کیا نیب کو بند کر دینا چاہیے؟ ‎

جاسم محمد نے 'سیاست' کی ذیل میں اس موضوع کا آغاز کیا، ‏مئی 19, 2020

  1. جاسم محمد

    جاسم محمد محفلین

    مراسلے:
    20,269
    کیا نیب کو بند کر دینا چاہیے؟ ‎
    نیب حکمرانوں کے کہنے پر اس وقت قدم اٹھاتا ہے جب حکمرانوں نے سیاسی مقاصد حاصل کرنے ہوں۔ اگر اسے سیاسی انجینئرنگ نہیں کہتے تو پھر کسے کہتے ہیں؟
    عبدالقیوم کنڈی سیاست دان aqkkundi@
    اتوار 17 مئی 2020 6:45

    [​IMG]
    نیب جس مقصد کے لیے بنا اسے حاصل کرنے میں مکمل ناکام رہا (اے ایف پی)

    میں پچھلے دس، بارہ سال سے قومی احتساب بیورو (نیب) کو بند کرنے کی بات کر رہا ہوں، جس کی بنیادی وجہ یہ ہے کہ یہ ادارہ جس مقصد کے لیے بنا اسے حاصل کرنے میں مکمل ناکام رہا۔

    پہلے کرپشن چند کروڑ روپوں کی ہوتی تھی لیکن اب بات اربوں تک چلی گئی ہے۔ پچھلے دنوں تحقیقاتی صحافیوں حامد میر اور رؤف کلاسرا نے بھی اس قسم کے واقعات اپنے کالموں میں لکھے، جس سے ظاہر ہوتا ہے کہ نیب حکمرانوں کے کہنے پر قدم اٹھاتا ہے اور انہی کے کہنے پر فائلیں بند کر دیتا ہے۔ ان اقدامات کو ایسے وقت پر کیا جاتا ہے جن سے سیاسی مقاصد حاصل کیے جا سکیں۔ اگر اسے سیاسی انجینئرنگ نہیں کہتے تو پھر کسے کہتے ہیں؟

    میں نے نیب کو بند کرنے کی بات ضرور کی ہے مگر یہ نہیں کہا کہ کرپشن کو کھلی چھٹی دے دینی چاہیے۔ حقیقت یہ ہے کہ پاکستان میں ہر شہری کسی نہ کسی صورت کرپشن میں ملوث ہے۔ ہم کرپشن کو نہ صرف قبول کرتے ہیں بلکہ کچھ صورتوں میں اسے جائز بھی سمجھتے ہیں۔ ہمارے معاشرے میں اگر کوئی ذاتی مفاد کے لیے قوانین توڑے اور اخلاقیات کو چھوڑ دے تو ایسے شخص کو ہم ہوشیار، چالاک اور کامیاب سمجھتے ہیں۔

    سیاست میں الیکٹبل وہی لوگ ہیں جو چالاکیوں سے دھاندلی کرنا جانتے ہیں جبکہ وہ شخص جو ایمان داری، اصول اور قانون کی پاسداری کی بات کرے تو اسے بیوقوف اور سادہ خیال کرتے ہیں۔ اگر ہم کرپشن کو واقعی ختم کرنا چاہتے ہیں تو ہمیں اپنے ذہنی رجہانات اور ثقافت کو بدلنا ہوگا۔ یہ مقصد صرف دور رس لائحہ عمل سے حاصل ہو سکتا ہے اور سطحی اقدامات سے کرپشن ختم نہیں ہو سکتی۔ ہمیں دوسری قوموں کی تاریخ سے بھی اس معاملے میں سبق سیکھنا چاہیے۔

    بدعنوانی کسی حد تک ہماری ثقافت کا حصہ بن چکی ہے۔ اس سے نجات پانے کے لیے ہمیں آنے والی نسل کی کردار سازی پر نئے سرے سے توجہ دینی ہوگی۔ تعلیم کے ساتھ تربیت کی طرف بھی اتنی ہی توجہ اور وسائل لگانے پڑیں گے۔

    استادوں کے انتخاب میں انتہائی احتیاط کرنی ہوگی اور والدین کو ان کے ساتھ مل کر تعلیم کے ساتھ تربیتی نتائج کے معیار کا تعین بھی کرنا پڑے گا۔ اگر ہم آج سنجیدگی سے اس کام پر توجہ دیں تو کم از کم 30 سال تک اس پر کام کرنا ہوگا تب کہیں جا کر ایک بہتر معاشرہ بن پائے گا۔

