1. اردو محفل سالگرہ پانزدہم

    اردو محفل کی پندرہویں سالگرہ کے موقع پر تمام اردو طبقہ و محفلین کو دلی مبارکباد!

    اعلان ختم کریں

Assignment 2

تفسیر نے 'اِصلاحِ سخن' کی ذیل میں اس موضوع کا آغاز کیا، ‏اکتوبر 26, 2006

لڑی کی کیفیت:
مزید جوابات کے لیے دستیاب نہیں
  1. تفسیر

    تفسیر محفلین

    مراسلے:
    3,088
    <table cellspacing="0" cellpadding="1" border="1" width="98%"> <tr> <td colspan="5">
    ہوم ورک - Assignment
    Week 2
    </td> </tr> <tr> <td width="15%"> پیر
    13 نومبر
    2006
    </td> <td> <table cellspacing="0" cellpadding="1" border="1" width="98%"> <tr> <td colspan="5">
    متحرک اور ساکن
    </td></tr> <tr> <td colspan="5">
    مثال
    </td> </tr> <tr> <td colspan="5">
    ہدایات
    اس مثال میں مصرعے “عروجِ آدم خاکی سے انجم سہمے جاتے ہیں“ کو اصول یا Syllable ( کلمہ کا ایسا حصہ جو ایک ہی بار زبان سے ادا ہوسکے) میں باٹا گیا ہے اسکے بعد ہر ایک اصول کو حرکات ( متحرک اور ساکن ) میں تقسیم کیا گیا ہے۔
    اس مثال کو سمجھ کر آپ دوسرے مصرعے “ کہ یہ ٹوٹا ہوا تارا مہِ کامل نہ بن جائے “ کا اسی طرح تجزیہ کریں۔
    اشارہ؛
    یہ تقطیع کے کچھ اصول ہیں ۔جو ہم اگلے سبق میں سیکھیں گے۔
    1 - پہلے رکن میں عروج کے ج کے نیچے اصافت کا زیر ہے جو قاعدہ کے مطابق دو حرفی جے ہوگیا -
    2 - تیسرے رکن میں سے کی ے جو قاعدے کےمطابق گرگئی اور س رہ گیا۔ سہمے میں ے کوگرادیا گیا ہے۔
    3 - دوسرے مصرع کے پہلئ رکن میں کہ کی ہ گرگئی ۔ تیسرے رکن میں مہِ کے ہ ے نیچےاصافت کا زیر ہے جو قاعدہ کےمطابق تین حرفی مہے ہوگیا -
    4 - قاعدہ کے مطابق دو چھوٹی آوازوں کو مل سکتی ہیں چوتھے رکن میں نہ بن مل کر نبن کی آواز ہیں۔
    5 - حمزہ بھی ایک حرف ہے۔
    </td> </tr> <tr><td width="10%"> اصول </td> <td>عرو جِ آ </td> <td> دمِ خا کی </td> <td> سے اَنجم سہ </td> <td> مجاتے ہیں </td> </tr> <tr> <td> حرکات </td> <td>عَ رُو - ج ے - آ
    م م س- م س- م س</td> <td> دم ے - خا - کی
    م م س- م س- م س</td> <td> س ( ے ) اَن - جُم - سہ
    م م س- م س- م س</td> <td> مجا - تے - ہے ( ن )
    م م س- م س- م س</td> </tr> <tr> <td colspan="5">
    مشق
    </td> </tr> <tr> <td> اصول </td> <td> کہ یہ ٹوٹا </td> <td> ہوا تارا </td> <td> مہہِ کامل </td> <td> نبن جائے</td> </tr> <tr> <td> حرکات</td> <td>.</td> <td>.</td> <td>.</td> <td>.</td> </tr> </table> </td> </tr> <tr> <td width="15%"> منگل
    14 نومبر2006
    </td> <td> <table cellspacing="0" cellpadding="1" border="1" width="98%"> <tr> <td colspan="5">
    سبب اور وتد
    </td> </tr> <tr> <td colspan="5">
    ہدایات

