اردو سیارہ

September 22، 2020

محمد اظہارالحقوسوسے تو دل میں اُٹھیں گے



تو کیا عابد کوئی سوئی ہے جو کسی سوراخ میں گر گئی اور اب نہیں مل رہی ؟ یا گندم کی بالی ہے جسے ہوا اڑا کر لے گئی ؟یا وہ شلغم تھا جسے گائے کھا گئی؟ کیا وہ کنگھی کا دندانہ تھا جو ٹوٹ گیا اور اب اسے ڈھونڈنا ناممکن ہے ؟ یا وہ بیج کا دانہ تھا جسے زمین کھا گئی ؟ کیا وہ پانی کا قطرہ تھا جو ہوا میں تحلیل ہو گیا؟ یا مٹی کا پیالہ تھا جو گرا اور ٹوٹ گیا؟ یا اس کے ہاتھ کوئی سلیمانی ٹوپی آگئی ہے ؟
نہیں! وہ گوشت پوست کا انسان ہے۔ علائق کے ساتھ بندھا ہوا! رشتہ داریوں میں مقید! ضرورتوں کا محتاج! وہ پولیس جس کے …

September 21، 2020

ایم اے امینعمران سیریز پر تبصرہ

جب سے پرانے گانوں کو نئے انداز میں پیش کرنے کا رواج ہوا ہے اس سے بھی پہلے سے کسی کے تخلیق کردہ کرداروں پر مشتمل کہانیاں لکھنے کا سلسلہ چلا آرہا ہے۔ سن اسی اور نوے کی دہائی میں جہاں ہم مرحوم اشتیاق احمد کی انسپکٹر جمشید سیریز کے دلدارہ تھے وہیں مظہر کلیم کی عمران سیریز کے بھی رسیا تھے اور انہی کو اس کردار کا خالق سمجھتے تھے، بھولے بھالے دور کے معصوم قاری تھے نا، شاید اسی لئے۔مگر جب شعور و آگاہی کی

محمد اظہارالحقایک بے مثال کامیابی



بیڈ پر نیم دراز میرے ساٹھ سالہ پوتے نے اپنے دائیں ہاتھ پڑے ہوئے ٹیبل پر لگی گھنٹی کا بٹن دبایا۔ بغیر کسی تاخیر اور بغیر کسی آواز کے‘ سامنے والی دیوار ‘ ٹی وی سکرین میں تبدیل ہو گئی۔
ایک خاتون ''اِنگ اردو‘‘ میں خبریں سنا رہی تھی۔ حیران نہ ہوں جب میرا پوتا ساٹھ سال کا ہوا تو اس وقت تک اردو بھی غائب ہو چکی تھی اور انگلش کی ہیئت بھی بدل چکی تھی۔ اب یہ ایک نئی زبان تھی۔ اردو اور انگلش کا آمیزہ۔ اسے پہلے تو انگلش اردو کہا جاتا تھا مگر کثرت استعمال سے یہ لفظ ''اِنگ اردو‘‘ ہو گیا۔ یہ ایک ضمنی بات درمیان …

افتخار اجمل بھوپالدوسرے کا مذاق اُڑانا

اے لوگو جو ایمان لائے ہو، نہ مرد دوسرے مردوں کا مذاق اڑائیں، ہو سکتا ہے کہ وہ ان سے بہتر ہوں، اور نہ عورتیں دوسری عورتوں کا مذاق اڑائیں، ہو سکتا ہے کہ وہ ان سے بہتر ہوں آپس میں ایک دوسرے پر طعن نہ کرو اور نہ ایک دوسرے کو بُرے القاب سے […]

September 18، 2020

نورین تبسم"منہ دکھائی سے منہ دیکھنے تک"

 عام بول چال  اور اردو زبان دانی میں "منہ دکھائی" ایک بہت ہی عام فہم  لفظ ہے۔روزمرہ زندگی میں  اس کا استعمال   دنیا میں زندگی کی آنکھ کھلنے کے بعد نومولود کی منہ دکھائی سے  ہوتا ہے جب دیکھنے والے اپنی  اپنی سوچ کے مطابق بچے  کے نین نقش پر تبصرے کرتے ہیں  تو کہیں تحائف اور روپے پیسے سے   رسمِ دنیا  نباہتے  ہیں ۔   سفرِزندگی طے کرتے  کرتے ایک "منہ دکھائی" کا مرحلہ نئی نویلی دلہن کی زندگی میں   آتا ہے۔جو انہی مراحل سے گزرتی ہے۔لیکن   اس سمے وہ   اس "منہ دکھائی" سے نہ صرف باخبر ہوتی ہے بلکہ پوری طرح …

نورین تبسم"اب عمر کی نقدی ختم ہوئی"

