روشن صبح

جاسمن نے 'صحافت' کی ذیل میں اس موضوع کا آغاز کیا، ‏اپریل 18, 2014

  1. قیصرانی

    قیصرانی لائبریرین

    مراسلے:
    45,875
    جھنڈا:
    Finland
    موڈ:
    Festive
    بلا عنوان
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1
  2. جاسمن

    جاسمن مدیر

    مراسلے:
    12,344
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Fine
    پاکستان کا حتف تھری ایٹمی میزائل کا کامیاب تجربہ، دفاع مزید مضبوط ہو گیا: جنرل راشد
    23 اپریل 2014
    [​IMG]
    پاکستان نے گزشتہ روز زمین سے زمین پر مار کرنے والے شارٹ رینج حتف3- بلیسٹک میزائل کا کامیاب تجربہ کیا ہے۔ حتف تھری میزائل 290 کلومیٹر تک اپنے ہدف کو نشانہ بنا سکتا ہے۔ یہ میزائل ایٹمی اور روایتی وار ہیڈز لے جانے کی صلاحیت رکھتا ہے۔ گزشتہ روز آرمی سٹرٹیجک کمان فورسز نے اس میزائل کا تجربہ کیا۔ میزائل تجربہ کا مشاہدہ کرنے کے لئے چیئرمین جائنٹ چیفس آف سٹاف کمیٹی جنرل راشد محمود، ڈائریکٹر جنرل سٹرٹیجک پلانز ڈویژن لیفٹیننٹ جنرل زبیر محمود حیات، کمانڈر آرمی سٹرٹیجک کمان لیفٹیننٹ جنرل عبداللہ خان کے علاوہ انجینئرز اور سائنسدانوں کی ایک بڑی تعداد اس موقع پر موجود تھی۔ جنرل راشد محمود نے میزائل تجربہ پر اطمینان کا اظہار کیا۔ انہوں نے کہا کہ اس سے پاکستان کی دفاعی صلاحیت مزید مضبوط ہونے کے علاوہ خطہ میں امن کو یقینی بنانے میں مدد ملے گی۔انہوں نے کہا پاک فوج کے افسران اور جوان کسی بھی طرح کی جارحیت کا منہ توڑ جواب دینے کی صلاحیت رکھتے ہیں اور فوج اپنی پیشہ ورانہ مہارت برقرار رکھے گی۔آن لائن کے مطابق میزائل لانچنگ تقریب میں نعرہ تکبیر اللہ اکبر کے فلک شگاف نعرے بلند ہوئے۔ صدر ممنون حسین اور وزیراعظم نواز شریف نے بھی حتف تھری غزنوی بیلسٹک میزائل کے کامیاب تجربے پر پاک فوج کے انجینئرز، سائنس دانوں، جوانوں اور پوری قوم کو مبارکباد دیتے ہوئے عزم کا اظہار کیا ملک کے دفاع کو ناقابل تسخیر بنانے کیلئے کوششیں جاری رکھی جائینگی اور اس سلسلے میں ہر قسم کے اقدامات اور انجینئرز اور سائنسدانوں کوتمام سہولیات فراہم کی جائینگی۔
     
    آخری تدوین: ‏اپریل 23, 2014
    • پسندیدہ پسندیدہ × 2
  3. جاسمن

    جاسمن مدیر

    مراسلے:
    12,344
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Fine
    سعودی عرب کی پہلی لائسنس یافتہ خاتون پائلٹ
    الحنادی کا کہنا ہے کہ ملک کی پہلی خاتون پائلٹ کا اعزاز حاصل کرنے کے بعد وہ فخر محسوس کررہی ہیں کہ انھوں نے اس شعبے کو چنا۔

    [​IMG]

    سعودی عرب کی 35 سالہ الحنادی الہندی نامی خاتون کو سعودی عرب کی پہلی خاتون پائلٹ ہونے کا اعزاز حاصل ہوگیا ہے۔

    الحنادی سر پر اسکارف پہن کر سعودی عرب کی مقامی ایئرلائن کے چھوٹے بڑے جہاز اڑائیں گی۔

    انھوں نے اپنے کیرئر کا آغاز 2004ء میں کیا تھا جبکہ کچھ روز قبل ایک سولو فلائٹ اڑانے کے مظاہرے کے بعد انھیں اب باقاعدہ خاتون پائلٹ کا لائسنس جاری کردیا گیا ہے۔

