اردو ہماری جان

رشید حسرت نے 'آپ کی شاعری (پابندِ بحور شاعری)' کی ذیل میں اس موضوع کا آغاز کیا، ‏مارچ 4, 2021

ٹیگ:
  1. رشید حسرت

    رشید حسرت محفلین

    مراسلے:
    158
    جھنڈا:
    Pakistan
    اُردو ہماری جان



    اُردو ہے یہ سنبھل کے ذرا، دیکھ بھال کر

    اِس کو جوان ہم نے کِیا پُوس پال کر



    دکنؔ کا ولیؔ اِس کے بہُت ناز اُٹھائے

    الفاظ نئے طرز کے ہیں اِس میں کھپائے

    پِریتم کے لیئے گِیت نئے جُھوم کے گائے

    رکھا ہے اِسے شعروں کے سانچوں میں ڈھال کر

    اِس کو جوان ہم نے کِیا پُوس پال کر



    خُسروؔ نے بھری مانگ سِتاروں سے رفِیقو

    سوداؔ نے قصِیدوں سے نِکھارا بہُت اِس کو

    پِھر ذوقؔ نے الفاظ عقِیدت سے چُنے جو

    ترکِیبیں عجب فیضؔ جی لایا نِکال کر

    اِس کو جوان ہم نے کِیا پُوس پال کر



    غالبؔ نے جو گہرائی بھرے شعر کہے ہیں

    کیا کہہ گئے ہیں مُصحفیؔ یہ سوچ رہے ہیں

    اشعار ہیں یہ مِیرؔ کے یا موتی جڑے ہیں

    لائے جگرؔ بھی شعر ہی ساغر میں ڈال کر

    اِس کو جوان ہم نے کِیا پُوس پال کر



    اقبالؔ نے جو حق کا ہمیں درس دیا ہے

    انداز الگ داغؔ نے اِیجاد کیا ہے

    حسرتؔ نے بجا فیض کِسی سے تو لیا ہے

    حالیؔ فضا میں رنگ لُٹاتا اُچھال کر

    اِس کو جوان ہم نے کِیا پُوس پال کر



    مومنؔ کے کمالات یا مِیراؔ کی کوئی بات

    گُلزارؔ کے ہوں پُھول یا ساحِرؔ کے سوالات

    رہتے ہیں ہمیں یاد فِراقؔ آج بھی دِن رات

    شعروں کے رنگ دُودھ پِئیں ہم اُبال کر

    اِس کو جوان ہم نے کِیا پُوس پال کر



    رشِید حسرتؔ۔
     
    مدیر کی آخری تدوین: ‏مارچ 8, 2021
    • پسندیدہ پسندیدہ × 3
  2. محمّد احسن سمیع :راحل:

    محمّد احسن سمیع :راحل: محفلین

    مراسلے:
    1,863
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Confused
    رشید بھائی ماشاء بہت اچھے خیالات ہیں اور آپ کی اردو سے محبت بھی قابل رشک ہے.

    مجھے ایسا لگ رہا ہے اس نظم میں دو بحریں خلط ہو گئی ہیں. ٹیپ کا مصرع مفعول فاعلات مفاعیل فاعلن میں ہے جبکہ دیگر کئی مصارع مفعول مفاعیل مفاعیل فعولن میں موزوں ہو رہے ہیں.
     
    • متفق متفق × 3
  3. یاسر شاہ

    یاسر شاہ محفلین

    مراسلے:
    925
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Cheerful
    رشید حسرت صاحب
    السلام علیکم

    آپ کی نظم کا پہلا ہی شعر ایسا ہے کہ آگے پڑھنے کو دل آمادہ نہیں ہو پاتا-
    پہلے مصرع میں آپ ایک قاعدہ پیش کر کے دوسرے ہی مصرع میں اس کی نفی کر رہے ہیں -سمجھانے کے لیے شعر دیکھیے -

    باذوق آدمی بھی کوئی پاس آس ہے
    اردو کو مت سمجھیے کہ بس پھونس گھاس ہے

    اس سے آگے کی نظم پہلے شعر کے مقابلے میں قدرے بہتر ہے مگر پہلا تاثر ہی اچھا نہیں پڑتا اور پھر وہی ٹیپ کا مصرع بھی ہے -
    درخواست ہے کہ اصلاح سخن کی طرف بھی زحمت کیا کریں -
     