پانچ برس اُدھار کے۔۔شرافت ناز

September 17، 2020

محمد اظہارالحقمجرم کون؟؟ سزائے موت


''آج جب دنیا میں اسلحہ سے متعلق جرائم، اسلحہ کی سمگلنگ اور اسلحہ کی نقل و حمل زوروں پر ہے، سنگا پور میں یہ جرائم بہت ہی کم ہیں۔ اس کی وجہ ہمارا یہ قانون ہے کہ اگر کوئی فائر کرتا ہے، تو کوئی اس سے زخمی یا ہلاک نہ ہو تب بھی اس کی سزا موت ہے‘‘۔
یہ الفاظ جیا کمار کے ہیں۔ جیا کمار مذہباً ہندو ہیں۔ نسلاً تامل ہیں۔ سنگا پور کے ڈپٹی وزیر اعظم رہے۔ مختلف اوقات میں مختلف وزارتوں کے انچارج رہے۔ یکم جولائی 2020ء سے انہیں نیشنل یونیورسٹی آف سنگا پور کا پرو چانسلر مقرر کیا گیا ہے۔ لطف کی بات یہ ہے کہ اتنی سخت …

September 16، 2020

اسریٰ غوریاے امّت ہوش کر – شہلا خضر

عرب کی وسیع وعریض صحرائی آبادی ہے ۔ ایک چھوٹا سا قافلہ آہستہ روی سے چلا جا رہا ہے۔ اس کارواں میں کچھ مقامی افراد کہیں رواں دواں ہیں ۔ مستورات کے اونٹ پر پردے لٹکا کر حجاب کا اہتمام کیا گیا تھا ۔ سارباں اپنی دھن میں مگن چلتا چلا جا رہا تھا ۔ […]

The post اے امّت ہوش کر – شہلا خضر appeared first on نوک قلم.

اسریٰ غوریسانحہ موٹر وے اور اس کا حل – بنت شیروانی

سانحہ موٹر وے پر دل خون کے آنسو رو دیا ۔ اور دل تو مغموم ہر اس وقت ہوجاتا ہے جب آۓ دن یہ بچوں سے زیادتی کے واقعات پڑھنے کو ملتے ہیں کہ جہاں کوئی بچہ ، بچی تو عورت محفوظ نہیں اور ان واقعات کی تعداد میں نہایت ہی تیزی کے ساتھ اضافہ […]

The post سانحہ موٹر وے اور اس کا حل – بنت شیروانی appeared first on نوک قلم.

اسریٰ غوریشرعی سزائیں اشد ضرورت – ثمن عاصم

میں اسلام کےنام پر حاصل ہونے والے اس ملک کی باسی ہوں ، جہاں تلاش کرنے پر بھی اسلام نظر نہیں آرہا ۔ میں ریاست مدینہ ثانی کے اس دعویدار کی رعایا ہوں جہاں ایک عورت سفر پر اپنے معصوم بچوں کے ہمراہ نکلتی ہے تو ہوس کے پجاری، وحشی درندے اسے اجتماعی زیادتی کا […]

The post شرعی سزائیں اشد ضرورت – ثمن عاصم appeared first on نوک قلم.

September 14، 2020

محمد اظہارالحقجاگدے رہنا! ساڈے تے نہ رہنا



حمید صاحب ہمارے پڑوسی تھے۔ ایک ریٹائرڈ بینکار۔ ہم لوگ جس آبادی میں رہ رہے تھے وہ وزیر اعظم کے مغل سٹائل، پُرشکوہ، دفتر سے صرف پندرہ بیس منٹ کی ڈرائیو پر واقع تھی۔ ایک صبح معلوم ہوا کہ حمید صاحب کے گھر سے رات ان کی گاڑی چوری ہو گئی ہے۔ متعلقہ تھانے میں رپورٹ درج کرائی گئی۔ تھانے والے آئے‘ اور کئی بار آئے۔ حمید صاحب بھی تھانے کے چکر لگاتے رہے۔ ہونا کیا تھا! صبر کر کے بیٹھ گئے۔
دو تین ماہ گزرے تھے کہ حمید صاحب کو ایک فون کال موصول ہوئی کہ گاڑی، جس کا رجسٹریشن نمبر یہ ہے، ہمارے پاس ہے‘ بنوں آ کر …

اسریٰ غوریارطغرل غازی کی بہادری کی داستاں – سیزن 3 قسط 35

ارطغرل غازی کی بہادری کی داستاں قسط 35

The post ارطغرل غازی کی بہادری کی داستاں – سیزن 3 قسط 35 appeared first on نوک قلم.

September 13، 2020

اسریٰ غوریارطغرل غازی کی بہادری کی داستاں – سیزن 3 قسط 34

ارطغرل غازی کی بہادری کی داستاں قسط 34

The post ارطغرل غازی کی بہادری کی داستاں – سیزن 3 قسط 34 appeared first on نوک قلم.