    سعودیہ کی 'پرنس الولید بن طلال' نامی ایئرلائن کی جانب سے الحنادی کو باقاعدہ پائلٹ کی ملازمت دی گئی ہے جس کے بعد الحنادی سعودی عرب کی پہلی خاتون پائلٹ بن گئی ہیں۔

    الحنادی کا کہنا ہے کہ ملک کی پہلی خاتون پائلٹ کا اعزاز حاصل کرنے کے بعد وہ فخر محسوس کررہی ہیں کہ انھوں نے اس شعبے کو چنا۔

    'عرب نیوز' کو دیے گئے ایک انٹرویو میں الحنادی نے کہا ہے کہ پہلی فلائٹ اڑانے کے بعد وہ دنیا بھر میں ایک مشہور شخصیت بن گئی ہیں۔
     
    آخری تدوین: ‏اپریل 23, 2014
    • پسندیدہ پسندیدہ × 2
  4. قیصرانی

    قیصرانی لائبریرین

    مراسلے:
    45,875
    جھنڈا:
    Finland
    موڈ:
    Festive
    دو بار نہیں ہو گئی یہ پوسٹ؟
     
  5. جاسمن

    جاسمن مدیر

    مراسلے:
    12,344
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Fine
    30 مئی 2011
    وقت اشاعت: 17:59
    پورٹ لینڈ کراچی

    کراچی میں تاریخی ریلوے ٹریک اور بندرگاہ کے سنگم پر واقع فوڈ اسٹریٹ کا آغاز کر دیا گیا۔ گرمی میں سمندر کے کنارے چہل قدمی کا مزہ ہی کچھ اور ہے لیکن اب لوگ کھانا بھی کھائیں گے اور پورٹ میں لنگر انداز بحری جہازوں کا نظارہ بھی ہوگا۔ کراچی میں تاریخی نیٹی جیٹی پل اور پورٹ کے سنگم پر پورٹ گرینڈ کے نام سے فوڈ اسٹریٹ کا افتتاح ہوگیا اس موقع پر گورنر سندھ، وفاقی اور صوبائی وزراء کے علاوہ عوام کی بڑی تعداد نے پورٹ گریند فورڈ اسٹریٹ پر چہل قدمی کی۔ کھانے کھائے اور شاہکار منصوبے پر اعتماد کا اظہار کیا۔ پورٹ گرینڈ کے لئے زمین کے پی ٹی اور ایک ارب کاسرمایہ نجی کمپنی نے لگایا ہے جہاں قدیم درختوں کو کاٹے بغیر خوبصورت ریسٹورنٹ تعمیرکیا گیا جو فن تعمیر میں کاریگروں کی مہارت کا منہ بولتا ثبوت ہے وفاقی وزیر بندرگاہ اور جہاز رانی بابرغوری کہتے ہیں کیفورڈ اسٹریٹ کا شمار دنیا کے بہترین تفریحی مقامات میں ہوگا۔ شہر کے تمام ہنگاموں سے دور پورٹ گرینڈ کا حسین نظارہ کراچی میں لوڈ شیڈنگ اور گرمی سے ستائے عوام کے لیے تفریحی کا باعث ہے۔
     
    آخری تدوین: ‏اپریل 23, 2014
    • پسندیدہ پسندیدہ × 2
    • زبردست زبردست × 1
  6. قیصرانی

    قیصرانی لائبریرین

    مراسلے:
    45,875
    جھنڈا:
    Finland
    موڈ:
    Festive
    تصاویر غائب ہیں :)
     
  7. جاسمن

    جاسمن مدیر

    مراسلے:
    12,344
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Fine
    25 جون 2011
    وقت اشاعت: 8:28
    فیراری ورلڈ ابوظبی

    ابوظبی متحدہ عرب امارات میں اسپورٹس کاروں کیلئے فیراری پارک بنایا گیا ہے، فیراری پارک کو دنیا بھر کے ماہر کاریگروں کی مدد سے تیار کرایا گیاہے۔جنہوں نے تین سال کے طویل عرصے میں پارک کو مکمل کیا ہے یہ دنیا کا سب سے بڑا انڈور تھیم پارک ہے۔
    [​IMG][​IMG][​IMG][​IMG]
    [​IMG] [​IMG][​IMG][​IMG]
     
