امسال حاجیوں کی تعداد دس ہزار سے زیادہ نہیں ہو گی اور صرف مقامی حج ادا کر سکیں گے: سعودی وزیر حج

ابن آدم نے 'آج کی خبر' کی ذیل میں اس موضوع کا آغاز کیا، ‏جون 23, 2020

  1. ابن آدم

    ابن آدم محفلین

    مراسلے:
    675
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Busy
    [​IMG]
     
    • معلوماتی معلوماتی × 1
  2. خالد محمود چوہدری

    خالد محمود چوہدری محفلین

    مراسلے:
    12,707
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Festive
    اللہ تعالیٰ ہمارے گناہ معاف فرمائے
     
    • متفق متفق × 1
  3. ابن آدم

    ابن آدم محفلین

    مراسلے:
    675
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Busy
    آمین
     
  4. جاسم محمد

    جاسم محمد محفلین

    مراسلے:
    23,149
    • متفق متفق × 1
  5. زیک

    زیک محفلین

    مراسلے:
    38,671
    جھنڈا:
    UnitedStates
    موڈ:
    Bookworm
    سعودی حکومت کا دماغ چل گیا ہے اگر ان کا خیال ہے کہ دس ہزار لوگ اس سال حج کر سکیں گے
     
    • معلوماتی معلوماتی × 1
  6. حمیرا حیدر

    حمیرا حیدر محفلین

    مراسلے:
    50
    جب سے دنیا پر کرونا کا سایہ پڑا ہے ، ہر روز افسردہ کرنے والی خبریں سننے کو مل رہی ہیں۔
    ابتداء سکول بند ہونے سے ہوئی۔ بچوں کے سالانہ امتحانات روک دیئے گئے۔ اور بنا امتحان کے ہی اگلی جماعتوں میں ترقی دے دی گئی۔
    پھر دفتر بند ہو گئے اور اہم دفاتر کے کام گھروں میں منتقل کر دیئے گئے۔ اور گھروں سے کام کیا جانے لگا۔
    سب سے تکلیف دہ مساجد کا بند ہونا تھا ( جو ابھی تک ہنوز بند ہیں )۔ گھروں میں ہی نماز اور گھر ہی میں تراویح۔۔۔ حتی کہ عید کے اجتماعات پر بھی پابندی تھی تو عید کی صبح ہوئی ہی نہیں گویا۔ مساجد سے بلند ہوتیں تکبیرات کی آوازوں نے بہت رلایا، اور رشک آیا مساجد کے متولیوں پر جو تنہا تکبیرات پڑھ رہے تھے۔

    ماہ دسمبر میں عمرے کی سعادت نصیب ہوئی تھی، طواف وداع کر کے سیڑھیوں پر بیٹھی کعبہ اللہ آخری حسرت بھری نظروں سے دیکھتے( رات کے اس پہر بھی طواف کرنے والوں کی تعداد میں کوئی خاص کمی نا آئی تھی) سوچ رہی تھی کہ کیا کبھی یہ مطاف بھی خالی ہو سکتا ہے۔ کتنے خوش قسمت ہیں یہاں کے رہنے والے بلا روک ٹوک دل کے درد بہانے یہاں آ سکتے ہیں۔ ہم اتنی دور سے آ کر بس گنے چند دن ہی گزار سکتے ہیں۔

    وہ رخصت ہو کے میرا دیکھنا کعبے کو حسرت سے۔۔۔

    پھر دو ماہ بعد ہی مطاف میں طواف روکنے کا سن کر دل کو دھکا سا لگا۔ اللہ تعالی آپ کے گھر کا طواف بھی نعمتوں میں سے ہے۔۔بے شک۔
    آہ ۔۔۔مسجد نبوی اور مسجد حرام کا رمضان ایسا تو کبھی نہیں آیا تھا۔۔۔ ایسی اداسی تو کبھی ہم نے نہیں دیکھی تھی ۔۔ مگر نا جانے ابھی ہم نے اور کیا کچھ دیکھنا ہے۔۔۔ پھر مسجد نبوی اور مسجد حرام کو محدود پیمانے پر حفاظتی اقدامات کے ساتھ کھول دیا گیا۔ تو دل کو ایک گونہ سکون ملا، یہ امید قائم ہو گئی کہ ان شاء اللہ حج بھی ہو گا۔
    حج اور عمرہ موقوف ہونے پر جو احادیث کی پیشن گوئیاں خوفزدہ کرنے کے لئے کافی ہیں۔ اس سے قبل بھی کئی بار حج روکا گیا تھا مگر دعا یہی تھی کہ اللہ ہمیں ایسا دیکھنے سے بچانا۔
    نسیم سحر کا جھونکے کی مانند یہ خبر سننے کو ملی ہے:-

    سعودی حکومت نے اعلان کیا ہے کہ رواں سال مملکت میں مقیم افرادہی حج کی سعادت حاصل کرسکیں گے۔۔۔(خبر)

    اس خبر نے بے اختیار دل سکون سے بھر گیا۔بے شک محدود پیمانے پر ہی سہی حج کا اجتماع ہو گا تو سہی۔ بہت سے لوگ سعودی عرب میں رہنے کے باوجود حج نا کر سکے ہوں ان کے لئے نادر موقع ہے۔ دس ہزار کی اگرچہ حد لگائی گئی ہے مگر پھر بھی اب دل مطمئن ہے۔ اور یہ بھی امید ہو چلی کہ ان شاء اللہ جلد ہی دنیا اس وبا سے نکل آئے گی۔ ان شاء اللہ


    ✒️حمیرا حیدر
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 2

اس صفحے کی تشہیر