September 11، 2020

امتیاز خانبریکنگ نیوز کے چکر میں صحافت کاتقدس پامال نہ کریں

صداقت اور راست بازی صحافت کی وہ بنیادی خصوصیات ہیں جو معاشرے میں اس کی اہمیت کے غماز ہیں۔ صحافت انسانی اقدار کے تحفظ کی ضامن ہوتی ہے۔ عوام کے جذبات اور احساسات کی پیامبر ہوتی ہے۔ صحا فت کا شعبہ زندگی کے تمام شعبوں سے نہ صرف یکسر مختلف بلکہ انتہائی اہم بھی ہے۔ […]

افتخار اجمل بھوپالسچے قائد کی یاد میں

آج 11 ستمبر ہے ۔ 72 سال قبل یہی تاریخ تھی کہ ہند و پاکستان کے مسلمانوں کا عظیم رہنما اس دارِ فانی سے ملکِ عدم کو کوچ کر گیا مجھے وہ وقت یاد ہے جب اپنے عظیم قائد کی رہنمائی میں مسلمانانِ ہند کی جد و جہد میں اپنا حصہ ڈالنے کیلئے میں نے […]

September 10، 2020

محمد اظہارالحقکچی، ٹیڑھی اینٹیں



بچے کو بخار ہے۔ ڈاکٹر کے پاس لے جانا ہے۔ کیا کبھی کسی نے کہا کہ جب سارے ملک ہی میں صحت کا نظام درست نہیں تو ایک آدمی کی تندرستی سے کیا فرق پڑے گا؟ بچوں کو سکول داخل کیوں کراتے ہیں؟ کیوں تعلیم دلاتے ہیں؟ پورے ملک میں نا خواندگی کا دور دورہ ہے، جہالت عام ہے، صرف آپ کے بچے پڑھ لکھ گئے تو کتنی بہتری آ جائے گی؟ گھر کی صفائی مت کیجیے۔ شہر ہمارے گندگی سے اٹے پڑے ہیں۔ کراچی کا کچرا ملک کے گلے کا ہار بن کر رہ گیا ہے۔ کوڑے کے ڈھیر قصبوں اور قریوں کا محاصرہ کیے ہوئے ہیں۔ ایک آپ کے چھوٹے سے گھر کی صفائی سے …

September 07، 2020

حیدرآبادیپھول کھلنے دو - افسانے از واجدہ تبسم - pdf download


پھول کھلنے دو
ممتاز اور بدنام افسانہ و ناول نگار واجدہ تبسم کی 8 کہانیوں کا مجموعہ ہے۔ یہ تمام کہانیاں ہندوستان کے پسماندہ طبقہ کی ہریجن ذات کی زندگی کے مخلف گوشوں پر تحریر کی گئی ہیں۔
بیسویں صدی کی ساتویں دہائی میں اس کا پہلا ایڈیشن شائع ہوا تھا، پھر جولائی1982ء میں انہی کے قائم کردہ ادارے "اوورسیز بک سنٹر" سے اس کے دوسرے ایڈیشن کی طباعت عمل میں آئی۔

واجدہ تبسم کے افسانوں کے دو مزید مجموعے، دو ناول اور ایک سوانحی مضمون، پی۔ڈی۔ایف فائل شکل میں یہاں پہلے ہی یپش کیے جا چکے ہیں:

September 06، 2020

محمد عامرانصاف اور انصاف کا قتل

تاریخ: 4 ستمبر سال 2020 خبر: کوئیٹہ کی ماڈل عدالت نے مشہور کیس کا فیصلہ سنا دیا۔ مجید خان اچکزئی کو عدم ثبوت کی بناء پر ٹریفک سارجنٹ کے قتل کے مقدمے میں بری کر دیا۔ اللہ اکبر ۔۔۔۔۔اللہ کی عدالت کا فیصلہ آنا ابھی باقی ہے۔ اس عدالت نے عدم شواہد کی بنا پر …

افتخار اجمل بھوپالیومِ دفاع پاکستان

بھارتی فوجوں نے 6 ستمبر کو نمازِ فجر کے وقت سے پہلے اچانک لاہور اور سیالکوٹ کی سرحدوں پر بھرپور حملے کر دیئے ۔ صدرِ پاکستان جنرل محمد ایوب خان سلِیپنگ سُوٹ ہی میں جی ایچ کیو کے آپریشن رُوم پہنچ گئے اُنہوں نے 6 ستمبر کی صبح تقریر کی جس میں واقع بتانے کے […]

September 04، 2020

حیدرآبادیذکرِ حسین - از مولانا کوثر نیازی - pdf download

zikr-e-hussain-kausar-niazi

حضرت حسین رضی اللہ تعالیٰ عنہ کی مظلوم شخصیت اور سانحۂ کربلا پر یہ ایک نقطۂ نظر ہے۔ جو مختلف عنوانات پر مبنی مضامین کے سہارے نامور دینی و سیاسی شخصیت مولانا کوثر نیازی (پ: 1934، م: 20/مارچ 1994) نے تحریر کیا تھا اور اسے کتابی شکل میں جناب علی صدیقی کی قائم کردہ عالمی اردو کانفرنس نے دہلی سے شائع کیا تھا۔ اس کتاب کے چھٹے ایڈیشن (فروری 1990ء) کی پی۔ڈی۔ایف فائل پیش خدمت ہے۔

اس کتاب کے ابتدائیہ میں صاحبِ کتاب کوثر نیازی لکھتے ہیں ۔۔۔
ذکرِ حسینؓ میری کمزوری بھی ہے اور قوت بھی۔ للہ الحمد کہ اب تک کی …