    آخری تدوین: ‏اپریل 23, 2014
    • پسندیدہ پسندیدہ × 2
  8. قیصرانی

    قیصرانی لائبریرین

    مراسلے:
    45,875
    جھنڈا:
    Finland
    موڈ:
    Festive
    معلوم نہیں۔ ایسا کیجئے کہ ذرا سعود بھائی کو میسج کر دیجئے
     
  9. زیک

    زیک محفلین

    مراسلے:
    37,340
    جھنڈا:
    UnitedStates
    موڈ:
    Amused
    http://www.urduweb.org/mehfil/threads/دبئ-چلو.48909/#post-814570
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1
  10. جاسمن

    جاسمن مدیر

    مراسلے:
    12,344
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Fine
    زیک بھائی! جزاک اللہ!
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1
    • دوستانہ دوستانہ × 1
  11. جاسمن

    جاسمن مدیر

    مراسلے:
    12,344
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Fine
    beta.jang.com.pk/JangDetail.aspx?ID=140520جنگ
    March 10, 2014
    دنیا کا سب سے کم عمر لیکچرار

    [​IMG]
    ممبئی…این جی ٹی…بھارتی ریاست اتراکھنڈ کے دارالحکومت دھرا دھون سے تعلق رکھنے والے 13سالہ بچے کو دنیا کے سب سے کم عمر ترین لیکچرار کا اعزاز حاصل ہوگیاہے۔13سالہ امان رحمان نامی یہ بچہ8سال کی عمر میں بحیثیت پروفیسر ٹیچنگ کے شعبے سے منسلک ہوا لیکن اپنی چھوٹے قد کی وجہ سے اُسے کرسی پر کھڑے ہوکر بلیک بورد استعمال کرنا پڑتا تھالہٰذا وہ تدریس سے علیحدہ ہوگیا۔اب13سال کی عمر میں ایک بار پھر تدریس کیلئے میدان میں اُترنے والا امان رحمان آجکل اپنی سے دگنی عمر کے بچوں کو اینیمیشن پڑھاتا نظر آتا ہے جسے اس فیلڈ میں اعزازی ڈاکٹریٹ کی ڈگری سے بھی نوازا گیا ہے۔
     
    آخری تدوین: ‏اپریل 24, 2014
    • پسندیدہ پسندیدہ × 2
    • معلوماتی معلوماتی × 1
  12. جاسمن

    جاسمن مدیر

    مراسلے:
    12,344
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Fine
    جنگ
    ترکی کے نوجوان نے تھری ڈی پرنٹر کی مدد سے جدید پلاسٹر تیار کر لیا


    April 24, 2014

    [​IMG]
    استنبول…این جی ٹی… ہڈی ٹوٹ جانے کی صورت میں کئی صدیوں سے پلاسٹر چڑھائے جانے کا طریقہ کار استعمال کیا جا رہا ہے لیکن اب ایک نوجوان نے اس طریقہ ء علاج کو جدت بخشتے ہوئے ایسا پلاسٹر تیار کر لیا ہے جو موجودہ پلاسٹر سے کئی گنا بہتر ہے۔تھری پرنٹر کی مدد سے تیار کیا جانیوالا یہ پلاسٹر ترکی سے تعلق رکھنے والے Deniz Karasahinنامی ایک نوجوان طالبِ علم نے بنایا ہے جو نہ صرف زخم تیزی سے بھرنے میں مدد گار ثابت ہو گا بلکہ انتہائی دلکش اور لچکدار بھی ہے۔صرف یہی نہیں اس تھری پرنٹیڈ پلاسٹر کی بدولت الٹرا ساؤنڈ بھی با آسانی ممکن ہو سکے گا اوروینٹیلیشن اوربازو کو حرکت دینا بھی مشکل نہیں رہے گا۔
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 2
    • معلوماتی معلوماتی × 1
  13. جاسمن