    اس کے ساتھ موجودہ کرپشن کو ختم کرنے کے لیے بھی چند اقدامات کرنے ہوں گے۔ موجودہ سماجی خرابی کی ذمہ داری جج، جرنیل، بیوروکریٹ اور سیاست دان سب پر آتی ہے۔ لیکن قوموں کی تعمیر میں پہلا قدم سیاست دانوں کو اٹھانا پڑتا ہے۔ نیب کو ختم کرنے کے بعد چند اقدامات اٹھانے پڑیں گے۔ سب سے پہلے تو یہ تعین کرنا ہوگا کہ کس ادارے کے ذمہ کرپشن کی پکڑ لگائی جائے۔

    میری نظر میں ایف آئی اے اس کام کے لیے ایک موضوع ادارہ ہے اور ان جرائم کو پکڑنے اور سزا دلوانے میں اہم کردار ادا کر سکتا ہے۔ لیکن یہ صرف اس وقت ہو سکتا ہے جب اس ادارے کو مکمل آزادی اور خود مختاری دی جائے۔ قابل افسروں کو اس میں تعینات کیا جائے اور سیاست دانوں کی مداخلت روکی جائے۔ اس کے لیے نئی قانون سازی کرنا پڑے گی۔

    وزارتِ قانون اور اٹارنی جنرل کو اچھے پراسیکیوٹر رکھنے پڑیں گے جو تحقیقاتی افسروں کے مکمل تعاون سے کیس تیار کریں۔ جب تک کیس عدالت میں پیش کرنے کے قابل نہ ہو اس وقت تک تمام تحقیق کو خفیہ رکھا جائے۔ عدالتی نظام میں بھی تبدیلی کی ضرورت ہوگی تاکہ ایک دفعہ کیس کی سماعت شروع ہو تو اسے جلد از جلد مکمل کیا جائے۔

    سیاست دانوں کو آگے بڑھ کر ملک کے نظام کو ٹھیک کرنا ہے۔ اس لیے انہیں اپنا احتساب خود کرنا ہوگا۔ پارلیمان میں ایک اخلاقی اقدار کی کمیٹی ہونی چاہیے جو اپنے ممبران اور حکومت کے وزیروں پر اقتدار اور اختیارات کے بےجا استعمال اور ذاتی فوائد حاصل کرنے پر کارروائی کرے اور انہیں سزا دے جس میں پارلیمان سے بےدخلی بھی ہو سکتی ہے۔

    اس کے علاوہ پارلیمان کی پبلک اکاؤنٹس کمیٹی کو فعال کرنے کی ضرورت ہے۔ آڈیٹر جنرل آف پاکستان کا ادارہ اس کمیٹی کے زیر اثر ہونا چاہیے تاکہ حکومتی اداروں میں بےقاعدگی اور کرپشن پر نظر رکھے۔

    اس کے علاوہ سیاسی پارٹیوں کو اپنے اندر پارٹی رہنماؤں اور عہدے داروں کا بھی احتساب کرنا ہوگا۔ ہماری سیاسی پارٹیاں اور ان کے ارکان اپنی پارٹیوں کے اندر موجود کرپشن پر نہ صرف آواز نہیں اٹھاتے بلکہ اس کا دفاع کرتے ہیں۔ کامیاب جمہوریتوں میں جب کسی اہم عہدے دار کو کرپشن یا طاقت کے بےجا استعمال میں ملوث پایا جاتا ہے تو پارٹی خود انہیں عہدہ چھوڑنے پر مجبور کرتی ہے۔

    ہمارے یہاں ایسی کوئی روایت نہیں۔ احسن اقبال اور شاہد خاقان عباسی اپنے پارٹی کے صدر شہباز شریف سے پوچھنے کو تیار نہیں کہ انہوں نے ایک غیرملکی شہری سے کئی لاکھ پاؤنڈز کا تحفہ کیوں لیا؟ اسی طرح پیپلز پارٹی کے لوگ زرداری صاحب سے پوچھنے کو تیار نہیں ہیں کہ بحریہ ٹاؤن میں مہنگا مکان پاکستان کے ایک بڑے بلڈر سے کیوں لیا؟

    میں اور کچھ دوسرے لوگ جب تک پی ٹی آئی میں رہے اس وقت تک عمران خان کے غیرآئینی اقدامات اور کرپٹ لوگوں کی سپورٹ پر آواز اٹھاتے رہے۔ آٹھ سال میں مجھے کوئی واقع بھی ایسا یاد نہیں جب عمران خان کرپشن کرنے والوں کو سزا دے سکے ہوں۔ اس قسم کے بہت سے واقعات ہیں جب وہ اس بات کی تعریف کرتے ہوئے پائے گئے کہ کسی نے کتنی چالاکی سے دولت کمائی۔