امتیاز خانسُوءِ اخلاق قومی بگاڑ کا مؤجب

نیا میں ترقی حاصل کرنے والی قوم ہمیشہ اچھے اخلاق کی مالک ہوتی ہے ۔اخلاق دنیا کے تمام مذاہب کا مشترکہ باب ہے جس پر کسی کا اختلاف نہیں۔ انسان کی عقل جب تک اس کے اخلاقی رویہ کے ما تحت کام کرتی ہے، تمام معاملات ٹھیک چلتے ہیں لیکن جب اس کے کمترنفسانی جذبات […]

September 01، 2020

حیدرآبادیہفت روزہ سرفراز لکھنؤ - مرزا دبیر نمبر 1976 - pdf download


"سرفراز" ، لکھنؤ سے شائع ہونے والا ہفت روزہ ہے جس کا آغاز غالباً 1921ء میں ہوا تھا۔ یہ آل انڈیا شیعہ کانفرنس کا آرگن ہے۔
اردو صحافت میں خصوصی نمبروں کو شائع کرنے کی اولیت کا شرف ہفت روزہ "سرفراز (لکھنؤ)" کو ہی حاصل ہے۔ محرم اور رجب میں نکالے جانے والے اس ہفت روزہ کے دو خصوصی نمبر (محرم نمبر اور رجب نمبر) قارئین میں اتنے مقبول رہے کہ سال بھر تک ان نمبروں کا بےچینی سے انتظار کیا جاتا رہا ہے۔
فروری 1972ء میں اس ہفت روزہ نے انیس نمبر شائع کیا تھا۔
17/دسمبر 1976ء کو منظر عام پر آنے والا ہفت روزہ …

نورین تبسم"ہنزہ داستان"

ہنزہ داستان۔۔۔مستنصرحسین تارڑ
سفر ۔۔۔1984
1985اشاعت۔۔۔
انتساب۔۔۔امی جان کے لیے











    صفحہ 114۔۔۔گُم وہی چیزیں ہوتی ہیں جو چاہے عارضی طور پر ہی سہی اِنسان  کی گرفت میں ایک مرتبہ تو آتی ہیں- بےشمار لوگ ہوں گے  جِن کے پاس  توگُم کرنے کے لیے بھی کچھ نہیں ہوتا۔
 صفحہ 119۔۔۔ طویل مسافتوں کی تھکاوٹ چند روز میں زائل ہو جاتی ہے ۔لیکن مہہ وسال کے گزرنے سے جو مسافت وجود میں آتی ہے اُس کی تھکاوٹ صرف مٹی میں  پنہاں ہو کر ہی ختم ہوتی ہے۔
 صفحہ 270۔۔۔ انسان فطرت کو مسخر تو کر سکتا ہے لیکن اُس کا دائمی رفیق نہیں  بن …

August 31، 2020

نورین تبسم" اقوال اور کہاوتیں"

میری ڈائری سے۔۔۔۔
٭ اصل قید جسمانی نہیں ذہنی ہوتی ہے۔ (نیلسن منڈیلا۔۔۔" لانگ واک ٹو فریڈم")۔ 
۔۔۔۔۔۔
 ٭ دھند ۔۔لکھنا ایک بہت بڑا ذہنی بوجھ ہے۔یہ دُھند میں ایک ایسا سفر ہے جس کی راہ میں کوئی نشان نہیں۔ بلکہ آپ کو یہ بھی معلوم نہیں ہوتا کہ آپ سفرکس جانب کر رہے ہیں اور کیوں کر رہے ہیں۔(جین پیٹرک موڈی اینا۔فرانسیسی ناول نگار۔۔۔ ادب کا نوبل پرائز 2014)۔
۔۔۔۔۔
 ٭ہر انسان پہاڑی کی چوٹی تک پہنچنا اور وہاں رہنا چاہتا ہے۔یہ جانے اور محسوس کیے بغیر کہ اصل خوشی اس رستے میں ہے جو ہمیں اس بلندی کے سفر کی طرف لے …

August 29، 2020

نورین تبسم"کیا ہے زندگی"

"کیا ہے زندگی"
٭ زندگی  تو بس پکے مکان سے کچی قبر تک فقط آنکھ بند ہونے اور آنکھ کھلنے کے بیچ کی سفرکہانی ہے جو کبھی تو حقوق وفرائض کے محور کے گردسمجھوتے کے کھوپے چڑھائے صبح وشام کرتے گزرتی ہے تو کبھی لایعنی خواہشوں  کی چادر میں اُمیدوں کی گلکاری کرتے،لباس کی  تکمیل کے  خمار میں  ڈولتے تو کبھی ناکافی حسرتوں کے لاشے اُٹھائے دن گن گن کر گزارتے۔ زندگی کے میلے میں اپنی محنت ومشقت کے سکًوں سے  آسودگی خریدتے خریدتے ایک ایسا وقت بھی آتا ہے  کہ  کاروبارِحیات  کا  مرکزی کردار   ایکسٹرا کی جانب بڑھنے لگتا …

امتیاز خاناردو صحافت کا ماضی شاندار،حال توجہ طلب

صحافت ملک وقوم کی آئینہ دار ہوتی ہے۔ صحافت تہذیب وتمدن ، ثقافت وسماجی قدروں کی عکاسی کرتی ہے۔آج کے اس برق رفتار زمانے میں اس کی اہمیت و افادیت سے کسی بھی صورت میں انکار نہیں کیا جاسکتا۔ صحافت انسانی اقدار کے تحفظ کی ضامن اورمظلوم و مجبور عوام کے جذبات و احساسات کی […]

