اقبال ہزار خوف ہو لیکن زباں ہو دل کی رفیق-علامہ اقبال

فرحان محمد خان نے 'پسندیدہ کلام' کی ذیل میں اس موضوع کا آغاز کیا، ‏اگست 30, 2017

  1. فرحان محمد خان

    فرحان محمد خان محفلین

    مراسلے:
    2,131
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Cheeky
    ہزار خوف ہو لیکن زباں ہو دل کی رفیق
    یہی رہا ہے ازل سے قلندروں کا طریق

    ہجوم کیوں ہے زیادہ شراب خانے میں
    فقط یہ بات کہ پیر مغاں ہے مردِ خلیق

    علاج ضعف یقیں ان سے ہو نہیں سکتا
    غریب اگرچہ ہیں رازیؔ کے نکتہ ہاے دقیق

    مرید سادہ تو رو رو کے ہو گیا تائب
    خدا کرے کہ ملے شیخ کو بھی یہ توفیق

    اسی طلسم کہن میں اسیر ہے آدم
    بغل میں اس کی ہیں اب تک بتانِ عہدِ عتیق

    مرے لیے تو ہے اقرار بااللساں بھی بہت
    ہزار شکر کہ ملا ہیں صاحبِ تصدیق

    اگر ہو عشق تو ہے کفر بھی مسلمانی
    نہ ہو تو مردِ مسلماں بھی کافر و زندیق
    علامہ اقبال
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 2
  2. توقیر عالم

    توقیر عالم محفلین

    مراسلے:
    293
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Amused
    مرید سادہ تو رو رو کے ہو گیا تائب
    خدا کرے کہ ملے شیخ کو بھی یہ توفیق
    بہت خوب
     
  3. فاخر رضا

    فاخر رضا محفلین

    مراسلے:
    3,000
    اگر ہو عشق تو ہے کفر بھی مسلمانی
    نہ ہو تو مردِ مسلماں بھی کافر و زندیق

    کوئی اس کا مطلب سمجھا دے
     
  4. محمد وارث

    محمد وارث لائبریرین

    مراسلے:
    25,908
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Depressed
    وفاداری بہ شرطِ استواری اصلِ ایماں ہے
    مرے بُت خانے میں تو کعبے میں گاڑو برہمن کو
    غالب
     
  5. فاخر رضا

    فاخر رضا محفلین

    مراسلے:
    3,000
    بھائی آپ نے تو اور پھنسا دیا
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1

اس صفحے کی تشہیر