نبی اکرمﷺ نے مباہلے کا چیلنج کس کو دیا تھا؟

ابن آدم نے 'اسلام اور عصر حاضر' کی ذیل میں اس موضوع کا آغاز کیا، ‏مئی 10, 2020

  1. ابن آدم

    ابن آدم محفلین

    مراسلے:
    834
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Busy
    بہت شکریہ یہ بتانے کا کہ آپ کو شروع سے ہی بنے بنائے نوالے کھانے کی عادت ہے اس لئے آپ خود سے کچھ سوچ نہیں سکتے. اگر سوچ سکتے ہوتے تو کم از کم اس ریفرنس کو دینے سے پہلے خود سے ہی سوچ لیتے کہ یہ کہہ کیا رہا ہے.

    پہلی بات جو میں نے پوچھی تھی کہ کہاں پر وہ لسٹ ہے جہاں پر تمام منسوخ آیتیں درج ہیں؟ اور آیتیں منسوخ ہو ہی گئی تھیں تو ان کو صرف پڑھ کر نیکیاں کمانے کے لئے قرآن میں رہنے دیا گیا ہے؟ کیونکہ اگر ایک حکم کے خلاف الله نے دوسرا حکم اتارا اور پہلا حکم بھی رہنے دیا تو کیا یہ قرآن میں اختلاف نہیں آ گیا، جب کہ الله نے کہا ہے کہ قرآن میں کوئی اختلاف نہیں ہے؟

    اب آتے ہیں آپ نے جو تفسیر دی ہے. کاش آپ نے خود سے پڑھ کر سمجھنے کی کوشش کی ہوتی تو آپ اس کا حوالہ نہ دیتے.

    پہلی مثال میں جو آیت دی ہے جو منسوخ ہوئی ہے وہ ہے، سوره الذاریات کی ٥٦
    اور میں نے جنوں اور انسانوں کو اس لئے پیدا کیا ہے کہ میری عبادت کریں ﴿٥٦﴾

    ان کے بقول یہ آیت اب منسوخ ہو گئی ہے اور اس کی جگہ سوره ھود کی آیت ١١٨، ١١٩ ہے

    اور اگر تمہارا پروردگار چاہتا تو تمام لوگوں کو ایک ہی جماعت کردیتا لیکن وہ ہمیشہ اختلاف کرتے رہیں گے ﴿۱۱۸﴾ مگر جن پر تمہارا پروردگار رحم کرے۔ اور اسی لیے اس نے ان کو پیدا کیا ہے اور تمہارے پروردگار کا قول پورا ہوگیا کہ میں دوزخ کو جنوں اور انسانوں سب سے بھر دوں گا ﴿۱۱۹﴾

    اب آپ ہی سمجھا دیں کہ پہلی آیت جو کہ تخلیق کا مقصد بتا رہی ہے وہ ایک ایسی آیت جو کہ لوگوں کے اختلافات کا بتا رہی ہے اور لوگوں کی حقیقت عیاں کر رہی ہے اس سے کیسے منسوخ ہو سکتی ہے؟ یہ تو ایسے ہی کہ یونیورسٹی کی مشن سٹیٹمنٹ کہے کہ طالب علموں کو فائنل ائیر پروجیکٹ اس لئے دیا جاتا ہے کہ جو کچھ انھوں نے چار سال میں سیکھا ہے اس کو وہ عملی شکل میں بنا لیں اور پھر ایک جگہ یونیورسٹی کہے کہ اکثر طالب علم فائنل ائیر پروجیکٹ دوسروں سے بنوا کر دیتے ہیں اس لئے ان کو فیل کر دیا جاتا ہے. تو یہ دونوں سٹیٹمنٹ غلط نہیں اور نہ ہی ایک دوسرے کو منسوخ کریں گی.

