بُجھ گئی دل کی روشنی، راہ دھواں دھواں ہوئی۔ مخمور سعیدی

یوسُف نے 'پسندیدہ کلام' کی ذیل میں اس موضوع کا آغاز کیا، ‏فروری 7, 2021

  1. یوسُف

    یوسُف محفلین

    مراسلے:
    148
    بُجھ گئی دل کی روشنی، راہ دھواں دھواں ہوئی
    صبح چلے کہاں سے تھے، شام ہمیں کہاں ہوئی

    شوق کی راہِ پُر خطر، طے تو کر آئے ہم مگر
    نذرِ حوادثِ سفر، دولتِ جسم و جاں ہوئی

    عشق و جنوں کی واردات، دیدہ و دل کے سانحات
    بیتی ہوئی ہر ایک بات، دُور کی داستاں ہوئی

    کوئی بھی اب نہیں رہا جس کو شریکِ غم کہیں
    دورِ طرب کی یاد بھی شاملِ رفتگاں ہوئی

    لُٹ گئی کیسے دفعتاً روشنیوں کی انجمن
    آ کے کہاں سے خیمہ زن ظُلمتِ بے کراں ہوئی

    کس کو خبر کہ ہم نے کیا خواب بُنے ہیں عمر بھر
    کس سے کہیں کہ زندگی کس لیے رائیگاں ہوئی

    طرزِ بیاں تو بے قیاس تھے ترے غم زدوں کے پاس
    بول اٹھی نگاہِ یاس بند اگر زباں ہوئی​
     
    آخری تدوین: ‏فروری 7, 2021

اس صفحے کی تشہیر