پروین شاکر :::: یاد کیا آئیں گے وہ لوگ جو آئے نہ گئے :::: Parveen Shakir

طارق شاہ نے 'پسندیدہ کلام' کی ذیل میں اس موضوع کا آغاز کیا، ‏فروری 18, 2014

  1. طارق شاہ

    طارق شاہ محفلین

    مراسلے:
    10,645
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Bookworm


    غزلِ
    پروین شاکر

    یاد کیا آئیں گے وہ لوگ جو آئے نہ گئے
    کیا پذیرائی ہو اُن کی جو بُلائے نہ گئے

    اب وہ نیندوں کا اُجڑنا تو نہیں دیکھیں گے
    وہی اچھّے تھے جنھیں خواب دکھائے نہ گئے

    رات بھر میں نے کھُلی آنکھوں سے سپنا دیکھا
    رنگ وہ پھیلے کہ نیندوں سے چُرائے نہ گئے

    بارشیں رقص میں تھیں اور زمیں ساکت تھی
    عام تھا فیض مگر رنگ کمائے نہ گئے

    پَر سمیٹے ہوئے شاخوں میں پرندے آ کر
    ایسے سوئے کہ ہَوا سے بھی جگائے نہ گئے

    تیز بارش ہو ، گھنا پیڑ ہو ، اِک لڑکی ہو
    ایسے منظر کبھی شہروں میں تو پائے نہ گئے

    روشنی آنکھ نے پی اور سرِ مژگانِ خیال
    چاند وہ چمکے کہ سُورج سے بجھائے نہ گئے

    پروین شاکر
     
    • زبردست زبردست × 2
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1

اس صفحے کی تشہیر