    یہاں پر ہم نے پہلےمصرعے “عروجِ آدم خاکی سے انجم سہمے جاتے ہیں“ کو اس کے اصول میں تقسیم کردیا ہے۔ اور پھر اِن اجزاء کو سبب اور وتد میں منتقل کرنا شروع کیا۔ یہ پتہ چلا کہ عرو جِ آ وتد مجموع - سبب - سبب پر بیٹھتاہے۔ ہم آپ کو یہ بتاتے ہیں کہ اس شعر میں وتد مجموع - سبب - سبب کی تکرار ہے۔اب آپ بقایہ مصرع کی تقسیم اس مثال کی طرح مکمل کریں اوراس کے بعد دوسرے مصرع پر یہی عمل دوہرائیں۔
    </td> </tr><tr> <td width="20%"> اصول </td><td width="10%"> عرو جِ آ </td> <td width="20%"> دمِ خا کی </td><td width="20%"> سے اَنجم سہ </td> <td width="20%"> مجاتے ہیں </td> </tr> <tr> <td width="20%"> سبب اور وتد </td><td width="20%">عَ رُو - ج ے - آ
    وتد مجموع - سبب - سبب</td><td width="20%">.</td> <td width="20%">.</td> <td width="20%">.</td> </tr> <tr> <td colspan="5">
    مشق
    </td> </tr> <tr><td width="20%"> اصول </td><td width="10%"> کہ یہ ٹوٹا </td> <td width="20%"> ہوا تارا </td> <td width="20%"> مہہِ کامل </td> <td width="20%"> نبن جائے</td> </tr><tr> <td width="20%"> سبب اور وتد</td> <td width="20%">.</td><td width="20%">.</td> <td width="20%">.</td> <td width="20%">.</td> </tr> </table></td> </tr> <tr> <td width="15%"> بدھ
    15 نومبر2006
    </td> <td> <table cellspacing="0" cellpadding="1" border="1" width="98%"> <tr> <td colspan="10">
    مثال
    رکن - مفاعلین (مفا - عی - لن )
    اجزاء - وتد مجموع - سبب - سبب
    بحر - ہزَج ( مفاعلین - مفاعلین - مفاعلین - مفاعلین ) ایک مصرع میں چار دفعہ تکرار
    </td> </tr> <tr> <td colspan="4">
    ہدایات
    اس مثال کا اچھی طرح مطالحہ کریں کیونکہ آپ یہاں سیکھا ہوا طریقہ آگے آنے والے سوالوں میں استعمال کریں گے۔
    </td> </tr> <tr> <td colspan="4">
    عروجِ آدم خاکی سے انجم سہمے جاتے ہیں
    </td> </tr> </tr> <tr> <td width="10%">عرو - جے - آ </td> <td width="10%"> د مے - خا - کی </td> <td width="20%"> س ان - جم - سہ </td> <td width="10%"> مجا - تے- ہے</td> </tr> <tr> <td width="20%"> مفا - عی - لن </td> <td width="20%"> مفا - عی - لن </td> <td width="10%"> مفا- عی - لن </td> <td width="20%"> مفا- عی - لن </td> </tr> <tr> <td colspan="5">
    کہ یہ ٹوٹا ہوا تارا مہِ کامل نہ بن جائے
    </td> </tr> <tr> <td width="20%"> کہ یہ ٹوٹا </td> <td width="20%"> ہوا تارا </td> <td width="20%"> مہہِ کامل </td> <td width="20%"> نبن جائے </td> </tr> <tr> <td width="20%"> مفا - عی - لن </td> <td width="20%"> مفا - عی - لن </td><td width="20%"> مفا - عی - لن </td> <td width="20%"> مفا - عی - لن </td> </tr> </table> </td> </tr> <tr> <td width="15%"> جمعرات
    16 نومبر2006
    </td> <td><table cellspacing="0" cellpadding="1" border="1" width="98%"><tr> <td colspan="4">
