پیاس کے عالم میں کیا بولوں مجھ کو کیسا لگتا ہے

عمر سیف نے 'پسندیدہ کلام' کی ذیل میں اس موضوع کا آغاز کیا، ‏نومبر 17, 2007

  1. عمر سیف

    عمر سیف محفلین

    مراسلے:
    36,612
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Where
    پیاس کے عالم میں کیا بولوں مجھ کو کیسا لگتا ہے
    اک قطرہ بھی اس دم عاطفؔ دریا جیسا لگتا ہے

    سُوکھے پتوں کی آہٹ اب بھی مجھ کو چونکاتی ہے
    یاد ہے مجھ کو اُن پر چلنا تم کو اچھا لگتا ہے

    میں تو اپنے آپ کو اکثر یہ سمجھاتا رہتا ہوں
    تو سب کچھ ہے پھر بھی آخر تو میرا کیا لگتا ہے

    اتنی مدت سے آنکھوں میں خواب نہیں اترا کوئی
    کہ اب سپنا بھی دیکھوں تو مجھ کو سپنا لگتا ہے

    تم کیا میرے پیار کی شدت پیمانوں سے ناپو گے
    پیار میں جتنا بھی کرتا ہوں مجھ کو تھوڑا لگتا ہے

    اپنی آنکھوں میں خوابوں کو لوگ سجائے بیٹھے ہیں
    خوابوں کا سوداگر پھر سے شہر میں آیا لگتا ہے

    دل کے بہلانے کو سب سے کہتا ہوں تنہا خوش ہوں
    سچ پوچھو تو تنہا رہنا کس کو اچھا لگتا ہے

    پلکوں کی باڑھوں پہ جو تم اشک سجائے بیٹھے ہو
    دل میں یادوں کا پھر کوئی جھونکا آیا لگتا ہے

    جیسے بھیڑ میں بچہ کوئی گم ہو جاتا ہے عاطفؔ
    تم جب ساتھ نہیں ہوتے ہو مجھ کو ایسا لگتا ہے

    عاطف سعید
     

اس صفحے کی تشہیر