تازہ غزل : رنگِ دنیا دیکھتا رہتا ہوں میں از نویدظفرکیانی

نویدظفرکیانی نے 'آپ کی شاعری (پابندِ بحور شاعری)' کی ذیل میں اس موضوع کا آغاز کیا، ‏جولائی 15, 2012

  1. نویدظفرکیانی

    نویدظفرکیانی محفلین

    مراسلے:
    244
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Breezy
    رنگِ دنیا دیکھتا رہتا ہوں میں
    خود کو خود سے مانگتا رہتا ہوں میں
    رات بھر کیوں جاگتا رہتا ہوں میں
    چاند سے کیا پوچھتا رہتا ہوں میں
    کیسا نابینا سمے ہے زیست کا
    سب سے آنکھیں مانگتا رہتا ہوں میں
    تشنگی بجھتی نہیں اظہار کی
    اپنے اندر گونجتا رہتا ہوں میں
    زعم ہے پتھرائے جانے کا مجھے
    اور دل کو تھامتا رہتا ہوں میں
    خشک پتے ہیں یا امّیدیں ظفر
    ٹہنیوں سے توڑتا رہتا ہوں میں
    نویدظفرکیانی
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 3
  2. محمداحمد

    محمداحمد لائبریرین

    مراسلے:
    23,408
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Amazed
    بہت ہی خوب۔۔۔۔!

    اچھی غزل ہے نوید بھائی۔ بہت سی داد پیشِ خدمت ہے۔



    شعر نمبر 3 اور 5 میں ٹائپو ہے اور "ز" کی جگہ "ذ" پریس ہوگیا ہے۔ اسے ٹھیک کر دیجے گا۔
     

اس صفحے کی تشہیر