محسن نقوی ::::: پَل بھر کو مِل کے اجرِ شِناسائی دے گیا ::::: Mohsin Naqvi

طارق شاہ نے 'پسندیدہ کلام' کی ذیل میں اس موضوع کا آغاز کیا، ‏مئی 24, 2015

  1. طارق شاہ

    طارق شاہ محفلین

    مراسلے:
    10,642
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Bookworm


    غزلِ
    محسن نقوی

    پَل بھر کو مِل کے اجْرِ شِناسائی دے گیا
    اِک شخص، ایک عُمر کی تنہائی دے گیا

    آیا تھا شوقِ چارہ گری میں کوئی، مگر
    کُچھ اور دِل کے زخْم کو گہرائی دے گیا

    بِچھڑا، تو دوستی کے اثاثے بھی بَٹ گئے
    شُہرت وہ لے گیا، مجھے رُسوائی دے گیا

    کِس کی برہنگی تِری پوشاک بن گئی ؟
    کِس کا لہُو تھا، جو تجھے رعنائی دے گیا

    اب گِن رہا ہُوں چاک گریباں کی دھجّیاں
    دِیوانگی کا شوق، یہ دانائی دے گیا

    تیرے بَدن کا لمْس، کہاں یاد تھا مجھے
    جھونْکا ہَوا کا درسِ پذِیرائی دے گیا

    کیوں کر نہ زندگی سے زیادہ عزیز ہو !
    مُحسن ! یہ زخم بھی تو مِرا بھائی دے گیا

    محسن نقوی
     
    • زبردست زبردست × 1

اس صفحے کی تشہیر