ایک چہرہ بدلنے والے کے نام۔

رشید حسرت نے 'آپ کی شاعری (پابندِ بحور شاعری)' کی ذیل میں اس موضوع کا آغاز کیا، ‏جنوری 17, 2020

  1. رشید حسرت

    رشید حسرت محفلین

    مراسلے:
    118
    جھنڈا:
    Pakistan
    ایک چہرہ بدلنے والے کے نام۔


    یہ مانا کہ روشن سِتارہ تِرا
    اندھیروں میں جلتا ھُؤا میں دیّا

    تِرے چارسُو زر کی جھنکار سی
    مجھے نہ مُیسّر ھے دو وقت کی

    تِری بات کا ھر کِسی کو لِحاظ
    کرے کیوں نہ تُو اپنی قِسمت پہ ناز

    مِرا سچ بھی سُولی پہ لٹکا رہے
    تِرے جُھوٹ پر سب کو اثبات ھے

    تِرے پاس بیٹھیں خُوشامد مِزاج
    تِرے گُن جو گاتے ہیں اے دوست آج

    مبادا ھُوں کل تُجھ سے بیزار یہ
    پُجاری ہیں کُرسی کے سرکار یہ

    تُو حلقے میں اِن کے ھے بیٹھا ھُؤا
    تُو دانِش کا داعی تھا یہ کیا ھُؤا

    تُجھے سنگ و پارس کی پہچان تھی
    تِرے جِسم میں تو مِری جان تھی

    شِکستہ سے کمرے میں جاڑے کے دِن
    شب و روز مستی اکھاڑے کے دِن

    سرِ رہ گذر بے سبب قہقہے
    کہاں کھو گئے ہیں وُہ سب قہقہے

    وُہ لُڈّو، وہ فِلمیں، وُہ شوخی، وہ بُھوک
    کبھی یاد آئیں تو اُٹھتی ھے ھُوک

    جو فُرصت مِلے تُجھ کو، ماضی میں جھانک
    بدن برہنہ ھے، بدن اپنا ڈھانک

    اگر یاد ھو، تُو بھی مزدُور تھا
    کہ افلاس کے ہاتھوں مجبُور تھا

    جو بُھولا ھُؤا ھے وُہ سب یاد کر
    مِرے دوست کو خُود سے آزاد کر

    اگر وقت کے ہاتھوں لاچار ھُوں
    تو اِتنا بتا دُوں کہ خُود دار ھُوں

    تِری بات میں تُرش لہجہ تِرا
    بڑا بھید جِیون کا مُجھ پر کُھلا

    غرِیبی، امِیری کا کیا جوڑ ھے
    تعلّق کا یہ آخری موڑ ھے

    بہُت دوستی کا ھے رکھا بھرم
    مگر اب تو سِینے میں گُھٹتا ھے دم

    مُجھے ناز ھے جو بھی، جیسا بھی ھُوں
    مگر آخری بات کہتا چلُوں

    الگ کل جو عُہدے سے ھونا پڑے
    تُجھے پِھر اکیلے نہ رونا پڑے

    اگر اب بھی سنبھلے تو کیا بات ھے
    وگرنہ تجھے وقت سے مات ھے۔

    رشِید حسرتؔ۔
     

اس صفحے کی تشہیر