    خیبر پختونخوا کے سینیٹ الیکشن میں جن ایم پی ایز کو انہوں نے نکالا وہ صرف سیاسی ڈرامہ تھا۔ وہ کسی ایک ایم پی اے پر بھی ووٹ بیچنا ثابت نہ کر سکے جبکہ اصل وجہ یہ تھی کہ اگلے الیکشن میں انہیں ٹکٹ دینا نہیں چاہتے تھے۔ اور اگر انہوں نے واقعی ووٹ بیچے تو خریدار کو انہوں نے نہ کوئی سزا دی اور نہ ان کے خلاف کوئی اقدام کیا۔

    خیبر پختونخوا کے احتساب ادارے کو عمران خان نے اس وقت بند کیا جب وہ چند اہم وزرا کے خلاف اقدامات کرنے والے تھے۔ سیاسی پارٹیوں کو اپنا رویہ بدلنا ہوگا۔ اس بات پر قانون سازی کرنی ہوگی کہ اگر کسی پارٹی کا پارلیمانی رکن کرپٹ قرار پائے تو اس شخص کو ٹکٹ دینے والوں پر بھی کچھ جرمانہ ہونا چاہیے۔ اگر کوئی پارٹی متعدد بار کرپشن میں ملوث پائی جائے تو اس کی رجسٹریشن بھی منسوخ کی جانی چاہیے۔

    میں آپ کو اپنا فیصلہ پہلے ہی سنا چکا ہوں۔ موجودہ جمہوریہ اور اس کی ساخت کچھ اس طرح کی ہے کہ کرپشن کو فروغ ملتا ہے۔ ہمیں جلد از جلد قومی سیاسی مذاکرات شروع کرنے ہوں گے تاکہ نئی جمہوریہ قائم ہو۔ فوج ہمیشہ یہ دعویٰ کرتی ہے کہ اس قوم کو متحد اور مستحکم رکھنے میں اس کا کلیدی کردار ہے جو کسی حد تک ٹھیک بھی ہے۔

    میں اس سال کے اواخر میں جب سیاسی پارٹیوں سے ملنا شروع کروں گا تو اس وقت فوج کے سربراہ سے بھی ملنے کا ارادہ رکھتا ہوں۔ میں ان سے دو باتیں ضرور پوچھوں گا۔ کیا فوج کے ماضی کے اقدامات سے ملک میں استحکام پیدا ہوا اور اچھی جمہوریت پروان چڑھی؟ کیا ان کی سپورٹ سے جو سیاست دان اس ملک پر حاکم ہوئے وہ ایمان دار اور قابل تھے؟

    قوم کو ان سوالات کے جوابات معلوم ہیں اور یہ فوج کے لیے لمحہ فکریہ ہونا چاہیے۔
     
  2. جاسم محمد

    جاسم محمد محفلین

    مراسلے:
    20,269
    19 مئی ، 2020
    سہیل وڑائچ
    حمزہ قید میں کیوں؟
    [​IMG]
    فوٹو: فائل

    سال سے زائد ہو گیا نہ ریفرنس بنا نہ الزامات سامنے آئے، مسئلہ گمبھیر ہو گیا، ضروری ہے کہ فتویٰ لیا جائے۔ کیا فرماتے ہیں علمائے دین و سیاست بیچ اس مسئلے کے کہ حمزہ شہباز شریف قید میں کیوں ہے؟

    مزاحمتی تایا جان سابق وزیراعظم نواز شریف جیلوں کے تالے پگھلا کر علاج کے لیے لندن میں مقیم ہیں، مزاحمتی بیانیے کی سب سے بڑی شارح مریم نواز ضمانت پر رہا ہو کر جاتی امرا میں خاموشی سے روزے رکھ رہی ہیں، دس سال وزیراعلیٰ رہنے والے حمزہ کے والد شہباز شریف بیرونِ ملک بھی ہو آئے، فی الحال آزاد ہیں۔

    خواجہ سعد رفیق اور سلمان رفیق کی ضمانت ہو گئی، شاہد خاقان عباسی باہر آگئے اور تو اور رانا ثناء اللہ بھی زندان سے زندہ سلامت نکل آئے مگر حمزہ سال بھر سے مسلسل قید میں ہے۔ اربابِ بست و کشاد سے پوچھنا یہ تھا کہ حمزہ شہباز شریف کیا مزاحمتی سیاست کا سرخیل تھا؟ کیا وہ اینٹی اسٹیبلشمنٹ تھا؟ کیا اس نے کبھی احتجاجی سیاست اور جارحانہ انداز اپنایا؟ اگر نہیں تو پھر کیا وہ فرینڈلی فائر کی زد میں ہے؟