    جاسمن مدیر

    مراسلے:
    12,344
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Fine
    جنگ
    April 22, 2014
    [​IMG]
    جدہ …این جی ٹی …سعودی عرب کے شہر جدہ میں دنیا کی بلند ترین عمارت کی تعمیر شروع کر دی گئی ہے۔ اس بلند ترین عمارت میں کئی لگژری ہوٹل، شاپنگ مال، رہائشی فلیٹس اور دفاتر قائم کیے جائیں گے، 200منزلہ اس عمارت کی 160 منزلیں صرف رہائشی مقاصد کے لیے ہوں گے ۔ماہرین تعمیرات کا کہنا ہے کہ تقریباً ایک کلو میٹربلند اس برج میں پانی کی سپلائی کو یقینی بنانا بھی ایک پیچیدہ مسئلہ رہے گا تاہم یہ تمام پیچیدگیاں دور کرنا ناممکن بھی نہیں۔ کنگڈم ٹاور نامی اس عمارت کی تعمیر پر تقریباً 1.23 ارب ڈالر لاگت آئے گی ۔واضح رہے کہ اب تک دنیا کی بلند ترین عمارت متحدہ عرب امارات کے شہر دبئی میں واقع ”برج الخلیفہ“ ہے جس کی بلندی 828 میٹر ہے ۔ ان کے علاوہ بلند ترین عمارتوں میں شنگھائی ٹریڈ سینٹر492 میٹر، نیویارک میں امپائرا سٹیٹ بلڈنگ 381 میٹر اور پیٹرو ناس جڑواں ٹاور کوالالمپور492 میٹربلند عمارتیں قرار دی جاتی ہیں۔
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1
    • معلوماتی معلوماتی × 1
  14. جاسمن

    جاسمن مدیر

    مراسلے:
    12,344
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Fine
    دنیا کی سب سے کم عمر پروفیسر ہونے کا ریکارڈ



    گنیز بک آف ورلڈ ریکارڈ نے 19 سالہ عالیہ صبور (Alia Sabur) کو دنیا کی سب سے کم عمر پروفیسر قرار دیا ہے-

    نیویارک کی اس ذہین طلبا نے 14 سال کی عمر میں ہی اپنی بیچلر ڈگری حاصل کر لی تھی اس سے پہلے یہ ریکارڈ مشہور سائنسدان آئزک نیوٹن کے شاگرد کولن میکلورن (Colin Maclaurin) کا تھا جو اس نے سن 1717ﺀ میں قائم کیا تھا-
    صبور کو 19 سال کی عمر میں کونکوک یونیورسٹی (Konkuk University) جو کہ سیول٬ کوریا میں قائم ہے میں پروفیسر کے طور پر رکھا گیا ہے جس پر صبور کا کہنا ہے یہ میرے لیے اعزاز کی بات ہے اگرچہ مجھے کورین زبان نہیں آتی پھر بھی میںMaths پڑھا سکتی ہوں

    فی الوقت وہ نیو اورلین (New Orleans) کی ساؤدرن یونیورسٹی(Southern University) میںMaths اور Physics پڑھا رہی ہیں جو کہ ہریکین کترینا (Hurricane Katrina) میں تباہ ہو چکا تھا اور جہاں وہ ایک ریلیف ورکر کے طور پر بھی کام کر رہی ہیں-

    hamariweb.com/articles/article.aspx?id=569&type=text
     
    • معلوماتی معلوماتی × 2
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1
  15. جاسمن

    جاسمن مدیر

    مراسلے:
    12,344
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Fine
    اردوڈاٹ کام
    22 اپریل 2014

    وقت اشاعت: 7:48
    شیشے کی بوتلوں میں رنگین ریت سے شاہکار تیار کرنے والا آرٹسٹ
    قاہرہ…این جی ٹی…فن کے اظہارکیلئے کینوس،پینٹ،برش یا پھر دیگر روایتی آلات ضروری نہیں بلکہ اپنے خیالات کو دوسروں تک پہنچانے کیلئے دماغ کی ذہانت سب سے اہم ہوتی ہے۔مصر سے تعلق رکھنے والے احمد نامی اسٹریٹ آرٹسٹ کا شمار بھی چند ذہین آرٹسٹوں میں کیا جائے تو کچھ غلط نہ ہوگاجو شیشے کی بوتلوں کے اند ر ریت سے شاہکار فن پارے تخلیق کرتا ہے۔یہ ماہر آرٹسٹ شیشے کی بوتلوں کے اندر مختلف رنگوں کی ریت کو اس طرح تہہ در تہہ بٹھاتا ہے کہ دلکش و حسین مناظرتخلیق ہوجاتے ہیں جو دیکھنے والوں کو حیرت سے دنگ کردینے کی صلاحیت رکھتے ہیں۔
    www.urdu.co/news/taza-tareen
     