    آخری تدوین: ‏مارچ 6, 2021
  4. رشید حسرت

    رشید حسرت محفلین

    مراسلے:
    158
    جھنڈا:
    Pakistan
     
  5. رشید حسرت

    رشید حسرت محفلین

    مراسلے:
    158
    جھنڈا:
    Pakistan
    یاسر آپ کا حق ہے جس طرح کی رائے دیں۔ جنہوں نے شاعری کو پسند کیا اُں کا تو شکریہ ادا کرنا میرا اخلاقی فرض ہے ان سے زیادہ ان دوستوں کا شکریہ جنہوں نے میری خامیوں کی نشاندہی کی ہے میں ماہرِ عروض نہیں کبھی کچھ بحریں ایسی ہیں کہ آپس میں گڈ مڈ ہو جاتی ہیں اس نظم میں واقعی کہیں مفعول فاعلات مفاعیل فاعلات اور کہیں مفعول مفاعیل مفاعیل فعولن آیا ہے۔ بہرکیف آپ کی تنقید کا شکریہ۔
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1
  6. رشید حسرت

    رشید حسرت محفلین

    مراسلے:
    158
    جھنڈا:
    Pakistan
     
  7. رشید حسرت

    رشید حسرت محفلین

    مراسلے:
    158
    جھنڈا:
    Pakistan
    محمد احسن سمیع صاحب
    آپ کا شائستہ اندازِ تنقید دل آویز لگا۔ اردو سے وابستگی لگاؤ اور نظم کی بے ساختہ ایسی تھی کہ میں نے بحر کی طرف توجہ نہیں کی۔ بہرحال آپ کی تنقید برائے تعمیر کا شکریہ۔
     
    • دوستانہ دوستانہ × 1
  8. عرفان علوی

    عرفان علوی محفلین

    مراسلے:
    98
    رشید اور راحل صاحبان،
    امید ہے آپ میری مداخلت گوارا فرمائیں گے . نظم میں ایک سے زیادہ بحور كے استعمال میں کوئی مضائقہ نہیں . اِس امر کا صرف ایک اثر ہو گا اور وہ یہ کہ نظم ’آزاد نظم‘ كے زمرے میں شمار ہوگی . مصنف حنیف كیفی اپنی کتاب ’اُرْدُو میں نظم معرا اور آزاد نظم‘ میں صفحہ 444 پر تصدق حسین خالد، جو کہ بنیادی طور پر نظم كے شاعر تھے، کا یہ بیان نقل کرتے ہیں ”میں ایک ہی نظم میں ایک سے زیادہ بحور كے استعمال کو جائز سمجھتا ہوں .“ اسی صفحہ پر خالد کی آزاد نظم ’تارے سے‘ مثال كے طور پر دی گئی ہے جس میں تِین بحور کا استعمال کیا گیا ہے .
    رشید صاحب کی نظم میں اصل مسئلہ یہ ہے کہ چند مصرعے نہ تو بحر مضارع (مفعول فاعلات مفاعیل فاعلن) میں ہیں نہ بحر ہزج (مفعول مفاعیل مفاعیل فعولن) میں . اگر ان مصرعوں کی مناسب مرمت ہو جائے تو نظم ایک قابل قبول شکل اختیار کر لے گی . غرض یہ کہ پہلے دو مصرعے مضارع میں ہوں، پِھر تِین ہزج میں اور پِھر دو مضارع میں، اور تمام نظم میں اسی ترتیب کو برقرار رکھا جائے .
    نظم میں خیال اور بیان میں بھی بہتری کی گنجائش ہے، لیکن یہ کام میں رشید صاحب پر چھوڑتا ہوں . :)
    نیازمند،
    عرفان عؔابد
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1
  9. رشید حسرت

    رشید حسرت محفلین

    مراسلے:
    158
    جھنڈا:
    Pakistan
     
  10. رشید حسرت

    رشید حسرت محفلین

    مراسلے:
    158
    جھنڈا:
    Pakistan
    عرفان عابد صاحب آپ کے تبصرے سے خاکسار کو حوصلہ ملا ہے۔ نظم میں واقعی گنجائش ہوتی بھی ہے اور میں نے بعد میں کوشش بھی کی ہے اصلاح کی۔ اصل میں مصروفیات ایسی ہیں کہ جو کچھ روانی میں کہہ گئے اس پر تقطیع کا موقع میسر نہیں آ سکا۔ میرے کچھ مصرعے ضرور اصلاح طلب ہیں اور میں وقت نکال کر موزوں بھی کر لوں گا۔ تنقید کرنے اور حوصلے بڑھانے والے ہر دو ساتھیوں کا دل سے شکر گزار ہوں۔
     
    • دوستانہ دوستانہ × 1

اس صفحے کی تشہیر