3,448
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Buzzed
    وہ بے وفا ہے تو کیا مت کہو برا اس کو
    کہ جو ہوا سو ہوا خوش رکھے خدا اس کو
    نظر نہ آئے تو اس کی تلاش میں رہنا
    کہیں ملے تو پلٹ کر نہ دیکھنا اس کو
    وہ سادہ خُو تھا زمانے کے خم سمجھتا کیا
    ہوا کے ساتھ چلا لے اڑی ہوا اس کو
    وہ اپنے بارے میں کتنا ہے خوش گماں دیکھو
    جب اس کو میں بھی نہ دیکھوں تو دیکھنا اس کو
    ابھی سے جانا بھی کیا اس کی کم خیالی پر
    ابھی تو اور بہت ہو گا سوچنا اس کو
    اسے یہ دُھن کہ مجھے کم سے کم اداس رکھے
    مری دعا کہ خدا دے یہ حوصلہ اس کو
    پناہ ڈھونڈ رہی ہے شبِ گرفتہ دِلاں
    کوئی پتاؤ مرے گھر کا راستہ اُس کو
    غزل میں تذکزہ اس کا نہ کر نصیرؔ کہ اب
    بھُلا چکا وہ تجھے تُو بھی بھُول جا اس کو

    نصیر ترابی
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 2
  5. زیرک

    زیرک محفلین

    مراسلے:
    3,448
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Buzzed
    یہ ہے مجلسِ شہِ عاشقاں کوئی نقدِ جاں ہو تو لے کے آ
    یہاں چشمِ تر کا رواج ہے، دلِ خونچکاں ہو تو لے کے آ
    یہ فضا ہے عنبر و عود کی، یہ محل ہے وردِ درود کا
    یہ نمازِ عشق کا وقت ہے، کوئی خوش اذاں ہو تو لے کے آ
    یہ جو اک عزا کی نشست ہے، یہ عجب دعا کا حصار ہے
    کسی نارسا کو تلاش کر، کوئی بے اماں ہو تو لے کے آ
    یہ عَلَم ہے حق کی سبیل کا، یہ عَلَم ہے اہلِ دلیل کا
    کہیں اور ایسی قبیل کا، کوئی سائباں ہو تو لے کے آ
    یہ حضور و غیب کے سلسلے، یہ متاعِ فکر کے مرحلے
    غمِ رائیگاں کی بساط کیا، غمِ جاوِداں ہو تو لے کے آ
    سرِ لوحِ آب لکھا ہوا، کسی تشنہ مشک کا ماجرا
    سرِ فردِ ریگ لکھی ہوئی، کوئی داستاں ہو تولے کے آ
    ترے نقشہ ہائے خیال میں، حدِ نینوا کی نظیر کا
    کوئی اور خطۂ آب و گِل، تہہِ آسماں ہو تو لے کے آ
    کبھی کُنجِ حُر کے قریب جا، کبھی تابہ صحنِ حبیب جا
    کبھی سُوئے بیتِ شبیب جا، کوئی ارمغاں ہو تو لے کے آ
    مرے مدّ و جزر کی خیر ہو کہ سفر ہے دجلۂ دہر کا
    کہیں مثلِ نامِ حسینؑ بھی، کوئی بادباں ہو تو لے کے آ
    نہ انیس ہوں نہ دبیر ہوں، میں نصیر صرف نصیؔر ہوں
    مرے حرفِ ظرف کو جانچنے، کوئی نکتہ داں ہو تو لے کے آ

    نصیر ترابی
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 2
  6. زیرک

    زیرک محفلین

    مراسلے:
    3,448
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Buzzed
    زندگی خاک نہ تھی خاک اڑاتے گزری
    تجھ سے کیا کہتے، ترے پاس جو آتے گزری
    دن جو گزرا تو کسی یاد کی رَو میں گزرا
    شام آئی، تو کوئی خواب دکھاتے گزری
    اچھے وقتوں کی تمنا میں رہی عمرِ رواں
    وقت ایسا تھا کہ بس ناز اٹھاتے گزری
    زندگی جس کے مقدر میں ہو خوشیاں تیری
    اُس کو آتا ہے نبھانا، سو نبھاتے گزری
    زندگی نام اُدھر ہے، کسی سرشاری کا
    اور اِدھر دُور سے اک آس لگاتے گزری
    رات کیا آئی کہ تنہائی کی سرگوشی میں
    ہُو کا عالم تھا، مگر سُنتے سناتے گزری
    بارہا چونک سی جاتی ہے مسافت دل کی
    کس کی آواز تھی، یہ کس کو بلاتے گزری

