پسِ انداز موسم نے نظموں کا انتخاب۔۔۔احمد فراز

محمد بلال اعظم نے 'اردو شاعری' کی ذیل میں اس موضوع کا آغاز کیا، ‏دسمبر 7, 2012

  1. محمد بلال اعظم

    محمد بلال اعظم لائبریرین

    مراسلے:
    10,288
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Angelic
    السلام علیکم!
    احمد فراز کی نظمیں
    ٹائپنگ کا دوسرا زینہ​
    "پسِ انداز موسم" سے انتخاب
    استادِ محترم الف عین صاحب
    فاتح بھائی
    قیصرانی بھائی
    مقدس آپی

    نوٹ: تبصرہ جات کے لئے یہ دھاگہ استعمال کیا جائے۔
     
    • زبردست زبردست × 1
  2. محمد بلال اعظم

    محمد بلال اعظم لائبریرین

    مراسلے:
    10,288
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Angelic
    بن باس کی ایک شام۔۔۔

    یہ آخری ساعت شام کی ہے
    یہ شام جو ہے مہجوری کی
    یہ شام اپنوں سے دوری کی

    اس شام افق کے ہونٹوں پر
    جو لالی ہے زہریلی ہے
    اس شام نے میری آنکھوں سے
    صہبائے طرب سب پی لی ہے
    یہ شام غَضب تنہائی کی
    پت جڑ کی ہوا برفیلی ہے
    اس شام کی رنگت پیلی ہے
    اس شام فقط آواز تری
    کچھ ایسے سنائی دیتی ہے
    آواز دکھائی دیتی ہے

    یہ آخری ساعت شام کی ہے
    یہ شام بھی تیرے نام کی ہے
    ٭٭٭​
     
  3. محمد بلال اعظم

    محمد بلال اعظم لائبریرین

    مراسلے:
    10,288
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Angelic
    مرثیہ

    وہ زخمِ انتظار کی لذّت بھی دے گیا
    اب نامہ بر کی راہ نہ دیکھا کریں گے ہم

    وہ کس طرح ملا تھا جدا کیسے ہو گیا
    سوچا تھا یہ سوال نہ سوچا کریں گے ہم

    اے زندگی جب اس سے وفا کر سکی نہ تو
    پھر تُو بتا کہ تجھ سے وفا کیا کریں گے ہم
    ٭٭٭
     
  4. محمد بلال اعظم

    محمد بلال اعظم لائبریرین

    مراسلے:
    10,288
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Angelic
    جس طرح کوئی کہے۔۔۔

    اور ترے شہر سے جب رختِ سفر باندھ لیا
    در و دیوار پہ حسرت کی نظر کیا کرتے
    چاند کجلائی ہوئی شام کی دہلیز پہ تھا
    اس گھڑی بھی ترے مجبورِ سفر کیا کرتے
    دل ٹھہر جانے کو کہتا تھا مگر کیا کرتے

    "ہم نے جب وادئ غربت میں قدم رکھا تھا"
    جس طرح یادِ وطن آئی تھی سمجھانے کو
    کچھ اسی طرح کی کیفیتِ جاں آج بھی ہے
    جس طرح کوئی قیامت ہو گزر جانے کو
    جس طرح کوئی کہے پھر سے پلٹ آنے کو
    (واشنگٹن)
    ٭٭٭​
     
  5. محمد بلال اعظم

    محمد بلال اعظم لائبریرین

    مراسلے:
    10,288
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Angelic
    شہر نامہ
    (اوجڑی کیمپ کے حوالے سے)

    وہ عجیب صبحِ بہار تھی
    کہ سحر سے نوحہ گری رہی
    مری بستیاں تھیں دُھواں دُھواں
    مرے گھر میں آگ بھری رہی

    مرے راستے تھے لہو لہو
    مرا قریہ قریہ فگار تھا
    یہ کفِ ہوا پہ زمین تھی
    وہ فلک کہ مشتِ غبار تھا

    کئی آبشار سے جسم تھے
    کہ جو قطرہ قطرہ پگھل گئے
    کئی خوش جمال طلسم تھے
    جہیں گرد باد نگل گئے

    کوئی خواب نوکِ سناں پہ تھا
    کوئی آرزو تہِ سنگ تھی
    کوئی پھُول آبلہ آبلہ
    کوئی شاخ مرقدِ رنگ تھی

    کئی لاپتہ میری لعبتیں
    جو کسی طرف کی نہ ہو سکیں
    جو نہ آنے والوں کے ساتھ تھیں
    جو نہ جانے والوں کو رو سکیں

