دل کو میرے وہ بھا گئی ہے--برائے اصلاح

ارشد چوہدری نے 'اِصلاحِ سخن' کی ذیل میں اس موضوع کا آغاز کیا، ‏اگست 14, 2019

  1. ارشد چوہدری

    ارشد چوہدری محفلین

    مراسلے:
    1,276
    جھنڈا:
    UnitedStates
    موڈ:
    Brooding
    الف عین
    عظیم
    خلیل الرحمن
    -----------
    مفعولن فاعلن فعولن
    -----------
    دل کو میرے وہ بھا گئی ہے
    اک وہ لڑکی جو سانولی سی
    --------------
    چلتی ہے جب وہ سر اُٹھا کر
    لگتی ہے مجھ کو چُلبلی سی
    ----------------
    اس کی باتیں سمجھ نہ آئیں
    بولی ہے اس کی اجنبی سی
    -------------
    زلفیں اس کی طویل تر ہیں
    آنکھیں اس کی ہیں نرگسی سی
    -----------
    آتی کو جب میں دیکھتا ہوں
    دل میں مچتی ہے کھلبلی سی
    ------------
    جاتی ہے جب بھی بات کر کے
    دل میں رہتی ہے تشنگی سی
    -------------
    الفت کی بات سن کے میری
    لیتی ہے سر پہ اُوڑھنی سی
    ------------
    مُر مُر کے مجھ کو دیکھتی ہے
    آنکھوں میں ہے جو پیشگی سی
    ------------
    اس کو ارشد بنا لو اپنا
    ہو گی پوری جو ہے کمی سی
    -----------
     
  2. عظیم

    عظیم محفلین

    مراسلے:
    6,628
    بحر مشکل نہیں منتخب کر لی آپ نے؟ پہلے شعر میں 'مفعولن' کو پورا کرنے کے لیے 'دل کو مے' میں 'کو' کو مکمل باندھنا پڑا، حالانکہ اس لفظ کا واؤ گرانے سے روانی بہتر رہتی ہے
    اسی طرح دوسرے مصرع میں 'وہ' کو بھی طویل کھینچنا پڑ رہا ہے۔ مکمل غزل/نظم میں یہی خامی نظر آ رہی ہے کہ وزن کو پورا رکھنے کے لیے بعض الفاظ کو طویل کھینچنا پڑ رہا ہے
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1
  3. ارشد چوہدری

    ارشد چوہدری محفلین

    مراسلے:
    1,276
    جھنڈا:
    UnitedStates
    موڈ:
    Brooding
    الف عین
    عظیم
    (عظیم بھائی ایک نظر دوبارا دیکھ لیں شاید پہلے سے کچھ بہتر ہو )
    میرے من میں سما گئی ہے
    اس کی صورت وہ سانولی سی
    --------------
    لگتی ہے وہ بہار جیسے
    عادت ہے اس کی چُلبلی سی
    ----------------
    اس کی باتیں سمجھ نہ آئیں
    بولی ہے اس کی اجنبی سی
    -------------
    زلفیں اس کی طویل تر ہیں
    آنکھیں اس کی ہیں نرگسی سی
    -----------
    آتی کو جب میں دیکھتا ہوں
    دل میں مچتی ہے کھلبلی سی
    ------------
    جاتی ہے جب بھی بات کر کے
    دل میں رہتی ہے تشنگی سی
    -------------
    الفت کی بات سن کے میری
    دیکھی ہے اس میں کھلبلی سی
    ------------
    مُر مُر کے مجھ کو دیکھتی ہے
    آنکھوں میں ہے جو پیشگی سی
    ------------
    چلتی ہے وہ مٹک مٹک کر
    زلفیں اس کی ہیں ریشمی سی
    ---------
    اس کو ارشد بنا لو اپنا
    ہو گی پوری جو ہے کمی سی
     
  4. عظیم

    عظیم محفلین

    مراسلے:
    6,628
    میرے من میں سما گئی ہے
    اس کی صورت وہ سانولی سی
    --------------'من' کی جگہ 'دل' استعمال کریں
    دل میں میرے سما گئی ہے
    اور دوسرا مصرع پہلی صورت والا ہی بہتر ہے
    صرف 'ہے' کی کمی ہے اور الفاظ کی نشست بدلنے کی ضرورت ہے
    مثلاً اک لڑکی ہے جو سانولی سی

    لگتی ہے وہ بہار جیسے
    عادت ہے اس کی چُلبلی سی
    ----------------اس متبادل سے بہتر بھی مجھے پچھلی صورت ہی لگتی ہے، اسی کو رکھ لیں
    چلتی ہے جب وہ سر اُٹھا کر
    لگتی ہے مجھ کو چُلبلی سی

    اس کی باتیں سمجھ نہ آئیں
    بولی ہے اس کی اجنبی سی
    -------------یہ بھی درست لگ رہا ہے

    زلفیں اس کی طویل تر ہیں
    آنکھیں اس کی ہیں نرگسی سی
    -----------طویل تر کچھ عجیب لگ رہا ہے، شاید زلفوں کے ساتھ یہ مناسب نہ ہو
    شاید۔ زلفیں اس کی گھٹا ہوں جیسے
    چل جائے

    آتی کو جب میں دیکھتا ہوں
    دل میں مچتی ہے کھلبلی سی
    ------------'آتی کو' اچھا نہیں لگ رہا، الفاظ بدل کر دیکھیں

