میں سچ کہوں پس دیوار جھوٹ بولتے ہیں ۔۔۔ عمران عامی

سین خے نے 'پسندیدہ کلام' کی ذیل میں اس موضوع کا آغاز کیا، ‏جون 11, 2019

  1. سین خے

    سین خے محفلین

    مراسلے:
    1,674
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Cool
    میں سچ کہوں پس دیوار جھوٹ بولتے ہیں

    میں سچ کہوں پس دیوار جھوٹ بولتے ہیں
    مرے خلاف مرے یار جھوٹ بولتے ہیں

    ملی ہے جب سے انہیں بولنے کی آزادی
    تمام شہر کے اخبار جھوٹ بولتے ہیں

    میں مر چکا ہوں مجھے کیوں یقیں نہیں آتا
    تو کیا یہ میرے عزا دار جھوٹ بولتے ہیں

    یہ شہر عشق بہت جلد اجڑنے والا ہے
    دکان دار و خریدار جھوٹ بولتے ہیں

    بتا رہی ہے یہ تقریب منبر و محراب
    کہ متقی و ریاکار جھوٹ بولتے ہیں

    قدم قدم پہ نئی داستاں سناتے لوگ
    قدم قدم پہ کئی بار جھوٹ بولتے ہیں

    میں سوچتا ہوں کہ دم لیں تو میں انہیں ٹوکوں
    مگر یہ لوگ لگاتار جھوٹ بولتے ہیں

    ہمارے شہر میں عامیؔ منافقت ہے بہت
    مکین کیا در و دیوار جھوٹ بولتے ہیں

    عمران عامیؔ
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 2

اس صفحے کی تشہیر