سیماب اکبر آبادی غزل : آ کہ تیرے غم میں بے تاب و تواں ہے زندگی - علامہ سیمابؔ اکبر آبادی

فرحان محمد خان نے 'پسندیدہ کلام' کی ذیل میں اس موضوع کا آغاز کیا، ‏جنوری 31, 2019

  1. فرحان محمد خان

    فرحان محمد خان محفلین

    مراسلے:
    2,145
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Cheeky
    غزل
    آ کہ تیرے غم میں بے تاب و تواں ہے زندگی
    یہ کہاں کی زندگی ہے ، یہ کہاں ہے زندگی

    زندگی کے گرد زاروں میں نہاں ہے زندگی
    زندگی سمجھا ہے جس کو وہ کہاں ہے زندگی

    ہر نظر میری حدیثِ حسن و وحیِ عشق ہے
    میرے رومانِ وفا کی ترجماں ہے زندگی

    شورِ ہستی دے رہا ہے دعوتِ قربت مجھے
    کیا نمازِ صبحِ محشر کی اذاں ہے زندگی ؟

    زندگی کا ہر نفس ہے ذہن و ہمت آزما
    ہائے وہ انسان جس کی جاوداں ہے زندگی

    فرضی و رسمی نہ ہو ، تیرا یہ حسنِ التفات
    مجھ سے تُو خوش ہے تو کیوں ناشادماں ہے زندگی

    حسن جب سرشاریوں کے ساتھ خود ساقی بنے
    صرف وہ اک لمحۂ مست و جواں ہے زندگی

    ذہنِ ہستی اس کو سلجھاتا رہا ہے بار بار
    باوجود اس کے ہنوز اک چیستاں ہے زندگی

    زندگی تو نعمتِ مخصوصِ بزمِ قدس ہے
    زندگی کا ایک دُھندلا سا نشاں ہے زندگی

    دیکھ ویرانوں میں جا کر اے طرب کوشِ حیات
    چاندنی راتوں میں کیا کیا نوحہ خواں ہے زندگی

    پہلے میری زندگی سیمابؔ تھی بارِ حیات
    اور اب خود میری ہستی پر گراں ہے زندگی
    علامہ سیمابؔ اکبر آبادی
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1

اس صفحے کی تشہیر