    کئی تار ساز سے کٹ گئے
    کسی مطربہ کی رگِ گلو
    مئے آتشیں میں وہ زہر تھا
    کہ تڑخ گئے قدح و سبو

    کوئی نَے نواز تھا دم بخود
    کہ نفس سے حدّتِ جاں گئی
    کوئی سر بہ زانو تھا باربدؔ
    کہ صدائے دوست کہاں گئی

    کہیں نغمگی میں وہ بَین تھے
    کہ سماعتوں نے سُنے نہیں
    کہیں گونجتے تھے وہ مرثیے
    کہ انیسؔ نے بھی کہے نہیں

    یہ جو سنگ ریزوں کے ڈھیر ہیں
    یہاں موتیوں کی دکان تھی
    یہ جو سائبان دھوئیں کے ہیں
    یہاں بادلوں کی اڑان تھی

    جہاں روشنی ہے کھنڈر کھنڈر
    یہاں قمقموں سے جوان تھے
    جہاں چیونٹیاں ہوئیں خیمہ زن
    یہاں جگنوؤں کے مکان تھے

    کہیں آبگینہ خیال کا
    کہ جو کربِ ضبط سے چور تھا
    کہیں آئینہ کسی یاد کا
    کہ جو عکسِ یار سے دور تھا

    مرے بسملوں کی قناعتیں
    جو بڑھائیں ظلم کے حوصلے
    مرے آہوؤں کا چکیدہ خوں
    جو شکاریوں کو سراغ دے

    مری عدل گاہوں کی مصلحت
    مرے قاتلوں کی وکیل ہے
    مرے خانقاہوں کی منزلت
    مری بزدلی کی دلیل ہے

    مرے اہلِ حرف و سخن سرا
    جو گداگروں میں بدل گئے
    مرے ہم صفیر تھے حیلہ جُو
    کسی اور سمت نکل گئے

    کئی فاختاؤں کی چال میں
    مجھے کرگسوں کا چلن لگا
    کئی چاند بھی تھے سیاہ رو
    کئی سورجوں کو گہن لگا

    کوئی تاجرِ حَسَب و نَسَب
    کوئی دیں فروشِ قدیم ہے
    یہاں کفش بر بھی امام ہیں
    یہاں نعت خواں بھی کلیم ہے

    کوئی فکر مند کلاہ کا
    کوئی دعویٰ دار قبا کا ہے
    وہی اہلِ دل بھی ہیں زیب تن
    جو لباس اہلِ ریا کا ہے

    مرے پاسباں ، مرے نقب زن
    مرامُلک مِلکِ یتیم ہے
    مرا دیس میرِ سپاہ کا
    مرا شہر مالِ غنیم ہے

    جو روش ہے صاحبِ تخت کی
    سو مصاحبوں کا طریق ہے
    یہاں کوتوال بھی دُزدِ شب
    یہاں شیخِ دیں بھی فریق ہے

    یہاں سب کے نرخ جدا جدا
    اسے مول لو اسے تول دو
    جو طلب کرے کوئی خوں بہا
    تو دہن خزانے کا کھول دو

    وہ جو سرکشی کا ہو مرتکب
    اسے قمچیوں سے زبوں کرو
    جہاں خلقِ شہر ہو مشتعل
    اسے گولیوں سے نگوں کرو

    مگر ایسے ایسے غنی بھی تے
    اسی قحط زارِ دمشق میں
    جنہیں کوئے یار عزیز تھا
    جو کھڑے تھے مقتلِ عشق میں

    کوئی بانکپن میں تھا کوہکن
    تو جنوں میں قیس سا تھا کوئی
    جو صراحیاں لیے جسم کی
    مئے ناب خوں سے بھری ہوئی

    تھے صدا بلب کہ پیو پیو
    یہ سبیل اہلِ صفا کی ہے
    یہ نشید نوشِ بدن کرو
    یہ کشید تاکِ وفا کی ہے

    کوئی تشنہ لب ہی نہ تھا یہاں
    جو پکارتا کہ اِدھر اِدھر
    سبھی مفت بر تے تماش بیں
    کوئی بزم میں کوئی بام پر

    سبھی بے حسی کے خمار میں
    سبھی اپنے حال میں مست تھے
    سبھی رہروانِ رہِ عدم
    مگر اپنے زعم میں ہست تھے

    سو لہو کے جام انڈیل کر
    مرے جانفروش چلے گئے
    وہ سکوت تھا سرِ میکدہ
    کہ وہ نم بدوش چلے گئے

    کوئی محبسوں میں رسن بہ پا
    کوئی مقتلوں میں دریدہ تن
    نہ کسی کے ہاتھ میں شاخِ نَے
    نہ کسی کے لب پہ گُلِ سخن

