نصیر ترابی غزل : آئیں گے لوٹ کر کہاں بیتے دنوں کے کارواں - نصیرؔ ترابی

فرحان محمد خان نے 'پسندیدہ کلام' کی ذیل میں اس موضوع کا آغاز کیا، ‏دسمبر 5, 2018

  1. فرحان محمد خان

    فرحان محمد خان محفلین

    مراسلے:
    2,125
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Cheeky
    غزل
    آئیں گے لوٹ کر کہاں بیتے دنوں کے کارواں
    گرد بھی ساتھ لے گئے ناقہ سوار و سارباں

    خاک ہے کوئے دل براں خواب ہے شہرِ دوستاں
    اس کے سوا ہے اور کیا اُجرتِ عمرِ رائیگاں

    وقت ہے کوہِ خود نگر دید و شنید بے اثر
    تو ہے ادھر تو میں ، ادھر برف جمی ہے درمیاں

    خار و خسِ ملال کیا سیلِ رم و قرار میں
    چھوٹ گئے ہیں حوصلے ڈوب گئی ہیں گشتیاں

    غم کی ہوا تھی پُرتپاک ، دل کی فضا تھی تاب ناک
    کیا ہیں مسافتوں کے چاک ، بول رہا ہے بادباں

    کوئی تو حد ہو آخری تیزروی کی حد کوئی
    اور اگر زمیں کھنچی ٹوٹ پڑے گا آسماں

    موسمِ سبز پوش میں سارے شجر ہیں زرد زرد
    جی یہی چاہتا ہے ان تجھ سے ملیں خزاں خزاں

    دونوں ہوا پسند ہیں دونوں کا اعتبار کیا
    آنکھیں ہیں میری رنگ رنگ چہرہ ترا دھواں دھواں

    دیکھ یہ شب گزیدہ لو دیکھ مرا پریدہ رنگ
    اے مری شمعِ ہم فراق ، سوچ یہ کس کا ہے زیاں

    یاد نہ کر گھڑی گھڑی بھول بھی جا کبھی کبھی
    چہرہ نما وہ چلمنیں ، چشم کُشا وہ کھڑکیاں

    بادِ صبا وہ آہٹیں بادِ صبا وہ دستکیں
    کچھ تو جزائے ہم رہی ایسی بھی کیا اُداسیاں

    دل سرِ شام بجھ گئے رنگ تمام بجھ گئے
    سوچ رہا ہو دیر سے جاؤں کہیں ، مگر کہاں

    ابر شکن یہ چاندنی پُرزہ قبا یہ روشنی
    بکھری ہوں جیسے ہر طرف خلعتِ گل کی دھجیاں

    طاق و اطاق بے چراغ خاک بسر خم و ایاغ
    مسند و چتر کم فراغ ، یخ زدہ ترکش و کماں

    تکیہ کرو مسافرو سایۂ ابر و باد پر
    دیکھو زمیں کو اوڑھ کر سو بھی چکیں حویلیاں

    کل بھی رہیں گی فرصتیں کل پہ رکھو مسافتیں
    آؤ نصیرؔ گھر چلیں ، رات ڈھلی کشاں کشاں
    نصیرؔ ترابی
    1969ء
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1

اس صفحے کی تشہیر