    اپنے والد شہباز شریف کے دس سالہ دورِ وزارتِ اعلیٰ میں حمزہ پنجاب کے سیاہ و سفید کا مالک رہا، 8کلب روڈ پر وزیراعلیٰ سیکریٹریٹ کے گرائونڈ فلور پر اس کا شاندار آفس تھا۔

    ہونا تو یہ چاہئے تھا کہ اس کا دس سالہ کچا چٹھا سامنے لایا جاتا بتایا جاتا کہ اس نے کس کس طرح لوٹا مگر ابھی تک کسی ٹھیکے، تبادلے، تقرری یا کمیشن میں اس کا نام تک نہیں آیا۔ یہاں سوال یہ پیدا ہوتا ہے کہ یا تو وفاقی حکومت، نیب، ریاستی ادارے اور صوبائی اینٹی کرپشن سب حمزہ کی جیب میں ہیں یا سب اس سے ملے ہوئے ہیں۔ حمزہ نے آخر کیا کاریگری دکھائی ہے کہ دس سال سیاہ و سفید کا مالک ہونے کے باوجود اس کا کسی سرکاری ڈیل میں حصہ نہیں پکڑا گیا۔

    کسی فائل پر اس کے دستخط نہیں، کسی آرڈر پر اس کا ذکر نہیں، ضرور اس معاملے میں کوئی گڑبڑ ہے۔ اگر حمزہ کا کوئی جرم نہیں پکڑا گیا توابھی تک وہ جیل میں کیوں ہے؟

    نوازی اور شہبازی سیاست کے الگ الگ اہداف اور الگ ہی فائدے اور نقصان ہیں، نوازی جیل میں جاتے ہیں تو مزاحمتی نعرے لگاتے ہیں، سینہ تان کر چیلنج کرتے ہیں، دوسری طرف شہبازی مفاہمتی سیاست کے قائل ہونے کی وجہ سے جیل جائیں یا انہیں مار پڑے وہ مزاحمتی نعرے نہیں لگا سکتے، یہی حمزہ شہباز کا المیہ ہے۔

    سال سے اوپر ہو گیا وہ جیل میں بند ہے مگر اب بھی وہ مزاحمتی نہیں مفاہمتی ہی کہلاتا ہے۔ اپوزیشن کی سیاست میں مفاہمتی کبھی فائدے میں نہیں رہتا، حمزہ کو فائدہ کیسے ہونا تھا؟

    حالت یہ ہے کہ کسی ٹاک شو یا پریس کانفرنس میں حمزہ شہباز شریف کی جیل کا ذکر نہیں ہوتا حد تو یہ ہے کہ نون لیگی بھی یہ تکلف نہیں کرتے کہ حمزہ کے لیے آواز اٹھائیں، شروع شروع میں حمزہ کی پیشی پر عدالت میں گہما گہمی ہوتی تھی، متوالے نعرے لگاتے تھے، اکٹھے ہوتے تھے مگر جیل لمبی ہوتی گئی، تاریخ پر تاریخ پڑتی گئی اور ہجوم کم ہوتا گیا۔

    حالیہ مہینوں میں یوٹیوبر بلال شفیق نے ایک دلچسپ سیاسی وڈیو اپ لوڈ کی جس میں نون لیگ کے چند ورکرز گھر بیٹھے حمزہ حمزہ کا الاپ کر رہے ہیں۔ گویا وہ ظاہری یا اصلی طور پر یہ پیغام دینا چاہتے تھے کہ حمزہ نون لیگی ورکرز کے دلوں میں موجود ہے۔

    اس وڈیو کے وائرل ہونے کے باوجود حمزہ شہباز کی جیل کا سیاسی تاثر نہیں بن سکا۔ ہاں! اگر حمزہ مزاحمتی کے طور پرجیل میں ہوتا تو اس کا سیاسی قد نون لیگ کے کئی بونوں سے بہت اونچا ہو چکا ہوتا مگر مفاہمتی حمزہ جیل جا کر بھی مزاحمتی اور باغی کے طور پر قبول نہیں ہو سکا۔

    سیاست بڑی بےرحم ہوتی ہے وہ ذاتی غم اور خوشی سے لاتعلق ہوتی ہے، حمزہ اب 45سال کا ہے، شادی کے بعد 20سال کے طویل انتظار کے بعد اس کے ہاں پہلی اولاد (بیٹی) پیدا ہوئی ہے مگر جیل میں ہونے کی وجہ سے وہ حسرت و یاس سے اسے یاد تو کرتا ہے مگر اسے اٹھا کر یا کھلا کر نہال نہیں ہو پاتا۔

