اپنے گھر کے بلونگے شلونگے - مستنصر حسین تارڑ

محمد وارث نے 'اردو ادب' کی ذیل میں اس موضوع کا آغاز کیا، ‏مئی 20, 2016

  1. محمد وارث

    محمد وارث لائبریرین

    مراسلے:
    26,914
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Depressed
    ہے تو یہ کالم، "شعراء کرام" کے خلاف لیکن اتنا دلچسپ ہے کہ یہاں پوسٹ کیے بغیر رہ نہیں سکا :)

    اپنے گھر کے بلونگے شلونگے - مستنصر حسین تارڑ

    پچھلے دنوں ایک’’ موقر‘‘ نقاد کا ایک بیان نظر سے گزرا…ایسے نقاد حضرات کے فرمودات کو میں وقت ضائع کرنے کی خاطر نظر سے گزارتا ہوں اور انہیں گزر جانے دیتا ہوں‘ وہ جو کہتے ہیں ناں کہ فلاں صاحب گزر گئے ایسے انہیں گزر جانے دیتا ہوں لیکن میں نے اس بیان کو گزرنے نہ دیا‘ ٹھہرجانے دیا کہ ان کا کہنا تھاکہ تمام بڑے ادیب اپنی ادبی زندگی کی ابتداء شاعری سے کرتے ہیں اور بعدازاں نثر کی جانب آتے ہیں…شاید اسی لئے میں ایک بڑا ادیب نہیں بن سکا کہ میں نے بھولے سے بھی کبھی شاعری سے رجوع نہیں کیا…میری ادبی زندگی کی ابتداء نثر تھی اور انتہا بھی نثر تھی…دراصل شاعری کیلئے ایک ’’ موزوں‘‘ طبع نہ رکھتا تھا…اوزان کے ناپ تول کا بھی ماہر نہ تھا‘ غیب سے بھی حرام ہے کبھی کوئی خیال آتے ہوں‘ داغ دل یاد آنے لگے کے لازوال مصرعے کے بعد میں‘ دور کے ڈھول بھی سہانے لگے جیسا واہیات قافیہ جوڑنے کے قابل نہ تھا… یعنی منجی پیڑھی ٹھونکنے کے لطیف فن سے آشنا نہ تھا… یوں میرے بارے میں یہ افواہ عام ہوگئی کہ میں شاعروں سے بغض رکھتا ہوں اور یہ افواہ نہیں ایک حقیقت ہے کہ میں واقعی بغض رکھتا ہوں…بھلا یہ ستم نہیں تو اور کیا ہے کہ ایک شاعر عمر بھر میں ایک کام کا شعر کہہ دے اور پھر وہ اسی ایک شعر کے بل بوتے پر پوری زندگی مشاعرے’’ لوٹتا‘‘ رہے…

    علاوہ ازیں ’’ لفافے‘‘ بھی لوٹتا رہے…اور میں یہاں مثالیں دے کر واضح کر سکتا ہوں لیکن اس میں کچھ پردہ نشینوں اور قریبی دوستوں کے نام بھی آتے ہیں…ہم ناولوں‘ افسانوں اور سفرناموں کے ڈھیر لگاتے ہوں اور پھر بھی کوئی نہ پوچھے کہ میاں کیا بیچتے ہو…ہم اپنی نثر کی دکان لگائے مکھیاں مارتے رہیں کیسا ستم ہے…ویسے اپنے کسی ایک بے ہودہ سے شعر کو مشہور اور مقبول کر دینے والا ایک نسخہ ہے اور تیر بہدف ہے…مثلاً آپ شعر کہتے ہیں کہ ہم کو اپنے گھر کے بلونگے اچھے لگتے ہیں…بلونگے کیا شلونگے بھی اچھے لگتے ہیں…تو آپ ہر مشاعرے میں یہ شعر مسلسل پڑھتے ہیں‘ اس مشاعرے میں شریک شعراء محض اس لئے’’ کیا کہنے…کیا خوب کہا ہے…پھر سے پڑھئے‘‘ کی داد دیتے ہیں تاکہ جب وہ غزل سرا ہوں تو آپ خواجہ سرا نہ ہو جائیں‘ انہیں بھی اسی طور داد دیں‘ توصیف کے ڈونگرے نچھاور کریں…علاوہ ازیں اگر آپ کہیں کچھ لکھتے ہیں تو تحریر کے درمیان میں…ہاں خوب یاد آیا میرا ایک شعر ہے کہ گھر کے بلونگے اچھے لگتے ہیں متعدد بار لکھتے ہیں یہاں تک کہ عوام الناس کے ذہنوں میں آپ کے بلونگے اور شلونگے رقص کرنے لگتے ہیں…

    ویسے میں بغض تو دراصل منیر نیازی‘مجید امجد‘ انور شعور‘ رضا چغتائی‘ اظہار الحق‘ وحید احمد وغیرہ سے رکھتا ہوں کہ ظالم ایسے شعر’’ نکالتے‘‘ ہیں کہ اپنے نثر نگار ہونے پر خفت ہونے لگتی ہے…