    اسی عرصۂ شبِ تار میں
    یونہی ایک عمر گزر گئی
    کبھی روزِ وصل بھی دیکھتے
    یہ جو آرزو تھی وہ مر گئی

    یہاں روزِ حشر بپا ہوئے
    پہ کوئی بھی روزِ جزا نہیں
    یہاں زندگی بھی عذاب ہے
    یہاں موت میں بھی شفا نہیں
    ٭٭٭​
     
  6. محمد بلال اعظم

    محمد بلال اعظم لائبریرین

    مراسلے:
    10,288
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Angelic
    کر گئے کوچ کہاں

    اتنی مدّت دِل آوارہ کہاں تھا کہ تجھے
    اپنے ہی گھر کے در و بام بھلا بیٹھے ہیں
    یاد یاروں نے تو کب حرفِ محبت رکھا
    غیر بھی طعنہ و دشنام بھلا بیٹھے ہیں

    تو سمجھتا تھا کہ یہ در بدری کا عالم
    دور دیسوں کی عنایت تھا سو اب ختم ہوا
    تو نے جانا تھا کہ آشفتہ سَری کا موسم
    دشتِ غربت کی ودیعت تھا سو اب ختم ہوا

    اب جو تو شہرِ نگاراں میں قدم رکھے گا
    ہر طرف کھلتے چلے جائیں گے چہروں کے گلاب
    دوست احباب ترے نام کے ٹکرائیں گے جام
    غیر اغیار چُکائیں گے رقابت کے حساب

    جب بھی گائے گی کوئی غیرتِ ناہید غزل
    سب کو آئے گا نظر شعلۂ آواز میں تُو
    جب بھی ساقی نے صراحی کو دیا اِذنِ خرام
    بزم کی بزم پکارے گی کہ آغاز میں تُو

    مائیں رکّھیں گی ترے نام پہ اولاد کا نام
    باپ بیٹوں کے لیے تیری بیاضیں لیں گے
    جن پہ قدغن ہے وہ اشعار پڑھے کی خلقت
    اور دُکھتے ہوئے دل تجھ کو سلامی دیں گے

    لوگ الفت کے کھلونے لیے بچّوں کی طرح
    کل کے روٹھے ہوئے یاروں کو منا لائیں گے
    لفظ کو بیچنے والے نئے بازاروں میں
    غیرتِ حرف کو لاتے ہوئے شرمائیں گے

    لیکن ایسا نہیں ایسا نہیں اے دل اے دل
    یہ تیرا دیس یہ تیرے در و دیوار نہیں
    اتنے یوسف تو نہ تھے مصر کے بازار میں بھی
    جنس اس درجہ ہے وافر کے خریدار نہیں

    سر کسی کا بھی دکھائی نہیں دیتا ہے یہاں
    جسم ہی جسم ہے دستاریں ہی دستاریں ہیں
    تو کسی قریۂ زنداں میں ہے شاید کے جہاں
    طوق ہی طوق ہیں دیواریں ہی دیواریں ہیں

    اب نہ طفلاں کو خبر ہے کسی دیوانے کی
    اور نہ آواز کہ "او چاک گریباں والے"
    نہ کسی ہاتھ میں پتھر نہ کسی ہاتھ میں پھول
    کر گئے کوچ کہاں کوچۂ جاناں والے
    ٭٭٭​
     
  7. محمد بلال اعظم

    محمد بلال اعظم لائبریرین

    مراسلے:
    10,288
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Angelic
    ابھی ہم خوبصورت ہیں
    (احمد شمیم کی یاد میں)

    ہمارے جسم اوراقِ خزانی ہو گئے ہیں
    اور ردائے زخم سے آراستہ ہیں
    پھر بھی دیکھو تو
    ہماری خوشنمائی پر کوئی حرف
    اور کشیدہ قامتی میں خم نہیں آیا
    ہمارے ہونٹ زہریلی رُتوں سے کاسنی ہیں
    اور چہرے رتجگوں کی شعلگی سے
    آبنوسی ہو چکے ہیں
    اور زخمی خواب
    نادیدہ جزیروں کی زمیں پر
    اس طرح بکھرے پڑے ہیں
    جس طرح طوفاں زدہ کشتی کے ٹکڑوں کو
    سمندر ساحلوں پر پھینک دیتا ہے
    لہو کی بارشیں
    یا خودکشی کی خواہشیں تھیں
    اس اذیت کے سفر میں
    کون سا موسم نہیں آیا
    مگر آنکھوں میں نم
    لہجے میں سم
    ہونٹوں پہ کوئی نغمۂ ماتم نہیں آیا
    ابھی تک دل ہمارے
    خندۂ طفلاں کی صورت بے کدورت ہیں
    ابھی ہم خوبصورت ہیں

