1. احباب کو اردو ویب کے سالانہ اخراجات کی مد میں تعاون کی دعوت دی جاتی ہے۔ مزید تفصیلات ملاحظہ فرمائیں!

    ہدف: $500
    $418.00
    اعلان ختم کریں

نصیر ترابی غزل : وہ بے وفا ہے تو کیا مت کہو بُرا اُس کو - نصیر ترابی

فرحان محمد خان نے 'پسندیدہ کلام' کی ذیل میں اس موضوع کا آغاز کیا، ‏نومبر 24, 2018

  1. فرحان محمد خان

    فرحان محمد خان محفلین

    مراسلے:
    2,058
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Cheeky
    غزل
    وہ بے وفا ہے تو کیا مت کہو بُرا اُس کو
    کہ جو ہوا سو ہوا خوش رکھے خدا اُس کو

    نظر نہ آئے تو اسکی تلاش میں رہنا
    کہیں ملے تو پلٹ کر نہ دیکھنا اُس کو

    وہ سادہ خُو تھا زمانے کے خم سمجھتا کیا
    ہوا کے ساتھ چلا لے اڑی ہوا اُس کو

    وہ اپنے بارے میں کتنا ہے خوش گماں دیکھو
    جب اس کو میں بھی نہ دیکھوں تو دیکھنا اُس کو

    ابھی سے جانا بھی کیا اس کی کم خیالی پر
    ابھی تو اور بہت ہو گا سوچنا اُس کو

    اسے یہ دُھن کہ مجھے کم سے کم اداس رکھے
    مری دعا کہ خدا دے یہ حوصلہ اُس کو

    پناہ ڈھونڈ رہی ہے شبِ گرفتا دلاں
    کوئی پتاؤ مرے گھر کا راستا اُس کو

    غزل میں تذکزہ اس کا نہ کر نصیرؔ کہ اب
    بھلا چکا وہ تجھے تو بھی بھول جا اُس کو
    نصیرؔ ترابی
    1973ء
     
    آخری تدوین: ‏نومبر 24, 2018
    • زبردست زبردست × 1

اس صفحے کی تشہیر