    منیر نیازی ایک بار ریڈیو کے کسی مشاعرے میں شریک ہوئے…اب وہ اپنے بیشتر ہم عصر شعراء کو کمی کمین جانتے تھے یہاں تک کہ جب کسی شیدائی نے جذباتی ہو کر کہا کہ منیر صاحب…یہ درست ہے کہ غالب اور اقبال بڑے شاعر تھے اور فیض صاحب بھی گزارے کے تھے لیکن آپ…اس پر منیر نے نہایت سنجیدگی سے کہاتھا…کاکا‘ تو نے جو کچھ کہا ہے اس میں مبالغہ تو ہے لیکن میں تم سے سو فیصد اتفاق کرتا ہوں تو اس ریڈیو کے مشاعرے میں جب دیگر شعراء اپناکلام پیش کر رہے تھے تو منیر منہ میں گھنگھنیاں ڈالے چپ بیٹھے رہے‘ نہ کوئی داد اور نہ کوئی بیداد…جب منیر کی باری آئی انہوں نے مطلع پڑھا تو دیگر شعراء نے بھی چپ سادھ لی… منیر نے غزل کا دوسرا شعر پڑھا کچھ توقف کیا اور پھر خود ہی کہنے لگے…واہ منیر نیازی‘ کیا شعر کہا ہے

    ہمارے ہاں جب کبھی ادبی سرگرمیوں کو فروغ دینے کا قصد کیا جاتا ہے تو ہر جانب سے پکار اٹھتی ہے کہ مشاعرے کروائیں‘ مشاعرے برپا کریں اور ایسا ہی ہوتا ہے ہر جانب مشاعروں کی ہاہاکار مچ جاتی ہے‘ لفافوں کی ریل پیل ہوجاتی ہے…لیجئے ادب کو فروغ حاصل ہوگیا… یہاں تک کہ ایک زمانے میں’’ میلہ مویشیاں‘‘ کے دوران بھی مشاعرے منعقد ہوتے تھے… ابھی پچھلے دنوں ہندوستان کے ایک مشہور شاعر ندا فاضلی کا انتقال ہوگیا…ان کا ایک فلمی نغمہ ’’ کسی کو اپنا جہاں نہیں ملتا‘ کسی کو زمیں کسی کو آسمان نہیں ملتا‘‘ اس شعر میں میری یادداشت کا سقم شامل ہے یہ شعر بہت مقبول ہوا…جب جرمنی کی ایک سرکاری ادبی تنظیم’’ لٹریئر ورکسٹائے‘‘ نے میرے ناول’’ راکھ‘‘ کو جنوب مشرقی ایشیا کا سب سے نمائندہ ناول قرار دے کر اس کی پذیرائی کی…ہائیڈل برگ یونیورسٹی کی پروفیسر کرسٹینا آسٹن ہیلڈ کو اس محفل کی میزبانی کیلئے بلایا اور کرسٹینا وہ خاتون ہیں جنہوں نے جرمن زبان میں قرۃ العین حیدر کے ناولوں پر پی ایچ ڈی کی’’ راکھ‘‘ کو جرمن زبان میں ڈھال کر اس کی ڈرامائی تشکیل کی گئی تو وہاں ندا فاضلی بھی تھے…کچھ دن ان کے ساتھ رفاقت رہی اور جب میں ناگہانی طورپر بیمار پڑ گیا تو اس درویش خصلت شخص نے دن رات میری تیمار داری کی…ندا نے ایک شب کہا’’ تارڑ بھائی… ہم شاعر دراصل انٹرٹینر ہوتے ہیں‘ لوگ مشاعروں میں محظوظ ہونے کے لئے آتے ہیں اور ہم انہیں محظوظ کرتے ہیں جب کہ ہمارا سنجیدہ اور اصل کلام کوئی نہیں سنتا…

    میں تذکرہ کرچکا ہوں کہ بہت برس پیشتر میں نے گوپی چندنارنگ کو اپنے ہاں ناشتے کیلئے مدعو کیا اور انکے ہمراہ ایک خاموش طبع چپ سے شخص تھے نارنگ نے تعارف کروایا کہ یہ شہریار ہیں… ہمارے بڑے شاعر ہیں…انہوں نے ’’ امراؤ جان ادا‘‘ کے گانے لکھے تھے…شہریار کو عمر بھر قلق رہا کہ میری سنجیدہ شاعری کو کسی نے نہ سراہا… ہمیشہ ’’ امراؤ جان ادا‘‘ کے گیتوں نے مجھے رسوا کیا…

    نہ صرف شہریار اور ندافاضلی اس لئے بڑے شاعر کے رتبے تک نہ پہنچ پائے کہ انہوں نے کبھی بھی ایسا بلند پایہ شعر نہ کہا کہ

    ہم کو اپنے گھر کے بلونگے اچھے لگتے ہیں
    بلونگے کیا شلونگے بھی اچھے لگتے ہیں
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 6
    • زبردست زبردست × 2
  2. محمد وارث