    نصیر ترابی
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 2
  7. جاسمن

    جاسمن مدیر

    مراسلے:
    12,557
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Fine
    بہت خوب!
    زبردست!
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1
  8. سید شہزاد ناصر

    سید شہزاد ناصر محفلین

    مراسلے:
    9,384
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Relaxed
    بہت خوب انتخاب
    سلامت رہیں
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1
  9. زیرک

    زیرک محفلین

    مراسلے:
    3,448
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Buzzed
    خود حجابوں سا، خود جمال سا تھا
    دل کا عالم بھی بے مثال سا تھا
    عکس میرا بھی آئینوں میں نہیں
    وہ اک کیفیت خیال سا تھا
    دشت میں، سامنے تھا تھا خیمۂ گل
    دوریوں میں عجب کمال سا تھا
    بے سبب تو نہیں تھا آنکھوں میں
    ایک موسم کہ لازوال سا تھا
    خوف اندھیرے کا، ڈر اجالوں سے
    سانحہ تھا، تو حسب حال سا تھا

    ادا جعفری
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 2
  10. زیرک

    زیرک محفلین

    مراسلے:
    3,448
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Buzzed
    زباں کو حکم، نگاہِ کرم کو پہچانے
    نگہ کا جرم غبارِ الم کو پہچانے
    وہ ایک جام کہاں ہر کسی کی قسمت میں
    وہ ایک ظرف کہ اعجاز‌ سم کو پہچانے
    متاع درد پرکھنا تو بس کی بات نہیں
    جو تجھ کو دیکھ کے آئے وہ ہم کو پہچانے
    وہ دل جو خاک ہوئے آج تک دھڑکتے ہیں
    رہِ وفا ترے معجز رقم کو پہچانے
    سحر سے پہلے یہاں آفتاب ابھرے ہیں
    خلوصِ بندگیٔ چشم نم کو پہچانے
    یہ خود فریب اجالے یہ ہاتھ ہاتھ دیئے
    دیئے بجھاؤ کہ انسان غم کو پہچانے
    کسی خیال کا سایہ کسی امید کی دھوپ
    کوئی تو آئے کہ دل کیف و کم کو پہچانے
    ہزار کوس نگاہوں سے دل کی منزل تک
    کوئی قریب سے دیکھے تو ہم کو پہچانے
    جو ہمسفر بھی رہے ہیں شریک منزل بھی
    کچھ اجنبی تو نہ تھے پھر بھی کم کو پہچانے
    بہت دنوں تو ہواؤں کا ہم نے رخ دیکھا
    بڑے دنوں میں متاعِ قلم کو پہچانے

    ادا جعفری
     
    آخری تدوین: ‏جولائی 19, 2019
    • پسندیدہ پسندیدہ × 2
  11. زیرک

    زیرک محفلین

    مراسلے:
    3,448
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Buzzed
    بدن پہ پیرہنِ خاک کے سوا کیا ہے
    مرے الاؤ میں اب راکھ کے سوا کیا ہے
    یہ شہرِ سجدہ گزاراں دیارِ کم نظراں
    یتیم خانۂ اداک کے سوا کیا ہے
    تمام گنبد و مینار و منبر و محراب
    فقیہِ شہر کی املاک کے سوا کیا ہے
    کھلے سروں کا مقدر بفیض جہلِ خرد
    فریب سایۂ افلاک کے سوا کیا ہے
    یہ میرا دعوئٰ خود بینی و جہاں بینی
    مری جہالتِ سفاک کے سوا کیا ہے
    تمام عمر کا حاصل بفضلِ ربِ کریم
    متاعِ دیدۂ نمناک کے سوا کیا ہے
    جہانِ فکر و عمل میں یہ میرا زعمِ وجود
    فقط نمائشِ پوشاک کے سوا کیا ہے