August 25، 2020

محمد بلالاور اس کُٹیا کے ماتھے پر لکھوایا ہے… سب مایا ہے


دریائے چناب کے کنارے پر۔۔۔ آسمان پر چھائی کہکشاں۔۔۔ اک جلتا الاؤ۔۔۔ اک بیری کا درخت۔۔۔ اور اس کے پاس درویش کی کُٹیا۔۔۔ ”اور اس کٹیا کے ماتھے پر لکھوایا ہے… سب مایا ہے“۔۔۔ سڑک چھوڑی، بند سے اترے اور عین کنارے پر چلتے چلتے گھاس پھوس سے بنی کُٹیا کے قریب پہنچے۔ اس دشت و بیابان میں ایک طرف رات شدید تاریک، خطرناک کیڑے مکوڑوں کا گڑھ، اور دوسری طرف چناب میں طغیانی بڑھ رہی تھی۔ پانی کناروں سے باہر نکلنے ہی والا تھا۔ مگر اک دیوانے کو اپنے مطلوبہ نظارے کی تصویر درکار تھی۔ اور پھر اسی دوران کنارہ ٹوٹ کر …

August 24، 2020

حیدرآبادیاشوک ساحل - انسانیت نواز منکسر المزاج عوامی شاعر


اب اس سے پہلے کہ دنیا سے میں گزر جاؤں
میں چاہتا ہوں کوئی نیک کام کر جاؤں

اس مقبول عام شعر کے خالق، اشوک ساحل آج 24/اگست 2020 کو دنیا سے وداع ہو گئے۔ ان کی عمر 65 سال تھی اور بہار کے شہر مظفرنگر سے ان کا تعلق تھا۔ وہ گذشتہ دو برسوں سے گردوں کی بیماری کا شکار تھے۔
اشوک ساحل اپنے عام فہم مگر پرفکر اشعار سے مشاعروں میں جان ڈال دیتے تھے اور سامعین کی توجہ حاصل کرنے کے ہنر سے بخوبی واقف تھے، ان کے مشہور اشعار ہیں:

اردو کے چند لفظ ہیں جب سے زبان پر
تہذیب مہرباں ہے میرے خاندان پر

دل کی بستی میں اجالا ہی …

افتخار اجمل بھوپالآزادی کا اعلان

اگست 1947ء کی 14 اور 15 تاریخ کی درمیانی رات 11 بج کر 57 منٹ پر ریڈیو پر آواز گونجی ”یہ ریڈیو پاکستان لاہور ہے“۔ اس کے ساتھ ہی فضا ”نعرہءِ تکبیر ۔ اللهُ اکبر“۔ ”پاکستان زندہ باد“۔ ”پاکستان کا مطلب کیا ؟ لا اِلهَ اِلالله“کے نعروں سے گونج اُٹھی 15 اگست 1947ء بمطابق 27 […]

August 23، 2020

ایم-ڈی نورچار خودکشیاں اور ایک طلاق ۔

منجانب فکرستان :غوروفکر کے لئے
 ٹوئٹر پر میری پوسٹ و شیئرنگ دیکھنے لئے
https://twitter.com/sunday77 
 دُنیا میں آٹھ ارب کے قریب انسان رہتے ہیں، فطرت کی حکمتی ( میکنیزم) نے اِن تمام انسانی چہروں کو قابلِ شناخت بنایا ہے ۔۔۔ یہ بھی کہ ہر فرد اپنی سی منفرد سوچ کا حامل ہے تاہم اِن قابلِ شناخت لوگوں کے ذہنوں میں کیا کُچھ چل رہا ہوتا ہے، معلوم نہیں ہو پاتا ، دوست احباب، عزیز و اقارب حتاکہ گھر والوں تک کو یقین کرنا مشکل ہوتا کہ  ہمارے بیٹے ہی نے  مسجد،چرچ،بار کلب،اسکول وغیرہ میں فائرنگ کرکے لوگوں کو  ہلاک …

August 21، 2020

امتیاز خاندین کے ساتھ گہرا ربط کار آمد اسلحہ

سالِ نو کی آمد پرانفرادی اور اجتماعی زندگیوں کا محاسبہ کریں نیا اسلامی سال یعنی 1442 ہجری دستک دے چکا ہے ۔ ہم نے نئے سال میں قدم رکھ کے حیاتِ مستعار سے ایک سال کا قیمتی عرصہ کم کرلیا ہے۔ محرم الحرام اسلامی کلینڈر کا پہلا مہینہ ہے جس کے بارے میں حضورؐ نے […]

August 18، 2020

شاکر عزیزلفظ، علامت اور معنی

 کوئی ایک عشرہ قبل جب ہم نے لسانیات کی تعلیم حاصل کرنا شروع کی تو زبان کے بنیادی خواص میں سے ایک کا علم حاصل ہوا۔ آربی ٹریری نیس یعنی آواز/ حروف اور معنی میں رشتے کا بے قاعدہ پن۔ آج ترجمہ کرتے ہوئے ایک لفظ 'اندر' پر نگاہ پڑی تو یہ لفظ انتہائی اجنبی معلوم پڑا۔ اشتقاقیات یا ایٹمالوجی (الفاظ کی تاریخ جاننے) کے علم کی رو سے اس لفظ کے حصے بخرے کر کے مزید ذیلی معنی دریافت کیے جا سکتے ہیں جیسا کہ 'در' شاید فارسی سے آیا اور جس کا مطلب بھی 'اندر' یا شاید 'دروازہ' ہے۔