    ہر آیت جو مثال کے طور پر دی ہے وہ مضحکہ خیز ہی ہے لیکن سب سے مزے کی بات اور جس وہ یہ ہے کہ صفحہ ٢٨ پر انھوں نے شیطانی آیات کی تلاوت کی روایت کا حوالہ دیا ہے. جب کہ اگر آپ کو معلوم ہو کہ سلمان رشدی کی شیطانی آیات کی کتاب پر سب سے سے پہلے ١٩٨٩ میں خومینی نے کفر کا فتویٰ لگا کر اس واجب القتل قرار دیا تھا. اب مجھے کوئی سمجھا سکتا ہے کہ شیطانی آیات کی روایت پر ایک غیر مذہبی کتاب لکھنے پر تو قتل کا فتویٰ ہے لیکن اس روایت سے ناسخ منسوخ کے لئے دلیل لینا حلال ہی نہیں بلکہ بہت زبردست کام ہے؟ جو بھی یہ لاجک سمجھا دے گا میں اس کا بیحد شکرگزار ہوں گا.

    یہ آپ کے لئے نہیں لکھا کیونکہ آپ بنے ہوئے نوالے کھاتے ہیں اس لئے آپ کو پتہ ہی نہیں چلتا کہ آپ کو کوئی کون کون سا باسی کھانا کھلا گیا ہے یہ دوسرے لوگوں کے لئے لکھا ہے جو شاید آپ کی موٹی تفسیر کا نام دیکھ کر کچھ مرعوب ہو گئے ہوں لیکن ان کے پاس اس تفسیر کو کھول کر پڑھنے کا وقت نہ ہو تو ان کے لئے خلاصہ دے دیا ہے کہ اس تفسیر پر امام خومینی کے فتویٰ کی روشنی میں (اور یہ تفسیر ہے بھی شیعہ امام کی) قتل کا فتویٰ لگ جاتا اگر امام خومینی اس کی اشاعت پر زندہ ہوتے.
     
    • مضحکہ خیز مضحکہ خیز × 2
  2. سید ذیشان

    سید ذیشان محفلین

    مراسلے:
    7,370
    موڈ:
    Asleep
    تمھاری باقی بکواس پر تو میں کچھ نہیں کہوں گا۔ لیکن جو آخری والا جھوٹ لکھا ہے اس پر تو داد بنتی ہے کہ تفسیرالمیزان کے مصنف کا انتقال 1982 میں ہوا تھا اور خمینی (خومینی نہیں) کا انتقال 1989 میں ہوا۔ اور تفسیر المیزان کا طریقہ ہی قرآن سے قرآن کی تفسیر ہے (تفیسیر المیزان کا پیش لفظ: تفسیر القرآن در قرآن) اس میں شیطانی آیات کی روایت کا موجود ہونا، الا یہ کہ اس پر جرح کی گئی ہو، اتنی مضحکہ خیز بات ہے کہ کبھی غلطی سے بھی یہ بات کسی اور محفل میں نہ کر دینا کہ اس سے فورا ہی اپنی جہالت کو ثابت کر دو گے۔
     
    • متفق متفق × 1
  3. ابن آدم

    ابن آدم محفلین

    مراسلے:
    834
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Busy
    جناب آپ نے تو خود ہی پہلے بتا دیا تھا کہ آپ کو نوالے کھانے کی عادت ہے تو آپ اس تفسیر کو پڑھتے اور سوچتے تو آپ کبھی اس کو شئیر نہ کرتے. باقی شیعوں کا تقیہ ایک پرانا ہتھیار اور دین کا لازمی حصہ ہے تو اس پر ہمیں حیرت بھی نہیں ہے.
    The Shi’a concept of Taqiyyah
     
    • نا پسندیدہ نا پسندیدہ × 3
    • مضحکہ خیز مضحکہ خیز × 2
  4. ابو ہاشم

    ابو ہاشم محفلین

    مراسلے:
    882
    آپ کے مطابق قرآن فہمی کے کیا کیا اصول ہیں؟
     
    • دوستانہ دوستانہ × 1
    • متفق متفق × 1
  5. ابن آدم

    ابن آدم محفلین

    مراسلے:
    834
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Busy
    بہت شکریہ تحریر پڑھنے کا اور سوچنے کا

    یہ سوال بہت اہم اور بنیادی نوعیت کا ہے لیکن اس کا جواب بھی طویل اور قابل بحث ہے. لیکن میں اپنی مختصر رائے قرآن کو سمجھنے سے متعلق دوں گا.