    آخری تدوین: ‏اپریل 24, 2014
    • پسندیدہ پسندیدہ × 2
  16. قیصرانی

    قیصرانی لائبریرین

    مراسلے:
    45,875
    جھنڈا:
    Finland
    موڈ:
    Festive
    تصویر غائب ہے
    ایک کام کیجئے کہ اس طرح کی خبریں یا معلومات دیتے وقت ان کا ماخذ یعنی سورس بھی دے دیجئے تاکہ کسی بھی مشکل کی صورت میں اراکین اصل متن تک پہنچ سکیں
     
  17. جاسمن

    جاسمن مدیر

    مراسلے:
    12,344
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Fine
    ڈیرہ غازی خان کے بینائی سے محروم نوجوان شہزاد احمد نے ایم فل سپیشل ایجوکیشن کے نصاب کو بولتی شکل میں( talking format)منتقل کر دیا ۔
    بصارت سے محروم افراد اس سافٹ ویئر سے فائدہ اٹھا سکیں گے۔
    شہزاد احمد حال ہی میں پبلک سروس کمیشن کے ذریعے سپیشل ایجوکیشن ڈیپارٹمنٹ میں بطور سینئر ایجوکیشن ٹیچر منتخب ہوئے ہیں اور خود علامہ اقبال اوپن یونیورسٹی میں ایم فل کے طالب علم بھی ہیں۔انہوں نے ایم فل کے نصاب کے 13ہزار صفحات سکین کر کے انہیں بولتی شکل میں منتقل کر دیا ہے۔ اِس سافٹ ویئر کی نہ صرف پاکستان بلکہ غیر ممالک کی جامعات میں بھی بہت اہمیت ہے۔
    (خبریں۔24اپریل2014)
     
    • زبردست زبردست × 2
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1
  18. جاسمن

    جاسمن مدیر

    مراسلے:
    12,344
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Fine
    جزاک اللہ۔
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1
    • دوستانہ دوستانہ × 1
  19. جاسمن

    جاسمن مدیر

    مراسلے:
    12,344
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Fine
    بیس (20) سال سے ندی تیر کر سکول جانے والا استاد
    [​IMG]


    عبدالملک گذشتہ بیس سال سے روزانہ ندی تیر كر پار کرتے ہیں اور دوسرے گاؤں کے سکول میں پڑھانے جاتے ہیں۔
    بھارت کی جنوبی ریاست کیرالا کے ایک چھوٹے سے گاؤں میں رہنے والے ریاضی کے استاد عبد الملک نے 20 سال میں کبھی سکول پہنچنے میں تاخیر نہیں کی اور نہ ہی کبھی کوئی چھٹی لی ہے۔


    آج بھی وہ سر پر بیگ رکھ ربر کے ٹائر کے سہارے تیركر بچوں کو پڑھانے سکول جاتے ہیں۔ اپنی زندگی کی یہ انوکھی داستان عبد الملک نے بی بی سی کے خاص پروگرام آؤٹ لک سے بات کرتے ہوئی بیان کی۔
    سکول میرے گاؤں سے گزرنے والی کادالندی ندی کے دوسرے کنارے پر آباد ایک گاؤں میں ہے۔ سڑک کے ذریعے سکول کا فاصلہ سات کلومیٹر ہے جبکہ ندی عبور کر کے جانے میں یہ فاصلہ صرف ایک کلومیٹر رہ جاتا ہے۔ اس گاؤں میں نہ تو کوئی استاد ہے اور نہ ہی کوئي ڈاکٹر۔ یہ گاؤں تین طرف سے ندی سے گھرا ہوا ہے۔‘’ان کے راستے میں کوئی بھی پل نہیں ہے۔ بس سے سکول تک سات کلومیٹر کے راستے میں صرف ایک پل ہے اور وہ ابھی حال ہی میں بنا ہے۔ جب میں پہلی بار سکول پڑھانے گیا تھا تو میں نے بس لی تھی اور 12 کلومیٹر کے بعد ایک پل پڑتا تھا۔ پہلے مجھے تین تین بسیں بدل کر جانا پڑتا تھا۔‘
    ’سوا دس بجے تک اسکول پہنچنے کے لیے مجھے تقریباً ساڑھے آٹھ بجے گھر سے نکلنا پڑتا تھا۔ اس طرح اپنے گاؤں سے ندی کے دوسرے کنارے پر آباد گاؤں تک پہنچنے میں دو گھنٹے لگ جاتے تھے۔ سب سے زیادہ وقت تو بس کا انتظار کرنے میں ضائع ہو جاتا تھا۔‘
    ’ایک ساتھی ٹیچر نے مجھے تیر كر سکول آنے کی تحریک دی۔ پھر میں نے تیرنا سیکھا اور اس کے بعد میں تیركر سکول جانے لگا۔‘