    حمایت علی شاعر
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1
  12. زیرک

    زیرک محفلین

    مراسلے:
    3,448
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Buzzed
    یم بہ یم پھیلا ہوا ہے پیاس کا صحرا یہاں
    اک سراب تشنگی ہے موجۂ صہبا یہاں
    روشنی کے زاویوں پر منحصر ہے زندگی
    آپ کے بس میں نہیں ہے آپ کا سایہ یہاں
    آتے آتے آنکھ تک دل کا لہو پانی ہوا
    کس قدر ارزاں ہے اپنے خون کا سودا یہاں
    تیرے میرے درمیاں حائل رہی دیوارِ حرف
    رکھ لیا اک بات نے ہر بات کا پردا یہاں
    دیکھیے تو یہ جہاں ہے اک جہان آب و گل
    سوچیے تو ذرے ذرے میں ہے اک دنیا یہاں

    حمایت علی شاعر
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1
  13. زیرک

    زیرک محفلین

    مراسلے:
    3,448
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Buzzed
    آج اے دل لب و رخسار کی باتیں ہی سہی
    وقت کٹ جائے گا کچھ پیار کی باتیں ہی سہی
    یوں تو کٹتی ہی رہے گی غمِ دوراں میں حیات
    آج کی رات غمِ یار کی باتیں ہی سہی
    زندہ رہنے کی کبھی تو کوئی صورت نکلے
    عشرتِ عالمِ دیدار کی باتیں ہی سہی
    کوئی تو بات چِھڑے آج بہت جی ہے اداس
    کم سے کم رحمتِ اغیار کی باتیں ہی سہی
    اب تو تنہائی کو یہ کرب نہ ہو گا برداشت
    کچھ نہیں تو در و دیوار کی باتیں ہی سہی
    یہ بھی کیا کم ہے انہیں قُربت گُل تو ہے نصیب
    آج گُل کی نہ سہی، خار کی باتیں ہی سہی
    یہ تو طے ہے کہ جئے جائیں گے ہر حال میں ہم
    ان کے لب پر رسن و دار کی باتیں ہی سہی

    حمایت علی شاعر
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1
  14. زیرک

    زیرک محفلین

    مراسلے:
    3,448
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Buzzed
    کروں نہ یاد اگر کس طرح بھلاؤں اسے
    غزل بہانہ کروں اور گنگناؤں اسے
    وہ خار خار ہے شاخِ گلاب کی مانند
    میں زخم زخم ہوں پھر بھی گلے لگاؤں اسے
    یہ لوگ تذکرے کرتے ہیں اپنے لوگوں سے
    میں کیسے بات کروں اور کہاں سے لاؤں اسے
    مگر وہ زُود فراموش، زُود رنج بھی ہے
    کہ روٹھ جائے اگر یاد کچھ دلاؤں اسے
    وہی جو دولتِ دل ہے وہی جو راحتِ جاں
    تمہاری بات پہ اے ناصحو گنواؤں اسے
    جو ہم سفر سرِ منزل بچھڑ رہا ہے فراز
    عجب نہیں کہ اگر یاد بھی نہ آؤں اسے

