روشن خیالی یا بیمار اخلاقیات

شعیب اصغر نے 'آج کی خبر' کی ذیل میں اس موضوع کا آغاز کیا، ‏دسمبر 15, 2013

  1. شعیب اصغر

    شعیب اصغر محفلین

    مراسلے:
    41
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Relaxed
    بنگلہ دیشی مُلا عبدالقادر کو سُولی پر چڑھا دیا گیا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ نہ خوشی ہوئی نہ دکھ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ کیونکہ اس پرجن جرائم کے الزام لگے ان سب کا ارتکاب ان دنوں میں کیا گیا تھا جب میں اور میرے بہت سارے دوستوں کا اس دنیا میں ظہور نہیں ہوا تھا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ اس شخص کے بارے میں میری معلومات انتہائی ناقص ہیں۔ اور اگر کچھ تھوڑا بہت علم ہے بھی تو وہ ان ذرائع سے میرے پاس پہنچا ہے جن پر کسی بھی طرح سے اعتماد نہیں کیا جا سکتا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ لہذا بہتر یہی جانا کہ خاموشی اختیار کی جائے۔


    لیکن جب سوشل میڈیا پہ نظر ڈالی تو انتہائی مایوسی کا سامنا کرنا پڑا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ یقین نہیں آیا کہ انسان اس حد تک بھی نفرت آلود اور متعصب ہو سکتا ہے کہ ایک وہ شخص جو اس دنیا سے رخصت ہو چکا ہے اور اس کا کیس پروردگار کی عدالت میں پیش بھی کیا جا چکا ہو گا، ہم نے اس شخص پہ بھی اپنی دانشوری کے تجربات کرنا شروع کر دئیے، اس کو بھی معاف نہیں کیا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔


    ہمارے کچھ سیکولر دوستوں کا رویہ انتہائی نامناسب رہا اور ان "نام نہاد روشن خیالوں" کی باتوں سے یہ تاثر ملا کہ ان کو ہر وہ چیز جو کسی نہ کسی حوالے سے اسلام کے ساتھ جڑی ہے، زہر لگتی ہے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ایسے لگا جیسے ان کو ملا عبدالقادر کی شکل سے ہی نفرت ہو چکی تھی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ حالانکہ ان میں سے اکثر نے اسے انٹرنیٹ پہ موجود چند ایک تصاویر کے علاوہ کبھی نہیں دیکھا ہو گا۔ اور نہ ہی اس کے بارے میں کوئی مستند معلومات ان کے پاس ہونگی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔


    کچھ لوگوں نے تو انسانی لاشوں کی چند رنگین تصاویر بھی اس شخص کو قاتل ثابت کرنے کیلئے پوسٹ کرنا شروع کردیں ہیں حالانکہ 1971 کی جنگ کے دوران ابھی ہمارے ہاں رنگین کیمروں کا استعمال شروع نہیں ہوا تھا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔


    ان لوگوں کے لئے بس اتنا ہی کافی تھا کہ اس شخص کے منہ پر داڑھی ہے اور اس کا تعلق ایک اسلامی جماعت سے ہے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ بس اتنا پتہ چلنے کی دیر تھی کہ انہوں نے اپنی توپوں کے منہ کھول دئیے اور اس شخص کے لئے ایسے ایسے بیہودہ کلمات بولے اور لکھے گئے کہ سوشل میڈیا سے نفرت سی ہونے لگ گئی ہے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ اس کی وجہ مذکورہ شخص سے کوئی ہمدردی یا اس کے نظریات سے اتفاق نہیں ہے بلکہ ہمارے سوشل میڈیا کے دوستوں کے رویے ہیں ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ یہ لوگ ہر وقت جال لگا کے بیٹھے رہتے ہیں اور جونہی موقع ملتا ہے اسلام، پاکستان اور مسلمانوں کے خلاف (تحقیق کی زحمت کئے بغیر) وہ ہرزہ سرائی کرتے ہیں کہ خدا کی پناہ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔


    ہمیں ان کے سیکولر ہونے پہ کوئی اعتراض نہیں ہے اور نہ ہی ہم انہیں مجبورا اپنا ہم خیال بنانا چاہتے ہیں ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ہمارا اشارہ تو اس انسانی عالمگیر اخلاقیات کی طرف ہے جو ہم سے یہ تقاضا کرتی ہے کہ جو انسان اس دنیا میں موجود نہیں ہے اس پر تنقید کے نشتر چلانے سے گریز کیا جائے۔ اور اگر ضروری ہو تو کم از کم لفظوں کے استعمال میں احتیاط لازم ہے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

    لیکن افسوس کہ ہمارے یہ روشن خیال اور لبرل مائنڈڈ دوست اس عالمگیر اخلاقیات سے بھی محروم نظر آتے ہیں۔

    (شعیب اصغر)
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1
  2. عثمان

    عثمان محفلین

    مراسلے:
    9,792
    موڈ:
    Cheerful
    چنگیز خان ، راجہ داہر ، یزید ، ابو جہل وغیرہ پر جناب کی کیا رائے ہے ؟ یہ انسان اب اس دنیا میں موجود نہیں۔
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1
  3. عثمان

    عثمان محفلین

    مراسلے:
    9,792
    موڈ:
    Cheerful
    چنگیز خان ، راجہ داہر ، یزید ، ابو جہل وغیرہ پر جناب کی کیا رائے ہے ؟ یہ انسان اب اس دنیا میں موجود نہیں۔
     
  4. شعیب اصغر

    شعیب اصغر محفلین

    مراسلے:
    41
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Relaxed
    اگر کوئی شخص چنگیز خان، راجہ داہر ، یزید یا ابو جہل کے بارے میں بھی ایسے ہی الفاظ کا استعمال کرتا ہے جیسے اس شخص کے لئے کئے جا رہے ہیں تو میری نظر میں وہ بھی غلط ہے۔ ہمیں انسانوں کی بجائے نظریات پہ بحث کرنی چاہیئے۔
    Great minds talk about ideas, average minds talk about things, small minds talk about other people.
     
  5. x boy

    x boy محفلین

    مراسلے:
    6,208
    جھنڈا:
    UnitedArabEmirates
    موڈ:
    Breezy
  6. شعیب اصغر

    شعیب اصغر محفلین

    مراسلے:
    41
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Relaxed
    اگر کوئی شخص چنگیز خان، راجہ داہر ، یزید یا ابو جہل کے بارے میں بھی ایسے ہی الفاظ کا استعمال کرتا ہے جیسے اس شخص کے لئے کئے جا رہے ہیں تو میری نظر میں وہ بھی غلط ہے۔ ہمیں انسانوں کی بجائے نظریات پہ بحث کرنی چاہیئے۔
    Great minds talk about ideas, average minds talk about things, small minds talk about other people.
     
  7. عثمان

    عثمان محفلین

    مراسلے:
    9,792
    موڈ:
    Cheerful
    میرا خیال تھا کہ آپ کو تاریخ کی تعریف سے متعارف کراؤں ، لیکن آپ نے تو آغاز ہی میں مخول فرمانا شروع کر دیا۔
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1

اس صفحے کی تشہیر