سعود عثمانی بارش ہے اور تو ۔ایک نظم

چوہدری لیاقت علی نے 'پسندیدہ کلام' کی ذیل میں اس موضوع کا آغاز کیا، ‏جولائی 9, 2016

  1. چوہدری لیاقت علی

    چوہدری لیاقت علی محفلین

    مراسلے:
    305
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Bookworm
    بارش ہے اور تو
    کورے جسم کے جیسی ہے
    مٹی کی خوشبو
    وقت ہو فرصت جو
    دن بھر دیکھیں دل بھر کے
    رم کرتے آہو
    کٹنا پڑتا ہے
    مٹی ہوں اور پہلو میں
    دریا پڑتا ہے
    یہ گرداب نہ دیکھ
    دیکھ یہ سارے جھوٹے ہیں
    ایسے خواب نہ دیکھ
    خود سے مل کر دیکھ
    دوست یہیں مل جائیں گے
    ایک سے بڑھ کر ایک
    چین نہیں گھر میں
    کوئی روزن ڈھونڈتی ہے
    بوند ہے پتھر میں

    (سعود عثمانی)
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1

اس صفحے کی تشہیر