    احمد فراز
     
  15. زیرک

    زیرک محفلین

    مراسلے:
    3,448
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Buzzed
    سنا ہے لوگ اسے آنکھ بھر کے دیکھتے ہیں
    سو اس کے شہر میں کچھ دن ٹھہر کے دیکھتے ہیں
    سنا ہے ربط ہے اس کو خراب حالوں سے
    سو اپنے آپ کو برباد کر کے دیکھتے ہیں
    سنا ہے درد کی گاہک ہے چشمِ ناز اس کی
    سو ہم بھی اس کی گلی سے گزر کے دیکھتے ہیں
    سنا ہے اس کو بھی ہے شعر و شاعری کا شغف
    سو ہم بھی معجزے اپنے ہنر کے دیکھتے ہیں
    سنا ہے بولے تو باتوں سے پھول چھڑتے ہیں
    یہ بات ہے تو چلو بات کر کے دیکھتے ہیں
    سنا ہے رات اسے چاند تکتا رہتا ہے
    ستارے بامِ فلک سے اتر کے دیکھتے ہیں
    سنا ہے دن کو اسے تتلیاں ستاتی ہیں
    سنا ہے رات کو جگنو ٹھہر کے دیکھتے ہیں
    سنا ہے حشر ہیں اس کی غزال سی آنکھیں
    سنا ہے اس کو ہرن دشت بھر کے دیکھتے ہیں
    سنا ہے رات سے بڑھ کر ہیں کاکلیں اس کی
    سنا ہے شام کو سائے گزر کے دیکھتے ہیں
    سنا ہے اس کی سیاہ چشمگی قیامت ہے
    سو اس کو سرمہ فروش آہ بھر کے دیکھتے ہیں
    سنا ہے اس کے لبوں سے گلاب جلتے ہیں
    سو ہم بہار پہ الزام دھر کے دیکھتے ہیں
    سنا ہے آئینہ تمثال ہے جبیں اس کی
    جو سادہ دل ہیں اسے بن سنور کے دیکھتے ہیں
    سنا ہے جب سے حمائل ہیں اس کی گردن میں
    مزاج اور ہی لعل و گہر کے دیکھتے ہیں
    سنا ہے چشمِ تصور سے دشتِ امکاں میں
    پلنگ زاویے اس کی کمر کے دیکھتے ہیں
    سنا ہے اس کے بدن کی تراش ایسی ہے
    کہ پھول اپنی قبائیں کتر کے دیکھتے ہیں
    وہ سرو قد ہے مگر بے گُلِ مراد نہیں
    کہ اس شجر پہ شگوفے ثمر کے دیکھتے ہیں
    بس اک نگاہ سے لٹتا ہے قافلہ دل کا
    سو رہروانِ تمنا بھی ڈر کے دیکھتے ہیں
    سنا ہے اس کے شبستاں سے متّصل ہے بہشت
    مکیں اُدھر کے بھی جلوے اِدھر کے دیکھتے ہیں
    رکے تو گردشیں اس کا طواف کرتی ہیں
    چلے تو اس کو زمانے ٹھہر کے دیکھتے ہیں
    کسے نصیب کہ بے پیرہن اسے دیکھے
    کبھی کبھی در و دیوار گھر کے دیکھتے ہیں
    کہانیاں ہی سہی سب مبالغے ہی سہی
    اگر وہ خواب ہے تعبیر کر کے دیکھتے ہیں
    اب اس کے شہر میں ٹھہریں کہ کوچ کر جائیں
    فؔراز آؤ ستارے سفر کے دیکھتے ہیں

    احمد فراز
     
  16. زیرک

    زیرک محفلین

    مراسلے:
    3,448
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Buzzed
    لہر اس آنکھ میں لہرائی جو بے زاری کی
    میں نے ہنستے ہوئے پھر کوچ کی تیاری کی
    مجھے جس رات سمندر نے اتارا خود میں
    میں نے اس رات بھی ساحل کی طرفداری کی
    میں نے گریہ کو بھی آداب کے اندر رکھا
    اپنے اعصاب پہ وحشت نہ کبھی طاری کی
    نقشِ پا ڈھونڈتا پھرتا ہے سحر کا وہ بھی
    جس نے اک رات گزاری نہیں بیداری کی
    دل میں بھر لایا ہوں محرومئ دنیا سجاؔد
    آج بازار سے جی بھر کے خریداری کی