    میرے نزدیک قرآن کی سورت ایک جزو ہے. اور ہر سورت ایک بنیادی مرکزی نقطۂ کے گرد گھومتی ہے تو پہلے سورت کو پڑھ کر اس کا بنیادی نقطۂ سمجھنا چاہیے. اور اسی سے پھر آیتوں کا ربط ڈھونڈنا چاہیے کہ یہ مثال کس تناظر میں آ رہی ہے یا یہ مثال یہاں پر کس لئے دی گئی ہے.

    پھر ایک سورت ایک مخصوص حالات میں نازل ہو رہی ہوتی ہے اور ان حالات کا تعین سوره کی آیات ہی کر دیتی ہیں، مدنی سورتوں میں یہ بہت آسان ہے کہ آپ کو کسی غزوہ سے معلوم ہو سکتا ہے کہ یہ سورہ کس زمانے کی ہے اور اس وقت کے حالات اور واقعات آپ کو مل جاتے ہیں اسی سے سورت کے مخاطبین کا بھی اندازہ ہو جاتا ہے، مکی دور کی سورتوں میں یہ تھوڑا سا مشکل لگتا ہے کہ لیکن اس میں بھی اشارے ملتے ہیں جیسے رومیوں اور ساسانیوں کے درمیان جنگ کا ذکر سوره روم میں آیا تو آپ دیکھ سکتے ہیں کہ وہ کس زمانے کی ہے.

    تیسری چیز سورتوں میں اپس کا ربط ہے. بہت سے احکامات جیسے نماز ہے، حج ہے، شراب کی حرمت، شادی بیاہ کے معاملات، طلاق یہ تدریجاً دے گئے ہیں. لیکن ان کے علاوہ دوسروں موضوعات پر بھی بات تدریجاً کی گئی ہے کیونکہ جب قرآن غیر مسلموں کے سامنے پڑھا جاتا اور ان کو دعوت دی جاتی تو وہ اپنے عقائد کی بنیاد پر اس پر سوال کرتے تو اس پر پھر ان کو جواب ملتا، جب جواب ملتا تو کچھ کی تو تسلی ہو جاتی ہو گی لیکن اکثر پھر ایک اور سوال لے آتے تو پھر ان کو اس کا جواب ملتا ہے تو اس سے انسان اندازہ لگا سکتا ہے کہ کونسی سورت اس سے سورت سے پہلے ائی تھا اور کونسی بعد میں اور یہ بات اگر معلوم ہو جائے تو یہ کسی بھی سورت کو سمجھنے میں بہت مدد دیتی ہے

    الله ہم سب کو قرآن پر غور و فکر اور اس پر عمل کی توفیق دے. امین
     
    • معلوماتی معلوماتی × 1
    • ناقص املا ناقص املا × 1
  6. ابو ہاشم

    ابو ہاشم محفلین

    مراسلے:
    882
    یہ ایک طریقہ ہو گیا شانِ نزول معلوم کرنے کا۔

    اور یہ
    یہ ایک طریقہ ہو گیا سورتوں کی ترتیب معلوم کرنے کا۔

    اور یہ
    یہ ایک اصول ہو گیا۔ اِسی کو آپ نے اوپر نظمِ قرآن کہا ہے۔
    اس کے علاوہ مزید اصول؟ یعنی قرآن فہمی کے اصولوں کا پورا سیٹ بتایا جائے تب ہی کسی مسئلے پر صحیح مزاکرہ ہو سکتا ہے۔
     
    • معلوماتی معلوماتی × 1
  7. ابن آدم

    ابن آدم محفلین

    مراسلے:
    834
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Busy
    جناب نہ میں یہ دعوی کر رہا ہوں کہ میں قرآن کو پورا سمجھ چکا ہوں اور نہ ہی میں یہ کہہ رہا ہوں کہ میری بات حتمی بات ہے..

