سعود عثمانی بغیر اِذن کسی سے کہاں چلا جائے ۔سعود عثمانی

چوہدری لیاقت علی نے 'پسندیدہ کلام' کی ذیل میں اس موضوع کا آغاز کیا، ‏نومبر 13, 2015

  1. چوہدری لیاقت علی

    چوہدری لیاقت علی محفلین

    مراسلے:
    305
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Bookworm
    بغیر اِذن کسی سے کہاں چلا جائے
    جسے بھی زَعم ِ سفر ہو یہاں' چلا جائے

    رکو میں کوہِ فروزاں سے آگ لے آؤں
    یہ عہدِ شب نہ کہِیں بے نشاں چلا جائے

    یہ رسّیاں ہیں ترا رزق ' اے عصاے قلم !
    چلے تو سب ہُنَر ِ ساحؐراں چلا جائے

    کھڑی ہے دونوں طرف خِشت ِ آب کی دیوار
    سو پانیوں کے کہیں درمیاں چلا جائے

    جو صِدق زاد ہیں ' رُک جائیں ۔۔ لفظ ہوں کہ رفیق
    تو آگ ساتھ رہے اور دھواؑں چلا جائے

    میں جال سیتا ہُوا مطمئِن مَچھیرا ہوں
    بَھلے کہیں مِرا رزقِ رَواں چلا جائے

    ترا کرم ہے کہ تعریف کے لیے تو ہے
    جو تُو نہ ہو تو یہ سب رایگاں چلا جائے
     

اس صفحے کی تشہیر