    جاتی ہے جب بھی بات کر کے
    دل میں رہتی ہے تشنگی سی
    -------------'جاتی ہے' کی بجائے اگر 'جب جاتی ہے وہ بات کر کے' کر لیں تو کیا روانی بہتر نہیں ہو جائے گی؟

    الفت کی بات سن کے میری
    دیکھی ہے اس میں کھلبلی سی
    ------------یہاں مجھے لگ رہا ہے کہ 'کی' کو مجبوراً طویل کھینچنا پڑ رہا ہے۔
    الفت پر بات سن کے میری
    دیکھی....
    'کی' کی جگہ 'پر' مناسب لگ رہا ہے

    مُر مُر کے مجھ کو دیکھتی ہے
    آنکھوں میں ہے جو پیشگی سی
    ------------'کے' کی جگہ 'کر' رکھیں کہ پورا آ سکتا ہے اور مڑ ہوتا ہے مُر تو کوئی لفظ معلوم نہیں ہوتا
    دوسرا مصرع سمجھ میں نہیں آ رہا کہ پیشگی سے کیا مراد ہے آپ کی

    چلتی ہے وہ مٹک مٹک کر
    زلفیں اس کی ہیں ریشمی سی
    ---------زلفوں کی بات پہلے بھی ہو چکی ہے دوسرا چلنے سے زلفوں کا تعلق بھی نظر نہیں آ رہا۔ اس شعر کو رہنے دیں

    اس کو ارشد بنا لو اپنا
    ہو گی پوری جو ہے کمی سی
    ۔۔۔۔'کو' کو طویل کھینچنا پڑ رہا ہے۔ کسی طرح الفاظ بدل کر دیکھیں
    دوسرا مصرع
    پوری ہو گی جو ہے کمی سی
    بہتر ہو گا
     
  5. ارشد چوہدری

    ارشد چوہدری محفلین

    مراسلے:
    1,276
    جھنڈا:
    UnitedStates
    موڈ:
    Brooding
    عظیم
    ------------
    (تصحیح کے بعد ایک بار پھر )
    --------
    دل میں میرے سما گئی ہے
    اک لڑکی ہے جو سانولی سی
    ----------
    چلتی ہے جب وہ سر اُٹھا کر
    لگتی ہے مجھ کو چُلبلی سی

    اس کی باتیں سمجھ نہ آئیں
    بولی ہے اس کی اجنبی سی
    ---------
    زلفیں اس کی گھٹا ہوں جیسے
    آنکھیں اس کی ہیں نرگسی سی
    -----------
    جب وہ آتی ہے پاس میرے
    دل میں مچتی ہے کھلبلی سی
    ------------
    جب وہ جاتی ہے بات کر کے
    دل میں رہتی ہے تشنگی سی
    ------------
    الفت پر بات سُن کے میری
    دیکھی ہے اس میں کھلبلی سی
    ------------
    مڑ مڑ کے مجھ کو دیکھتی ہے
    آنکھوں میں ہے جو تشنگی سی
    -------------
    چلتی ہے یوں مٹک مٹک کر
    جیسے کوئی ہے منچلی سی
    -----------
    اس کو اپنا بنا لو ارشد
    پوری ہو گی جو ہے کمی سی
     
  6. الف عین

    الف عین لائبریرین

    مراسلے:
    33,851
    جھنڈا:
    India
    موڈ:
    Psychedelic
    اب عظیم کے سپرد ہی کر رہا ہوں یہ اصلاح کا کام
    کچھ دن سے میرے دائیں ہاتھ میں درد ہو رہا ہے جس کی تشخیص نیوریشیا کی گئی ہے اور اس ہاتھ کو محض مجبوری میں استعمال کرتے کو کہا گیا ہے، اس لیے اب ٹائپ کرنا بند کر رہا ہوں، محفل محض دیکھتا رہوں گا ان شاء َللہ
     
  7. ارشد چوہدری

    ارشد چوہدری محفلین

    مراسلے:
    1,276
    جھنڈا:
    UnitedStates
    موڈ:
    Brooding
    اللہ جلد آپ کو صحت یاب فرمائے ۔انشاء اللہ سب آپ کے لئے دعا کریں گے۔آپ ہی سے تو محفل ہے۔
     
  8. عظیم

    عظیم محفلین

    مراسلے:
    6,628
    اللہ تعالی آپ کو تندرستی عطا فرمائیں
    آمین
     
  9. عظیم

    عظیم محفلین

    مراسلے:
    6,628
    مڑ مڑ کے مجھ کو دیکھتی ہے
    آنکھوں میں ہے جو تشنگی سی
    -------------یہ شعر ابھی بھی درست معلوم نہیں ہو رہا۔ صرف تشنگی کہنے سے میرا خیال ہے کہ بات مکمل نہیں ہو گی۔ دید کی تشنگی وغیرہ ہوتا تو بات بن سکتی تھی۔
    اس کے علاوہ پہلے مصرع میں 'کر' مکمل آ سکتا ہے تو 'کے' کی جگہ بہتر ہو گا

    چلتی ہے یوں مٹک مٹک کر
    جیسے کوئی ہے منچلی سی
    ۔۔۔ایسا لگتا ہے کہ ردیف 'سی' یہاں کارگر ثابت نہیں ہو رہی۔ اس کے علاوہ مٹک مٹ کر چلنا کچھ مزاحیہ سا بھی لگتا ہے اور شعر اتنا اچھا بھی نہیں لگ رہا۔ آپ اس کو نکال بھی سکتے ہیں
     

اس صفحے کی تشہیر