    پچھلے دنوں بیٹی نے اسے بابا کہہ کر پکارا تو اس کی خوشی کا کوئی ٹھکانہ نہ رہا۔ یہ دن تو اس کے اپنی اکلوتی بچی کے ساتھ کھیلنے کے تھے مگر وہ جیل کے بستر پر لیٹ کر چھت کو گھورتے رہنے پر مجبور ہے۔

    حیران کن بات یہ ہے کہ شریف خاندان بھی اس کی رہائی کے لئے بہت زیادہ متحرک، متفکر اور بے چین نظر نہیں آتا۔ یوں لگتا ہے کہ حمزہ ایک بار پھر تاوان کے طور پر جیل میں بند ہے، بالکل اسی طرح جیسے پہلے بھی جدہ جاتے ہوئے اہل خاندان اسے پاکستان میں بطورِ ضمانت چھوڑ گئے تھے۔ خود جلا وطن ہوگئے تھے اور حمزہ پاکستان میں رہ کر قسطیں ادا کرتا رہا۔

    حمزہ کی حالیہ قید آنے والے دنوں میں مزاحمت کی تاریخ کا حصہ نہیں بن سکے گی کیونکہ مورخ حمزہ اور اسکے والد شہباز شریف کے مفاہمانہ بیانیہ کی وجہ سے اس کی جیل کو بھی COLLATERAL DAMAGEیعنی اجتماعی نقصان قرار دیدے گا۔ یہ حمزہ اور شہباز کیلئے اچھا شگون نہ ہوگا، دکھ درد بھی اٹھائیں گے مگر تمغہ نہ ملے گا ضرورت اس بات کی ہے کہ وہ مفاہمانہ سیاست کے بیانیے میں موجود ابہام کو دور کریں، مسئلہ یہ ہے بغاوت میں احتیاط کی ضرورت نہیں ہوتی، آپ کھل کر مزاحمت کریں۔

    گلا پھاڑ کر نعرے لگائیں، جیل جائیں، اس کے جواب میں تشدد ہو یا ظلم، سب کا سیاسی فائدہ ملتا ہے۔ لیکن اگر مفاہمانہ سیاست کریںصلے میں اقتدار تو کیا ملتا بلکہ الٹا آپ کے خلاف مقدمے بنیں، آپ جیلوں میں بند ہوں۔

    تو ایسے میں یا تو آپ کے بیانیے میں خرابی ہے یا پھر آپ کے بیانیے کی گونج ان ایوانوں تک نہیں پہنچی جہاں پہنچنی چاہئے۔ کہیں نہ کہیں تو کوئی مسئلہ ہے۔
     
  3. جاسم محمد

    جاسم محمد محفلین

    مراسلے:
    20,269
    بالکل۔ منی لانڈرنگ پر مشتمل ٹی ٹیوں میں مسئلہ ہے۔
     
  4. محمد تابش صدیقی

    محمد تابش صدیقی منتظم

    مراسلے:
    25,098
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Breezy
    آرٹیکل تو نہیں پڑھ سکا۔ البتہ عنوان کا جواب یہی ہے کہ بالکل بند کر دینا چاہیے۔
    ایمانداروں کی حکومت ہوتے ہوئے نیب کا کام ہی کیا رہ گیا ہے؟
     
    • پر مزاح پر مزاح × 3
    • متفق متفق × 1
  5. محمداحمد

    محمداحمد لائبریرین

    مراسلے:
    22,240
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Amazed
    پڑھا ہوتا تو ہم آپ سے خلاصہ پوچھ لیتے۔ :)
     
    • پر مزاح پر مزاح × 2
  6. محمد خلیل الرحمٰن

    محمد خلیل الرحمٰن مدیر

    مراسلے:
    9,146
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Festive
    مدینہ کی ریاست قسم دوم
     
    • پر مزاح پر مزاح × 5
  7. جاسم محمد

    جاسم محمد محفلین

    مراسلے:
    20,269
    نیب کی 20 سالہ ناقص ترین کارکردگی کو دیکھتے ہوئے اصولا اسے فی الفور بند کر دینا چاہئے۔ البتہ جب تک کوئی متبادل احتساب کا ادارہ وجود میں نہیں آجاتا ، اسی مردہ گھوڑے میں جان ڈال کر کام چلانا پڑے گا۔
     

اس صفحے کی تشہیر