لیکن آوازوں یا حروف اور معنی کے درمیان …

محمد احمدوہ لوگ میرے بہت پیار کرنے والے تھے ۔ جمال احسانی

غزل

وہ لوگ میرے بہت پیار کرنے والے تھے
گزر گئے ہیں جو موسم گزرنے والے تھے

نئی رتوں میں دکھوں کے بھی سلسلے ہیں نئے
وہ زخم تازہ ہوئے ہیں جو بھرنے والے تھے

یہ کس مقام پہ سوجھی تجھے بچھڑنے کی
کہ اب تو جا کے کہیں دن سنورنے والے تھے

ہزار مجھ سے وہ پیمان وصل کرتا رہا
پر اس کے طور طریقے مکرنے والے تھے

تمہیں تو فخر تھا شیرازہ بندیٔ جاں پر
ہمارا کیا ہے کہ ہم تو بکھرنے والے تھے

تمام رات نہایا تھا شہر بارش میں
وہ رنگ اتر ہی گئے جو اترنے والے تھے

اس ایک چھوٹے سے قصبے پہ ریل ٹھہری نہیں
وہاں بھی چند مسافر …

August 16، 2020

حیدرآبادیڈیڑھ متوالے - ابن صفی کا مشہور و مقبول ناول

بڑے سائز میں دیکھنے کے لیے تصویر پر کلک کیجیے
از: مکرم نیاز (حیدرآباد، انڈیا)۔
ڈیڑھ متوالے - ابن صفی کے مقبول کردار علی عمران (ایکسٹو) کا وہ یادگار اور معرکۃ الآرا ناول ہے جو 'ہمبگ دی گریٹ' سیریز (1: دلچسپ حادثہ - 2: بےآواز سیارہ) کا تیسرا اور آخری ناول ہے۔ ابن صفی اگست 1952 میں پاکستان منتقل ہو گئے تھے مگر ان کے ناول نکہت پبلیکیشنز الہ آباد کے پبلشر عباس حسینی کے ذریعے پابندی سے ہندوستان میں شائع ہوتے رہے۔ اس یادگار خاص نمبر کے پہلے ایڈیشن کا افتتاح 25/ نومبر 1962ء کو اس وقت کے وزیر داخلہ ہند …

August 14، 2020

افتخار اجمل بھوپالآزادی مبارک

تمام ہموطنوں کو (دنیا میں جہاں کہیں بھی ہیں) آزادی کی سالگرہ مبارک اللہ ہمیں آزادی کے صحیح معنی سمجھنے اور اپنے مُلک کی خدمت کرنے کی توفیق عطا فرمائے آمین یہ وطن ہمارے بزرگوں نے حاصل کیا تھا کہ مسلمان اسلام کے اصولوں پر چلتے ہوئے مل جل کر اپنی حالت بہتر بنائیں ۔ […]

امتیاز خانسوشل میڈیا شعور کے پر چارکا آسان ذریعہ

ٹیکنالوجی نے دنیا کو یکسر بدل دیا ہے۔ پچھلی چند دہائیوں میں اس ٹیکنالوجی کی بدولت ہی دنیا بھرکے لوگ ایک دوسرے کے نزدیک آ گئے ہیں۔ اب ہزاروں میل کی دوری کوئی اہمیت نہیں رکھتی۔ جدید ٹیکنالوجی کی ترقی نے انسانی تعلقات کی نت نئی شکلیں پیدا کرکے انکے دائرے کو وسیع ترکردیا ہے۔ […]

August 08، 2020

محمد بلالہمارے پیسے سے ہمیں ہی تحفہ


ایک وقت تھا کہ لاہور شہر میں درخت کاٹ کر سیمنٹ سریا اُگایا جا رہا تھا اور حکومتِ پنجاب سارے پنجاب کو بھول کر صرف لاہور کو ہی ”لاہور شریف“ بنانے پر لگی ہوئی تھی۔ مگر شاہدرہ ریلوے پھاٹک پر ایک ”فلائی اوور“ بنانے کی زحمت نہ کی گئی۔ جی ٹی روڈ جیسی اہم سڑک کا کوئی پرسانِ حال نہ تھا۔ پتہ نہیں جی ٹی روڈ اور خاص طور پر گجراتیوں سے کس چیز کا بدلہ لیا جا رہا تھا۔ خیر خدا خدا کر کے اب لاہور سیالکوٹ موٹروے بن چکی ہے اور پوچھنا یہ تھا کہ عوام کے پیسے سے بننے والے اس تحفہ کے لئے شکریہ کس کا ادا کرنا ہے؟ آیا …