    محمد وارث لائبریرین

    مراسلے:
    26,914
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Depressed
    منیر نیازی کے بارے میں جو اوپر واقعہ ہے اور اُس میں جو باتیں ہیں وہ یقینا درست ہیں۔ ایک بار ایک مشاعرے میں (میری زندگی کا وہ واحد مشاعرہ تھا جو میں نے سُنا) میں نے بھی نیازی صاحب کی باتیں سنیں تھیں مشاعرے کے بعد۔ کچھ ایسی ہی تھیں :)
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 2
    • معلوماتی معلوماتی × 2
    • پر مزاح پر مزاح × 2
  3. عباد اللہ

    عباد اللہ محفلین

    مراسلے:
    1,276
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Cheeky
    آھا کیا خوب کالم ہے
    تاڑنے والے قیامت کی نظر رکھتے ہیں لیکن ساتھ ہی ساتھ
    دور کے ڈھول سہانے
    پھر زبان و بیان میں جو فقید المثال جھول تارڑ صاحب کے یہاں ملتا ہے اس پر ادبی حلقوں میں بےننگ ہو کر بھی تارڑ صاحب نام کما گئے
    کتابیں انکی مارکیٹ میں آنے سے پہلے ختم ہو جاتی ہیں اس پر قاری کی بصیرت پر داد دینے کو جی چاہتا ہے
    خیر تارڑ صاحب اچھی کہانیا سناتے ہیں اسی لئے ہم بھی مذید کچھ نہیں کہتے
     
    • معلوماتی معلوماتی × 1
  4. محمد وارث

    محمد وارث لائبریرین

    مراسلے:
    26,914
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Depressed
    قطع نظر اس کے کہ تارڑ صاحب کا اپنا ادبی مقام کیا ہے۔ اوپر والے کالم میں کوئی ایک بھی بات غلط نہیں (راکھ والی بات پر میں کچھ کہہ نہیں سکتا کہ صحیح ہے یا غلط) لیکن دیگر باتیں۔۔۔۔۔۔۔۔کس شاعر کی جرات ہے کہ ان کی تردید کرے :)
     
    • متفق متفق × 1
  5. عباد اللہ

    عباد اللہ محفلین

    مراسلے:
    1,276
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Cheeky
    صاحب تارڑ صاحب کو چاہئے کہ شعرا کے دوانین سے نثر نگاروں کے سرقے پر بھی نظر رکھیں!
    ہمارا کون نثر نگار ہے جس کا مضمون دو چار اشعار کو کھپائے بغیر پورا ہوتا ہو؟
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1
  6. محمد وارث

    محمد وارث لائبریرین

    مراسلے:
    26,914
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Depressed
    میرا خیال ہے بات کہیں اور نکل جائے گی۔ تارڑ کا ادبی مقام یا نثر نگاروں کا دوواین سے سرقہ، اس کو بھی چھوڑیے۔ کالم کے نفس مضمون پر بات کرتے ہیں، چار امور ہیں اس میں:

    -عروض و قافیہ (منجھی پیڑی ٹھوکنے کا علم، تھوڑی زیادتی ہوگئی عروضیوں کے ساتھ لیکن یہ الفاظ سو فیصد منطبق ہو گئے)
    -متشاعر حضرات، ساری زندگی ایک شعر یا غزل کے زیرِ سایہ لفافے لوٹتے رہے۔ کیا غلط ہے؟ کتنے ہی نام ہیں اس میں۔
    -شعرا کی انجمن ستائشِ باہمی (ہم سب جانتے ہیں)
    -مشاعرہ بازی یا انٹرٹینمنٹ (اصل ٹیلنٹ کا پاپولر قسم کے ادب نیچے چھُپ جانا)

    صرف آخری بات ایسی ہے جس پر کسی شاعر نے جوابی بات کی ہے، ستیہ پال آنند صاحب نے فیس بُک پر فرمایا ہے کہ اگر تارڑ کالم نویسی نہ کرتے تو اس سے بھی بڑے ناول نگار ہوتے۔ جوابِ آں غزل ہو گیا یا پھر طعنے کا جواب طعنہ کہہ لیں۔ :)
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 2
    • متفق متفق × 2
  7. محمداحمد

    محمداحمد لائبریرین

    مراسلے:
    23,101
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Amazed
    واہ!

    خوبصورت اور شگفتہ تحریر ہے۔
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1
  8. محمداحمد

    محمداحمد لائبریرین

    مراسلے:
    23,101
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Amazed
    یہ بات کافی حد تک ٹھیک ہے۔

    :) :) :)

    وہی بات کہ عروض کی چولیں بٹھاتے بٹھاتے اصل مضمون کہیں پیچھے رہ جاتا ہے۔ :) :)
    :)
    حالانکہ مشاعرہ وغیرہ صرف ادیبوں کو مہمیز کرنے کے آلہ ء کار کے طور پر استعمال ہونا چاہیے۔ :)
    یہ بھی ہمارا المیہ ہے۔

    تاہم ہیرے کی قدر تو جوہری ہی جانتے ہیں۔ عام لوگ تو ظاہری چمک دمک پر ہی جایا کرتے ہیں۔
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 2

اس صفحے کی تشہیر