واصف بدلے ہوئے حالات سے ڈر جاتا ہوں اکثر

نظام الدین نے 'پسندیدہ کلام' کی ذیل میں اس موضوع کا آغاز کیا، ‏مارچ 20, 2015

  1. نظام الدین

    نظام الدین محفلین

    مراسلے:
    1,005
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Brooding
    بدلے ہوئے حالات سے ڈر جاتا ہوں اکثر

    شیرازۂ ملت ہوں، بکھر جاتا ہوں اکثر

    میں ایسا سفینہ ہوں کہ ساحل کی صدا پر

    طوفان کے سینے میں اتر جاتا ہوں اکثر

    میں موت کو پاتا ہوں کبھی زیرِ کفِ پا

    ہستی کے گماں سے بھی گزر جاتا ہوں اکثر

    مرنے کی گھڑی آئے تو میں زیست کا طالب

    جینے کا تقاضا ہو تو مرجاتا ہوں اکثر

    رہتا ہوں اکیلا میں بھری دنیا میں واصف

    لے نام مرا کوئی تو ڈر جاتا ہوں اکثر

    (واصف علی واصف)​
     
    • زبردست زبردست × 2
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1

اس صفحے کی تشہیر