ماہر القادری حمدِ: تری شانِ تجمل کا وقارِ عرش ہے منظر

محمد تابش صدیقی نے 'حمد، نعت، مدحت و منقبت' کی ذیل میں اس موضوع کا آغاز کیا، ‏اپریل 30, 2020

  1. محمد تابش صدیقی

    محمد تابش صدیقی منتظم

    مراسلے:
    25,900
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Breezy
    تری شانِ تجمل کا وقارِ عرش ہے منظر
    ترا نقشِ جلالت ثبت ہے کعبہ کی عظمت پر

    ضیا افگن ہے تیرا حسن بت خانہ کی دنیا میں
    ترے انوار کی تابش ہے فانوسِ کلیسا میں

    کہیں موجود ہے رنگ و بہارِ گلستاں بن کر
    کہیں ظاہر ہے تو آتش کدے کی گرمیاں بن کر

    ترے حسنِ تحیّر زا کی کوئی انتہا بھی ہے
    کہ تو شامل ہے سب میں اور پھر سب سے جدا بھی ہے

    ترا سازِ محبت ہے ترنم عندلیبوں کا
    چٹک غنچہ کی کیا ہے، اک تری توحید کا نغمہ

    ترے حسنِ جہاں افروز کے ہیں مختلف منظر
    شگوفے، پھول، ذرے، کہکشاں، قوسِ قزح، اختر

    حدودِ ذات سے تیرے نہیں ہے کوئی شے باہر
    نشاط و کیف، نوع و جنس، رنگ و بو، عرَض، جوہر

    تری شانِ ربوبیت ہے ہر محلول کی علت
    زمانہ، ظرف، مقدار و تجدد، گردش و حرکت

    ترے ہی نور سے روشن ہیں پتھرائی ہوئی آنکھیں
    رواں ہوتی ہیں تیرے نام سے چھوٹی ہوئی نبضیں

    بیاباں، کوه، باغ و دشت، صحرا، موج اور ساحل
    تری تجرید کے، تفرید کے، توحید کے قائل

    سمجھتے ہیں خدا تجھ کو، ثنا کرتے ہیں سب تیری
    برہمن، شیخ، اسقف، مغ، پری، جن، حور اور قدسی

    ہر اک ان میں ہے تابع، تیرے ہی حکمِ محکّم کا
    اراده، آرزو، خواہش، تمنا، ولولہ، جذبہ

    غریبوں کی تڑپ میں اور یتیموں کی نگاہوں میں
    تری رحمت کے جھونکے بند ہیں بیوہ کی آہوں میں

    بہا لاتی ہے گزرے دور کو موجِ کرم تیری
    قسم کھا کر میں کہتا ہوں زلیخا کی جوانی کی

    لجاجت سے تری چوکھٹ پہ کرتی ہیں جبیں سائی
    پہاڑوں کی بلندی اور دریاؤں کی گہرائی

    تری قدرت کی طاقت کا یہ اک ادنیٰ کرشمہ ہے
    زمیں کے سخت پردے نرم دانہ چیر دیتا ہے

    ترے حسنِ جلالت خیز کی گرمی اگر چاہے
    ابھی سارا زمانہ برف کی صورت پگھل جائے

    جو تو چاہے مرے مولا تو کانٹے خون ٹپکائیں
    رگیں پھولوں کی پتھر سے زیادہ سخت ہو جائیں

    ترے جلوے طلسمِ رنج و کلفت توڑ دیتے ہیں
    ترے لطف و کرم ٹوٹے دلوں کو جوڑ دیتے ہیں

    ٭٭٭
    ماہر القادریؒ
     
    • زبردست زبردست × 1
  2. الف نظامی

    الف نظامی لائبریرین

    مراسلے:
    16,904
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Amused
    حدودِ ذات سے تیرے نہیں ہے کوئی شے باہر
    نشاط و کیف، نوع و جنس، رنگ و بو، عرَض، جوہر
     
    آخری تدوین: ‏اپریل 30, 2020
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1

اس صفحے کی تشہیر