اقبال دامِ تہذیب

حسان خان نے 'پسندیدہ کلام' کی ذیل میں اس موضوع کا آغاز کیا، ‏دسمبر 1, 2012

  1. حسان خان

    حسان خان لائبریرین

    مراسلے:
    17,723
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Bookworm
    اقبال کو شک اس کی شرافت میں نہیں ہے
    ہر ملتِ مظلوم کا یورپ ہے خریدار!
    یہ پیرِ کلیسا کی کرامت ہے کہ اس نے
    بجلی کے چراغوں سے منور کیے افکار!
    جلتا ہے مگر شام و فلسطیں پہ مرا دل
    تدبیر سے کھلتا نہیں یہ عقدۂ دشوار!
    تُرکانِ 'جفا پیشہ' کے پنجے سے نکل کر
    بیچارے ہیں تہذیب کے پھندے میں گرفتار!
    (علامہ اقبال)
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 3
    • زبردست زبردست × 1
  2. زبیر مرزا

    زبیر مرزا محفلین

    مراسلے:
    5,997
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Shh
    واہ جناب بہت خوب
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1
  3. الماس حسین

    الماس حسین محفلین

    مراسلے:
    8
    یہ پیر کلیسا کی کرامت ہے کہ اس نے
    بجلی کے چراغوں سے منور کیے افکار


    اس شعر کی تشریح چاہیئے، عین نوازش ہوگی
     
  4. نسیم زہرہ

    نسیم زہرہ محفلین

    مراسلے:
    155
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Cool
    کیا اقبالؒ کے زمانے میں ملک شام بھی کسی قسم کی مشکلات کا شکار تھا؟
     
  5. ام اویس

    ام اویس محفلین

    مراسلے:
    1,757
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Relaxed
    سلطنت عثمانیہ کا زوال 1908 سے 1922
    اس دوران تمام مسلم ممالک توڑ پھوڑ اور تقسیم کا شکار ہوئے۔ فلسطین و شام کو تقسیم کرنے کے بعد ہی فلسطین میں اسرائیل کا قیام ممکن بنایا گیا۔
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1
    • معلوماتی معلوماتی × 1

اس صفحے کی تشہیر