July 30، 2020

محمود الحقجوہر افشانی (PDF) اب پڑھنا بہت آسان

الحمداللہ ایک سنگ میل عبور ہوا۔ در دستک بلاگ سے69 منتخب مضامین کو میں نے پی ڈی ایف کتاب کی شکل  میں اس طرح  ترتیب دیا ہے کہ اب پڑھنا بہت آسان ہو گیا ہے۔ فہرست مضامین میں کسی بھی عنوان پر کلک کر نے سےہم تحریرکےصفحہ پر چلے جائیں گے اور مضمون کے آخر میں  "واپس اوپر جائیں" پر کلک کرنے سے دوبارہ فہرست مضامین  پر آجائیں گے۔ حروف کے سائز کو اتنا رکھا گیا ہے کہ سیل فون پر ڈاؤن لوڈ کر کے بھی آسانی سے پڑھا جا سکتا ہے ۔ مضامین کو تسلسل سے 1 تا 405  صفحات کی پوری  کتاب پڑھنے کی بجائے کسی بھی عنوان کو کلک کر …

July 24، 2020

محمد بلالگوم گاما گیگو – گھیم گھیم


ساڑھے چھ ہزار سال بعد جب دوبارہ نیو وائز نامی دم دار ستارہ سورج کا چکر لگانے آیا تو خلائی سپر کمپیوٹر نے ایک سائی بورگ نما انسان کو کہا کہ ابھی یعنی 8520 عیسوی میں دریائے چناب کنارے جس جگہ تم بیٹھے ہو، ساڑھے چھ ہزار سال پہلے 2020ء میں بالکل اسی جگہ سے ایک پاگل نے اسی دم دار ستارے کی تصویر بنائی تھی۔ انسان نے کہا کہ کیا تمہارے ریکارڈ میں وہ تصویر ہے؟ ”گھیم گھیم“ اور پھر کمپیوٹر نے یہ والی تصویر اسے دیکھا دی۔ اس پر انسان بولا کہ مجھے اس تصویر کی مکمل معلومات دو۔ یوں کمپیوٹر کہنے لگا کہ ہزاروں سال …

July 22، 2020

ابن آدمجدائی کے بعد

جدائی کے بعد گذشتہ سے پیوستہ یہ جدائی کے لمحات بڑے ظالم ہوتے ہیں شاید جدائی سے بھی زیادہ۰۰۰۰۰۰۰ اسکا سارا وجود اسے روکنے پہ مضر۰۰۰۰۰مگر قدم آگے بڑھنے پہ مجبور۰۰۰۰۰۰اُسے محسوس ہورہا تھاکہ اسکے قدموں کے نیچے نرم گھاس … Continue reading

کوثر بیگمحاسبہ

میں بچپن سے بہت باتونی واقع ہوئی ہوں ۔آج خود کا محاسبہ کیا اور تو اپنی اس عادت کا بارے میں اب جو سوچتی ہوں تو مجھے یاد نہیں آ تا کہ کب کس سے کیا کیا کہتی رہیہوں ۔ان وبائی حالات نے اپنا محاسبہ کرنے مجبور کیا ہے تو سب سے زیادہ میں اپنی زبان سے کی گئی بکواس سےپریشان ہوگئی ہوں۔ یااللہ اب کیا کروں؟ کیسے اپنے الفاظ واپس لوں؟ ہر غلطیوں کوتاہیوں کو تو پروردگار معاف فرمادےگا مگر اس کے بندوں سے  سامنے  کی گئی ناراضگی کیسے معاف ہوگی اور پیٹ پیچھے کہی گئی باتیں کیسے بخشیجائنگی۔ اوخدا اب کیا ہوگا ۔ کس کس 

July 19، 2020

شعیب صفدرگورک ہل کا سفر

کورونا سیزن یا لاک ڈاؤن میں جہاں سارا پاکستان کرونا سے لڑنے کو گھر میں بیٹھ کر “کرونا خلاف” جنگ میں مصرو ف تھا وہاں دوسری طرف ہم روازنہ کی بنیاد پر نوکری پر موجود ہوتےتھے۔ ایسے میں دوستوں کا گورک ہل کا پروگرام تازہ ہوا کا جھونکا لگا۔
کراچی سے چار سو کلومیٹر دور یہ علاقہ سندھ کا “مری” و “ناردن ایریا” کہلاتا ہے۔ ہم نے اب تک اصل مری و ناردن ایریا نہیں دیکھا لہذا ہمارے جیسے کے لئے یہ “شارٹ کورس” تھا کہ تھوڑا تھوڑا جان لیں سب بارے اور پھر بھی معلوم کچھ بھی نہ ہو۔

کراچی سے دادو تین گھنٹے میں اور پھر …

July 15، 2020

محمد عامرسردارعثمان خان بزدار وزیرِ اعلیٰ پنجاب

کسی نے خواب میں بھی نہ سوچا تھا کہ جنوبی پنجاب کی پسماندہ تحصیل تونسہ شریف سے منتخب ایک سردار کو عمران خان پاکستان کے سب سے بڑے صوبے کا وزیرِ اعلیٰ بنا دیں گے۔ تحصیل تونسہ کی عوام سردار صاحب کے وزیرِ اعلیٰ بننے پر بہت خوش ہوئی تھی کہ ہمارے اپنے علاقے کا …