    سجاد بلوچ
     
  17. زیرک

    زیرک محفلین

    مراسلے:
    3,448
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Buzzed
    مِرے بدن سے مت لِپٹ حواس باختہ ہوا
    بجھے چراغ سے تِرا کہاں کا واسطہ ہوا
    نہ تالیاں بجا مِرے بکھرتے بال و پر پہ یوں
    تِری طرف پلٹ پڑے خدانخواستہ ہوا
    غبار اڑاتی مقتلوں سے مکتبوں تک آ گئی
    نجانے کون وحشتوں کی فیض یافتہ ہوا
    سنا ہے اب تو وہ بھی راستوں کی دھول ہو گئے
    کہ جن سے پوچھتی تھی میرے گھر کا راستہ ہوا
    فضا میں اڑ رہے ہیں پر سفید فاختاﺅں کے
    چمن میں چل رہی ہے ایک ناشناختہ ہوا
    سنا ہے اس کو بھی نئی فضا میں چین آ گیا
    مجھے بھی راس آ گئی یہ ہجر ساختہ ہوا

    سجاد بلوچ
     
  18. زیرک

    زیرک محفلین

    مراسلے:
    3,448
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Buzzed
    یہ دھند، صبحِ زمستاں، یہ برفزار اور میں
    لہو میں تازہ تِرے وصل کا خمار اور میں
    یہ خواب جیسی حسیں صبحِ وادئ کالام
    پھر اس پہ تیری توجہ کا اعتبار اور میں
    یہ ریستوران کا ٹیرس، یہ صبح کی چائے
    تمہارے نیند سے اٹھنے کا انتظار اور میں
    تمہاری چاپ پہ مرکوز ہے سماعتِ خاک
    یہ کیا سکوں ہے کہ ہوتا ہوں بیقرار اور میں
    اتر رہے ہیں بلندی سے پانیوں کی طرف
    بڑے سکوں سے خیالوں کے آبشار اور میں
    ترے وجود کی خوشبوئے لمس سے پہلے
    کب ایسے سبز ہوئے تھے یہ مرغزار اور میں

    سجاد بلوچ
     
  19. زیرک

    زیرک محفلین

    مراسلے:
    3,448
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Buzzed
    یہی منظر تھے انجانے سے پہلے
    تمہارے شہر میں آنے سے پہلے
    زمیں کی دھڑکنیں پہچان لینا
    کوئی دیوار بنوانے سے پہلے
    پلٹ کر کیوں مجھے سب دیکھتے ہیں
    تمہارا ذکر فرمانے سے پہلے
    نہ جانے کتنی آنکھیں منتظر تھیں
    ستارے بام پر آنے سے پہلے
    دریچے بند ہو جاتے ہیں کتنے
    یہاں منظر بدل جانے سے پہلے

    عنبرین صلاح الدین
     
  20. زیرک

    زیرک محفلین

    مراسلے:
    3,448
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Buzzed
    رستہ روکتی خاموشی نے کون سی بات سنانی ہے
    رات کی آنکھیں جان چکی ہیں، کس کے پاس کہانی ہے
    جب اس کی وسعت سے نکلے میری وحشت، خواب، سراب
    دامن جھاڑ کے دشت پکارا، "اب کیسی ویرانی ہے"
    منظر ہے کھڑکی کے اندر یا ہے کھڑکی سے باہر
    گردوں کی گیرائی ہے یا خاک نے چادر تانی ہے
    کوندے سے لپکے پڑتے ہیں چٹکی بھر نیلاہٹ سے
    تاروں میں منظر کھلنے سے پہلے کی حیرانی ہے
    آپ کہیں تو تین زمانے ایک ہی لہر میں بہہ نکلیں
    آپ کہیں تو سب باتوں میں ایسی ہی آسانی ہے
    اپنے اپنے طرز سخن میں، اپنے اپنے دل کی بات
    آپ کہیں تو دانائی ہے، ہم کہہ دیں نادانی ہے
    رات کی چادر تہہ ہونے تک، دھوپ کا جادو کھلنے تک
    دروازے کے بند کواڑوں نے کیا بات چھپانی ہے
    جتنے پَل تک رقص کریں گی کرنیں برف کی قاشوں پر
    کُہساروں کے دامن میں بھی تب تک ایک کہانی ہے

    عنبرین صلاح الدین
     

اس صفحے کی تشہیر