    [​IMG]

    میرے پاس ربڑ کے ٹائر کی ایک ٹیوب بھی ہوتی ہے جو مجھے ڈوبنے سے بچانے میں مدد کرتی ہے۔ میرے بیگ میں اس کی ایک خاص جگہ ہے۔ تیرنے کے دوران سامان سے بھرا بیگ اپنے سر پر رکھ لیتا ہوں۔
    عبدالملک نویں جماعت سے ہی عینک لگاتے ہیں اور تیرتے وقت بھی وہ اسے پہنے رہتے ہیں۔
    ’کادالندی کی چوڑائي تقریبا 70 میٹر ہے، اس لیے اسے عبور کرنا زیادہ مشکل نہیں ہے۔ کبھی کبھی دریا میں تیرتے ہوئے درخت ، کیڑے مکوڑے ، ناریل، کوڑے کرکٹ بھی ہوتے ہیں لیکن میں ان سب سے نہیں ڈرتا یہ چیزیں مجھے میرے مقصد سے نہیں بھٹکا سکتیں۔
    ’برسات کے موسم میں دریا میں پانی قدرے گندا ہوتا ہے لیکن اس کے علاوہ عام طور پر پانی صاف ہوتا ہے۔ برسات کے موسم میں پانی 20 فٹ ہوتا ہے لیکن موسم گرما میں سطح بہت ہی کم ہوتی ہے۔‘
    Source: http://www.bbc.co.uk/urdu/regional/2...erala_mb.shtml
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 2
    • زبردست زبردست × 1
  20. جاسمن

    جاسمن مدیر

    مراسلے:
    12,344
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Fine
    اکتوبر 2012
    وقت اشاعت: 12:40
    پاکستانی پروفیسر کیلئے سائنس و ٹیکنالوجی کا ایوارڈ
    [​IMG]
    سائنس و ٹیکنالوجی کا "آئی سسکو ایوارڈ" پاکستانی پروفیسر نے جیت لیا ہے۔ اسلامی ممالک کی سائنٹیفک اینڈ کلچرل آرگنائزیشن نے اس برس یہ ایوارڈ پروفیسر تصور حیات کو دینے کا فیصلہ کیا ہے۔ سوڈان میں بیس نومبر کو اسلامی ممالک کے وزرائے تعلیم کے اجلاس میں ایوارڈ دیا جائیگا۔ ایسوسی ایٹڈ پریس آف پاکستان (اے پی پی) کے مطابق یہ انعام انہیں شعبہ ریاضی میں نمایاں خدمات انجام دینے کے لیے دیا جائیگا اور آئی ایس ای ایس سی او نے ان کے نام کو سائنس اور ٹیکنالوجی سے اعزاز یافتہ افراد کی اپنی فہرست میں شامل کر لیا ہے۔ ڈاکٹر تصور حیات قائد اعظم یونیورسٹی میں پاکستان ہائر ایجوکیشن کمیشن میں شعبہ ریاضی کے معروف پروفیسر ہیں۔ یونیورسٹی کے بیان کے مطابق پروفیسر حیات نے اعلی تعلیم میں اصلاحات کا جو سلسلہ شروع کیا تھا اس سے پاکستان کے بہت سے سکالر مستفید ہوئے اور سائنس و ٹیکنا لوجی کے شعبہ میں دنیا کے کئی ممالک میں نمایاں کام انجام دیے ہیں۔ سائنس، ٹیکنالوجی، سماجی اور اقتصادی شعبوں میں مسلم سکالرز کی حوصلہ افزائی اور نت نئی فکروں کو فروغ دینے کے لیے یہ تنظیم رکن ممالک کے کسی ہونہار مسلم ریسرچر کو اپنے شعبہ میں نمایاں کارکردگی کرنے پر ہر دو برس میں یہ اعزاز پیش کرتی ہے۔
    www.urdu.co
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1
    • زبردست زبردست × 1

اس صفحے کی تشہیر