ﻣﯿﺮﮮ گمشده !!! ﺍﺑﮭﯽ ﻭﻗﺖ ﮨﮯ ۔۔۔ﺍﺑﮭﯽ ﻟﻮﭦ ﺁ...

ساقی۔ نے 'پسندیدہ کلام' کی ذیل میں اس موضوع کا آغاز کیا، ‏اپریل 27, 2016

  1. ساقی۔

    ساقی۔ محفلین

    مراسلے:
    3,304
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Brooding
    ﻣﯿﺮ گمشده !!!
    ﺑﮭﯽ ﻗﺖ ﮨﮯ ،
    ﺑﮭﯽ ﺳﺎﻧﺲ ﮨﮯ،
    ﺑﮭﯽ ﻟﻮ ...
    ﻣﯿﺮﮔﻤﺸﺪ۔۔۔۔۔
    ﻣﺠﮭﮯﻧﺎ
    ﮨﮯﻣﯿﺮ ﺿﺒﻂ ﭘﺮ،
    ﻣﺠﮭﮯ
    ﭘﮭﺮ ﻣﯿﺮ ﮔﻤﺸﺪ۔۔۔۔۔۔۔

    ﯾﮧ ﻧﮩﯿﮟ که___ّّ
    ﺗﯿﺮ
    ﻓﺮﺍﻕ ﻣﯿﮟ ،
    ﻣﯿﮟ
    ﺟﮍگئ ﯾﺎ ﺑﮑﮭﺮ گئ!!
    ﮨﺎ ﻣﺤﺒﺘﻮ ﭘﮧ ﺟﻮ ﻣﺎ ﺗﮭﺎ....
    ﻭﮦ ﻧﮩﯿﮟ ﮨﺎ ﻣﯿﺮ ﮔﻤﺸﺪ۔۔۔۔۔۔


    ﻣﺠﮭﮯ ﻋﻠﻢ ﮨﮯ ﮐﮧ ﺗﻮ ﭼﺎﻧﺪ ﮨﮯ....
    ﮐﺴﯽ ﺍﻭﺭ ﮐﺎ، ﻣﮕﺮ ﯾﮏ پل!!
    ﻣﯿﺮ ﺳﻤﺎ ﺣﯿﺎ ﭘﮧ
    ﺫﺭﺍ ﺟﮕﻤﮕﺎ ___
    ﻣﯿﺮ ﮔﻤﺸﺪ۔۔۔۔۔۔
    ﺗﯿﺮ
    ﻟﺘﻔﺎ ﮐﯽ ﺑﺎﺷﯿﮟ....
    ﺟﻮ ﻣﯿﺮ ﻧﮩﯿﮟ ﺗﻮ مجهے بتا!!
    ﺗﯿﺮ ﺷﺖ ﭼﺎ ﻣﯿﮟ ﮐﺲ ﻟﯿﮯ....
    ﻣﯿﺮ ﺩﻝ ﺟﻼ ﻣﯿﺮ ﮔﻤﺸﺪ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
    ﮔﮭﻨﮯ
    ﺟﻨﮕﻠﻮ ﻣﯿﮟ
    ﮔﮭﺮی
    ﮨﻮ ﻣﯿﮟ....
    ﺑﮍ ﮔﮭﭗ ﻧﺪﮬﯿﺮ ﮨﮯﭼﺎ سو!!
    ﮐﻮ ﺍﮎ ﭼﺮﺍﻍ ﺗﻮ ﺟﻞ ﭨﮭﮯ ،
    ز
    ﺭﺍ ﻣﺴﮑﺮ ﻣﯿﺮ ﮔﻤﺸﺪ۔

     
    آخری تدوین: ‏اپریل 27, 2016
    • پسندیدہ پسندیدہ × 3
    • زبردست زبردست × 1
  2. محمد امین صدیق

    محمد امین صدیق محفلین

    مراسلے:
    1,619
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Cheerful
    اشعارکی دلپزیری کے ساتھ ساتھ ،مابدولت دلکش خطاطی سے بھی متاثر ہوئے بغیر رہ نہ سکے ۔:):)
     
    • دوستانہ دوستانہ × 1
    • پر مزاح پر مزاح × 1
  3. شهزاد محبوب

    شهزاد محبوب محفلین

    مراسلے:
    11
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    InLove
    مگر تمہیں کیا
    میں آڑھے ترچھے خیال سوچوں
    کہ بے ارادہ ...........کتاب لکھوں
    کوئی......... شناسا غزل تراشوں
    ... کہ اجنبی انتساب .............لکھوں
    گنوا دوں اک عمر کے زمانے ...!
    کہ ایک........ پل کا حساب لکھوں
    میری طبیعت پہ منحصر...... ہے
    ... میں جس طرح کا ...نصاب لکھوں
    یہ میرے اپنے مزاج....... پر ہے
    عذاب سوچوں .....ثواب .....لکھوں
    طویل تر ہے ........سفر تمہیں کیا ؟
    میں جی رہا ہوں ...مگر تمہیں کیا ؟
    مگر تمہیں کیا .....کہ تم تو کب سے
    میرے........... ارادے گنوا چکے ہو
    جلا کے سارے حروف ..........اپنے
    میری ..........دعائیں بجھا چکے ہو
    میں رات اوڑھوں ....کہ صبح پہنوں
    تم اپنی رسمیں اٹھا ........چکے ہو
    سنا ہے.....سب کچھہ بھلا چکے ہو
    تو اب میرے دل پہ ...... جبر کیسا ؟
    یہ دل...... تو حد سے گزر چکا ہے
    گزر چکا ہے ..........مگر تمہیں کیا ؟
    خزاں کا..........موسم گزر چکا ہے
    ٹھہر ........... چکا ہے مگر تمہیں کیا ؟
    مگر تمہیں کیا .........کہ اس خزاں میں
    میں جس طرح کے ..بھی خواب لکھوں
     

اس صفحے کی تشہیر