1. احباب کو اردو ویب کے سالانہ اخراجات کی مد میں تعاون کی دعوت دی جاتی ہے۔ مزید تفصیلات ملاحظہ فرمائیں!

    ہدف: $500
    $420.00
    اعلان ختم کریں
  2. اردو محفل سالگرہ چہاردہم

    اردو محفل کی یوم تاسیس کی چودہویں سالگرہ کے موقع پر تمام اردو طبقہ و محفلین کو دلی مبارکباد!

    اعلان ختم کریں

در بدر میں ہوں اگر حکمِ سفر اس کا تھا

صفی حیدر نے 'آپ کی شاعری (پابندِ بحور شاعری)' کی ذیل میں اس موضوع کا آغاز کیا، ‏جولائی 12, 2019

  1. صفی حیدر

    صفی حیدر محفلین

    مراسلے:
    286
    جھنڈا:
    Pakistan
    در بدر میں ہوں اگر حکمِ سفر اس کا تھا
    دشت و وادی بھی اسی کی تھی نگر اس کا تھا
    منہ کے بل گرنے سے مجھ کو نہ بچایا اس نے
    شب اندھیری بھی اسی کی تھی قمر اس کا تھا
    باغِ بے فیض سے پایا ہے نہ سایہ نہ ثمر
    ابر اس کا تھا زمیں اس کی شجر اس کا تھا
    کیوں مجھے موردِ الزام کیا تھا اس نے
    گو بغاوت تھی مری حکم مگر اس کا تھا
    زرد رو لوگ تھے افلاس زدہ دنیا میں
    سب تھے مہمان بلائے ہوئے گھر اس کا تھا
    دل کہ مائل تھا گناہوں پہ ازل سے میرا
    میں جو عصیاں سے بچا اس میں بھی ڈر اس کا تھا
    جو تہی دست صدا دیتا رہا کوچے میں
    وہ سوالی بھی صفی اس کا تھا در اس کا تھا
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1
  2. محمد عدنان اکبری نقیبی

    محمد عدنان اکبری نقیبی محفلین

    مراسلے:
    16,879
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Cheerful
    ماشاءاللہ ،
    عمدہ غزل لگی ۔
    ایک مشورہ ہے اسے اصلاح ہرگز مت سمجھے گا ۔
    اگر اس مصرع کو یوں کر دیا جائے "در بدر جو ہوں اگر حکمِ سفر اس کا تھا " تو کیسا رہے گا ۔
    یہ شعر تو بہت پسند آیا ۔
     
    • دوستانہ دوستانہ × 1
  3. صفی حیدر

    صفی حیدر محفلین

    مراسلے:
    286
    جھنڈا:
    Pakistan
    بہت شکریہ سر .... آپ نے حوصلہ افزائی بھی کی اور نہایت عمدہ مشورے سے بھی نوازا جو مجھے اچھا لگا...... اللہ آپ کو جزائے خیر دے ....
     
    • دوستانہ دوستانہ × 1

اس صفحے کی تشہیر