گرمی کا شکارجیکب آباد انسانوں کے لیے ناقابلِ رہائش بن رہا ہے ، بین الاقوامی ماہرین

جاسم محمد نے 'ماحولیات' کی ذیل میں اس موضوع کا آغاز کیا، ‏مئی 11, 2020

  1. جاسم محمد

    جاسم محمد محفلین

    مراسلے:
    20,526
    گرمی کا شکارجیکب آباد انسانوں کے لیے ناقابلِ رہائش بن رہا ہے ، بین الاقوامی ماہرین
    ویب ڈیسک اتوار 10 مئ 2020
    [​IMG]
    امریکی اور برطانوی ماہرین نے کہا ہے کہ نمی اور گرمی کے تحت ویٹ بلب ٹمپریچر پاکستان کے شہر جیکب آباد میں اپنی حدود کو چھورہا ہے۔ فوٹو: اخترسومرو، رائٹرز، بحوالہ نیوسائنٹسٹ

    لندن: برطانوی اور امریکی ماہرین نے کہا ہے کہ دنیا کے بہت سے ممالک اور مقامات ایسے ہیں جو ایک ساتھ گرمی اور رطوبت بڑھنے سے انسانی رہائش کے لیے تیزی سے غیرموزوں ہوتے جارہے ہیں۔ ان میں پاکستان کا جیکب آباد اور متحدہ عرب امارات کا شہر راس الخیمہ سرِ فہرست ہیں۔

    اپنی نوعیت کے پہلے مطالعے میں ماہرین نے کہا ہے کہ اوپر بیان کردہ دونوں شہروں کا درجہ حرارت اب 24 گھنٹے میں ایک یا دو مرتبہ کم ازکم ایک یا دو گھنٹے کے لیے اس حد تک جاپہنچتا ہے جسے ٹی ڈبلیو پیمانے سے ناپا جاتا ہے۔ اس کے لیے ماہرین نے دنیا بھر کے موسمیاتی اسٹیشن کا بغور مطالعہ کیا ہے۔

    اس مظہر کو ویٹ بلب ٹمپریچر (ٹی ڈؓبلیو) کہا جاتا ہے جس میں ایک ہی ساتھ کسی علاقے میں گرمی اور نمی دونوں کو ناپا جاتا ہے۔ یہ درجہ حرارت ایسے تھرمامیٹر سے ناپا جاتا ہے جو گیلے کپڑے میں لپٹا ہوتا ہے۔ اگر اس صورتحال میں ٹی ڈبلیو 35 ہوجائے تو جسم پسینہ بہاکر خود کو ٹھنڈا نہیں رکھ سکتا ۔ لیکن اس سے کم مقدار بھی جان لیوا ثابت ہوسکتی ہے جس میں 2003 کی یورپی ہیٹ ویو قابلِ ذکر ہے۔ 17 سال قبل یورپ میں ٹی ڈبلیو صرف 28 تھا لیکن اس کے باوجود ہزاروں افراد ہلاک ہوئے تھے۔

    امریکی اور برطانوی ماہرین نے پوری دنیا میں ٹی ڈبلیو کا تجزیہ کیا ہے۔ ان کا اصرار ہے کہ 1979 کے بعد سے دنیا کے کئی خطوں یں ویٹ بلب ٹیمپریچر کے 27 اور 35 ٹی ڈبلیو پہنچنے کی شرح دوگنی ہوچکی ہے۔ جبکہ طبی ماہرین کا اصرار ہے کہ 35 ڈی ڈبلیو ایک آخری حد ہے جس کے بعد جسم کو شدید نقصان پہنچتا ہے اور موت بھی واقع ہوسکتی ہے۔

    ماہرین نے کہا ہے کہ پاکستان میں بالخصوص جیکب آباد، جبکہ خلیجِ فارس، بھارت اور شمالی امریکا کے بعض حصے ایسے ہیں جہاں پہلی مرتبہ 35 درجے سینٹی گریڈ ٹی ڈبلیو ریکارڈ کیا گیا ہے۔ یہ سب اعدادوشمار اب حتمی دریافت کے بعد سائنسی ریکارڈ کا حصہ بن چکے ہیں۔

    ’ ان تمام حدود کو پھلانگتے ہوئے ہم انسانی صحت و بقا کے خطرات کی جانب بڑھ رہے ہیں۔ اگرچہ دن میں یہ کیفیت کم وقت کے لیے ہورہی ہے لیکن پوری دنیا میں ہم اس حد کو تیزی سے عبور کررہے ہیں،‘ ٹام میتھیوز نے تبایا جو لوبورو یونیورسٹی، برطانیہ کے سائنسداں ہیں۔

    ماہرین نے خبردار کیا ہے کہ اس کیفیت سے یہ تمام علاقے ان موسمیاتی پیشگوئیوں سے کہیں تیزی سے گرم ہورہے ہیں جو عالی ماڈلنگ کے تحت کی گئی ہیں۔ ڈاکٹر میتھیوز نے اپنے بیان میں کہا ہے کہ بالخصوص پاکستان اور بھارت کے مزید کئی علاقے گرمی کی اس حد میں آسکتے ہیں ۔ انہوں نے ان علاقوں میں گھروں اور دفاتر کو ٹھنڈا رکھنے پر بطورِ خاص زور دیا۔

    دوسری جانب اس مطالعے سے الگ تھلگ ایک اور موسمیاتی ماہر اسٹیون شیروڈ کہتے ہیں کہ اگرچہ پیمائشیں درست ہیں لیکن انسانی جسم اس سے بھی زیادہ گرمی برداشت کرسکتا ہے۔ اس کا عملی مظاہرہ افریقہ اور دیگر کئی ممالک میں دیکھا جاسکتا ہے۔ اسی بنا پر یہ تحقیق عالمی آبادی کے لیے انتہائی خطرناک قرار نہیں دی جاسکتی۔
     
  2. جاسم محمد

    جاسم محمد محفلین

    مراسلے:
    20,526
  3. عبدالقیوم چوہدری

    عبدالقیوم چوہدری محفلین

    مراسلے:
    17,786
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Relaxed
    کوئی دو دہائیاں قبل موسم گرما میں ایک دن 8-10 گھنٹے کسی مجبوری کے تحت جیکب آباد میں گزارنے پڑے تھے۔ امید ہے کہ باقی بچی کھچی زندگی بھی نہیں بھولیں گے۔
     
    • غمناک غمناک × 1
  4. شمشاد خان

    شمشاد خان محفلین

    مراسلے:
    1,807
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Breezy
    لمحہ فکریہ۔
     
    • غمناک غمناک × 1
  5. جاسم محمد

    جاسم محمد محفلین

    مراسلے:
    20,526

اس صفحے کی تشہیر