کیفیتِ الم بھی ہے ذوقِ نشاطِ کار بھی --- (ماجد سلمان)

فرقان احمد نے 'پسندیدہ کلام' کی ذیل میں اس موضوع کا آغاز کیا، ‏مارچ 12, 2020

  1. فرقان احمد

    فرقان احمد محفلین

    مراسلے:
    9,982
    -------------------------------

    کیفیتِ الم بھی ہے ذوقِ نشاطِ کار بھی
    زیست بقدرِ ظرف ہے جبر بھی اختیار بھی

    ساقیء مہربان من! پھر کوئی بادہء کہن!
    عشق کو راس آ گئی تلخیء روزگار بھی

    اب میری بے نیازیاں پہونچی ہیں دیکھئے کہاں
    خاطرِ دل پہ ہے گراں نکہتِ زلفِ یار بھی

    شاہدِ بزمِ دلبراں پھر اُٹھے ناز کی کماں
    ملنے لگا ہے کچھ سکوں عشق کو زیرِ دار بھی

    کش مکشِ حیات میں نشہء مے کا ذکر کیا
    دل کو سکوں نہ دے سکا لطفِ نگاہ یار بھی

    پوچھ رہے ہو اس سے کیا لالہ و گُل کی داستاں
    بھولا نہیں جو آج تک لذتِ نوکِ خار بھی

    شام ہے شامِ بے سحر نالہ ہے وہ بھی بے اثر
    آہ! ٹھہر گئی ہے کیا گردشِ روزگار بھی

    پہلے اک آسرا تھا اب کوئی آسرا نہیں
    تم تو بجھا کے چل دیے شعلہء انتظار بھی

    اس دلِ غم پرست کا کوئی مزاج داں ہو کیا
    وجہء ملال بن گئی پرسشِ چشمِ یار بھی

    -------------------------------​
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1
    • زبردست زبردست × 1
  2. احسن جاوید

    احسن جاوید محفلین

    مراسلے:
    1
    پوچھ رہے ہو اس سے کیا لالہ و گُل کی داستاں
    بھولا نہیں جو آج تک لذتِ نوکِ خار بھی

    واہ واہ لاجواب۔
     
    • دوستانہ دوستانہ × 1

اس صفحے کی تشہیر