    ہدایات
    اس شعر کر اس طرح سےsyallables میں تقسیم کریں کے یہ ارکان مفاعلین کی تکرار پر بیٹھ جائے۔
    اشارہ ؛
    یہ تقطیع کے کچھ اصول ہیں ۔جو ہم اگلے سبق میں سیکھیں گے۔
    1 - تقظع میں نون غنہ “ں“ اگر لفظ کے آخر میں ہو تو شمار نہیں ہوتا -
    2 - دو چشمی ہے “ھ“ گرادی جاتی ہے۔
    3 - قاعدہ کے مطابق دو چھوٹی آوازوں مل سکتی ہیں ۔ جیسے کہ ہر مل کر کہر، پہ دم مل کر پدم اور بھی سے ھ گرا کر بھی کم کو بکم کی آواز بنےگی۔
    4 - قاعدہ کے مطابق آوازوں کو تقسیم کیا جاسکتا ہے نکلے کو نک لے پڑھاگیا ہے
    5 - خواہشیں بولنے میں خا حشے اور اس مصرعے میں ارماں کو ارما بولا جائےگا - ارماں کا نون غنہ لیکن کے ساتھ مل کر نلے کن کی آواز بنائےگا۔
    </td> </tr> <tr> <td colspan="4">
    ہزاروں خواہشیں ایسی کہ ہر خواہش پہ دم نکلے
    </td> </tr> <tr> <td width="20%"> مفا - عی - لن </td> <td width="10%"> مفا - عی - لن </td> <td width="20%"> مفا - عی - لن </td> <td width="20%"> مفا - عی - لن </td> </tr> <tr> <td width="20%">.</td><td width="10%">.</td> <td width="20%">.</td> <td width="20%">.</td> </tr><tr> <td colspan="4">
    بہت نکلے مرے ارمان لیکن پھر بھی کم نکلے
    </td> </tr><tr> <td width="20%"> مفا - عی - لن </td> <td width="20%"> مفا - عی - لن </td> <td width="20%"> مفا - عی - لن </td> <td width="20%"> مفا - عی - لن </td> </tr> <tr> <td width="20%">.</td><td width="20%">.</td> <td width="20%">.</td> <td width="20%">.</td> </tr> </table> </td> </tr> <tr> <td width="15%"> جمعہ
    17 نومبر2006
    </td><td> <table cellspacing="0" cellpadding="1" border="1" width="98%"><td colspan="4">
    ہدایات
    اس شعر کر اس طرح سےsyallables میں تقسیم کریں کے یہ ارکان مفاعلین کی تکرار پر بیٹھ جائے۔
    </td> </tr> <tr> <td colspan="5">
    نہ کھینچ اے شانہ ان زلفوں کو یاں سودا کا دل انکا
    </td> </tr> <tr> <td width="20%"> مفا - عی - لن </td> <td width="20%"> مفا- عی - لن </td> <td width="20%"> مفا- عی - لن </td> <td width="20%"> مفا- عی- لن </td> </tr> <tr><td width="10%">.</td><td width="20%">.</td> <td width="20%">.</td> <td width="20%">.</td> </tr> </td> </tr><tr><td colspan="4">
    اسیرِ ناتواں ہے یہ نہ دے زنجیر کو جھٹکا
    </td></tr><tr><td width="10%"> مفا - عی- لن </td> <td width="20%"> مفا - عی - لن </td><td width="20%"> مفا - عی - لن </td> <td width="20%"> مفا - عی- لن </td> </tr> <tr> <td width="20%">.</td><td width="20%">.</td> <td width="20%">.</td> <td width="10%">.</td> </tr></table> </td></tr> </table>​
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1
لڑی کی کیفیت:
مزید جوابات کے لیے دستیاب نہیں

اس صفحے کی تشہیر