July 14، 2020

محمد بلالکیا واقعی پہاڑ ہوتے ہیں؟


وقت گزرتا جا رہا ہے مگر کورونا کی وجہ سے ایسے مجبور ہوئے بیٹھے ہیں کہ سیروسیاحت کے واسطے دور دراز جنگل بیابانوں اور پہاڑوں وغیرہ میں نہیں جا سکے۔ اب تو ماضی کے سفر بھی خواب سے لگنے لگے ہیں۔ بلکہ میں تو پوچھتا پھر رہا ہوں ”سنا ہے زمین پر پہاڑ بھی ہوتے ہیں“۔ جس طرح زندہ رہنے کے لئے کھانا ضروری ہے ایسے ہی ہم جیسوں کے لئے ”سفری ریاضت“ بھی ضروری ہے، ورنہ ”پھاوے“ ہو جائیں۔ لیکن کورونا سے لڑائی ایک باقاعدہ جنگ ہے اور اس جنگ میں کافی کچھ معطل ہو چکا ہے۔ لہٰذا سکون کی تلاش میں سفارشیں کروا کر اور رشوتیں …

محمد عامرغلامانہ خو

کہتے ہیں کہ اگر کوئی قوم کچھ صدیوں تک غلام رہے تو پھر اس قوم میں غلامی اتنی دیرپا ہو جاتی ہے کہ 100 سال کی غلامی کا اثر 1000 سال میں بھی ختم نہیں ہوتا۔ ہماری قوم میں صدیوں کی محکومی کے بعد غلامی یوں رچ بس چکی ہے کہ ہم حکمرانوں کو بادشاہ …

July 13، 2020

نعیم اکرم ملکوہ جو چن آب کا کنارہ ھے

وہ جو چن آب کا کنارہ ھےعالمِ خواب کا کنارہ ھےچاندنی، سحر اور ھمالہ ھیںکتنے اسباب کا کنارہ ھے عشق ناکام ھو گیا صاحِبکیا عجب کام ھو گیا صاحِبجسکو دیکھو وھی سیانا ھےسلسلہ عام ھو گیا صاحِب عشق تھا، کاروبار تھوڑا تھاتیرا ایسا، شُعار تھوڑا تھا

محمد عامرجے آئی ٹی

گذشتہ دنوں حکومتِ سندھ نے 3عدد JITs اپنی ویب سائیٹ پر شائع کی ہیں۔ 1۔ سانحہ بلدیہ ٹاؤن رپورٹ 2۔ نثار مورائی رپورٹ 3۔ عزیر بلوچ رپورٹ ان تمام رپورٹوں کے بعد ایک بنیادی سوال اٹھتا ہے کہ ان رپورٹوں میں جتنے بھیانک جرائم کا اعتراف کیا گیا ہے۔ ان جرائم پر کون کارروائی کرے …

محمد عامرکراچی اور ٹریفک کے مسائل-1

کراچی دنیا کا ساتواں بڑا شہر ہے۔ کبھی یہ شہر اپنی کھلی اور کشادہ شاہراؤں کے لیے مشہور تھا۔ یہاں ٹرام چلتی تھی، لوکل ٹرین چلتی تھی، ٹانگے چلا کرتے، یہاں کی بسیں اور منی بسیں اپنی سروس کے لیے مشہور تھیں۔ آپ بہت معمولی کرائے میں پورا شہر گھوم لیتے تھے۔ اور یہ زیادہ …

July 11، 2020

ابو شہیر سید سلمان رضانام بڑے اور درشن چھوٹے

دفتری امور کی انجام دہی کے لیے ہمیں گھر گھر جانا پڑتا ہے۔ بھانت بھانت کے لوگوں اور طرح طرح کے رویوں سے سابقہ پڑتا ہے۔ ایک مشاہدہ یہ ہوا کہ چھوٹے لوگوں کے دل کشادہ ہوتے ہیں جبکہ بڑے لوگوں میں تنگ دلی پائی جاتی ہے۔ واضح رہے کہ یہ تفریق بھی معاشرے ہی… Continue reading نام بڑے اور درشن چھوٹے

July 09، 2020

محمد بلالمیری فیس بکیاں


آپ لوگوں کا علم نہیں مگر میرے لئے فیس بک اور دیگر سوشل میڈیا صرف دل پشوری ہی نہیں بلکہ میں انہیں کسی حد تک سنجیدہ بھی لیتا ہوں۔ کیونکہ یہ سب معمولی اوزار نہیں اور اوپر سے اگر اپنا قیمتی وقت دیتے ہیں تو پھر سنجیدہ لینا بنتا ہے۔ ورنہ وقت ضائع ہونے کے سوا کچھ نہیں ہو گا۔ لہٰذا کچھ شغل میلہ ہو تو کچھ تعمیری کام بھی ہو۔ بہرحال میں اپنی فیس بک پوسٹس پر تشریف لانے والوں کو یاد رکھنے کی کوشش کرتا ہوں تاکہ مجھے ان مہربانوں کے نام معلوم ہوں اور میں ان کی قدر کر سکوں۔ اب بڑھتے ہوئے معاملات کو مدِ نظر رکھتے …

Footnotes