    الله نے قرآن کی صفات میں یہ بھی کہا ہے کہ ہم نے اس کو عربی مبین یعنی واضح یا روشن عربی میں نازل فرمایا. اب اس کا کیا مطلب ہوا؟ اگر سچ پوچھیں میں تو یہ اس کا ہی پورا مطلب نہیں سمجھ سکا لیکن عربی زبان کو اگر بیان کیا گیا ہے تو اس کا مطلب ہے کہ اس زبان کی کچھ خاص باتیں ہوں گی. مجھے جو اس زبان کو ممتاز کرنے والی چیزیں لگی ہیں وہ یہ ہیں کہ اس میں ہر لفظ کی بنیاد ٣ حروف ہوتے ہیں. اس میں ایک دو اور دو سے زیادہ کے لئے علیحدہ علیحدہ کلمات ہیں. باقی اس کو سمجھنے کے لئے کیا اصول ہونے چاہیے اور قرآن فہمی کے کیا اصول ہیں اس پر کتابیں لکھی جا سکتی ہیں لیکن میرا نظریہ ہے کہ آپ قرآن کھول کر سمجھنے کی کوشش کریں، غور و فکر کریں جس کی قرآن دعوت دیتا ہے تو الله آپ کے لئے آسانی پیدا کر دیتا ہے.

    باقی نہ ہی میرا مذاکرے کا کوئی ارادہ ہے اور نہ ہی مجھے اس کا کوئی شوق ہے. میں نے تو کسی اور دوست کو بھی یہ بات کی تھی کہ مجھے آپ سے منوانا نہیں. میں نے اپنی بات سامنے رکھ دی ہے آپ کو اچھی لگے تو مان لیں، نہ پسند آئے تو بھی مجھے کوئی اعتراض نہیں بلکہ آپ کو پورا حق ہے. اگر آپ کا کوئی اصلی سوال ہے یا کوئی رائے ہے تو میں اس کو سمجھنے اور جواب ممکن ہوا تو دینے کی پوری کوشش کروں گا. باقی یہ اصول بھی میں نے دوسروں سے ہی لئے ہیں. سورتوں میں ربط امین اصلاحی صاحب کا ہی نظریہ ہے، سورتوں کا دور نزول مودودی صاحب اپنی تفسیر میں لکھتے ہیں تو میں ان کے مختلف سورتوں کے بیان کیے ہوئے دور نزول سے اختلاف کرتا ہوں لیکن ان کے اصول مانتا ہوں. تو اگر کوئی اچھی بات دوسروں میں مجھے ملی ہے تو مجھے اس کو اپنانے میں کبھی کوئی ہچکچاہٹ نہیں ہوئی کیونکہ یہ آخرت کا معاملہ ہے تو اس میں میں اپنی آنا کو بھیچ میں نہیں رکھنا چاہتا.

    باقی بحث برائے بحث کوئی پسندہدہ چیز نہیں تو اس سے احتیاط برتنی چاہیے.

    واسلام
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1
  8. ابن آدم

    ابن آدم محفلین

    مراسلے:
    834
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Busy
    جناب آپ کو میری تحریر اور باقی احباب کو دیے گئے جوابات سے اس ویڈیو کے بارے میں میری رائے مل گئی ہو گی. اگر کوئی خاص نقطۂ رہ گیا ہے تو ضرور بتا دیں.

    مزید یہ کہ میری صاحب ویڈیو کے بارے میں کیا رائے ہے وہ بھی آپ کو میری دوسری تحریر سے مل گئی ہو گی.
     
    • معلوماتی معلوماتی × 1

اس صفحے کی تشہیر