    زمانے ہو گئے
    ہم کوئے جاناں چھوڑ آئے تھے
    مگر اب بھی
    بہت سے آشنا نا آشنا ہمدم
    اور ان کی یاد کے مانوس قاصد
    اور ان کی چاہتوں کے ہجر نامے
    دور دیسوں سے ہماری اور آتے ہیں
    گلابی موسموں کی دُھوپ
    جب نو رُستہ سبزے پر قدم رکھتی ہوئی
    معمورۂ تن میں در آتی ہے
    تو برفانی بدن میں
    جوئے خوں آہستگی سے گنگناتی ہے
    اُداسی کا پرندہ
    چپ کے جنگل میں
    سرِ شاخِ نہالِ غم چہکتا ہے
    کوئی بھولا ہوا بِسرا ہوا دکھ
    آبلہ بن کر تپکتا ہے
    تو یوں لگتا ہے
    جیسے حرف اپنے
    زندہ آوازوں کی صورت ہیں
    ابھی ہم خوبصورت ہیں

    ہماری خوشنمائی رفِ حق کی رونمائی ہے
    اسی خاطر تو ہم آشفتہ جاں
    عشّاق کی یادوں میں رہتے ہیں
    کہ جہ اُن پر گزرتی ہے وہ کہتے ہیں
    ہماری حرف سازی
    اب بھی محبوبِ جاں ہے
    شاعری شوریدگانِ عشق کے وردِ زباں ہے
    اور گلابوں کی طرح شاداب چہرے
    لعل و مرجاں کی طرح لب
    صندلیں ہاتھوں سے
    چاہت اور عقیدت کی بیاضوں پر
    ہمارے نام لکھتے ہیں
    سبھی درد نا آشنا
    ایثار مشرب
    ہم نفس اہلِ قفس
    جب مقتلوں کی سمت جاتے ہیں
    ہمارے بیت گاتے ہیں
    ابھی تک ناز کرتے ہیں
    سب اہلِ قافلہ
    اپنے حدی خوانوں پر آشفتہ کلاموں پر
    ابھی ہم دستخط کرتے ہیں اپنے قتل ناموں پر
    ابھی ہم آسمانوں کی امانت
    اور زمینوں کی ضرورت ہیں
    ابھی ہم خوبصورت ہیں
    ٭٭٭​
     
  8. محمد بلال اعظم

    محمد بلال اعظم لائبریرین

    مراسلے:
    10,288
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Angelic
    وہ لمحے کتنے دروغ گو تھے

    تمہاری پوروں کا لمس ابھی تک
    مری کفِ دست پر ہے
    اور میں یہ سوچتا ہوں
    وہ لمحے کتنے دروغ گو تھے
    وہ کہہ گئے تھے
    کہ اب کے جو ہاتھ تیرے ہاتھوں کو چھو گئے ہیں
    تمام ہونٹوں کے سارے لفظوں سے معتبر ہیں
    وہ کہہ گئے تھے
    تمہاری پوریں
    جو میرے ہاتھوں کو چھو رہی تھیں
    وہی تو قسمت تراش ہیں
    اور اپنی قسمت کو
    سارے لوگوں کی قسمتوں سے بلند جانو
    ہماری مانو
    تو اَب کسی اور ہاتھ کو ہاتھ مت لگانا
    میں اس سمے سے
    تمام ہاتھوں
    وہ ہاتھ بھی
    جن میں پھول
    شاخوں سے بڑھ کے لطفِ نمو اٹھائیں
    وہ ہاتھ بھی جو سدا کے محروم تھے
    اور ان کی ہتھیلیاں زخم زخم تھیں
    اور وہ ہاتھ بھی جو چراغ جیسے تھے
    اور رستے میں سنگ فرسنگ کی طرح جا بجا گڑے تھے
    وہ ہاتھ بھی
    جن کے ناخنوں کے نشان
    معصوم گردنوں پر مثالِ طوقِ ستم پڑے تھے
    تمام نا مہرباں اور مہربان ہاتھوں سے
    دست کش یوں ہو رہا تھا جیسے
    یہ مٹھّیاں میں نے کھول دیں تو
    وہ ساری سچّائیوں کے موتی
    مسرّتوں کے تمام جگنو
    جو بے یقینی کے جنگوں میں
    یقین کا راستہ بناتے ہیں
    روشنی کی لکیر کا قافلہ بناتے ہیں
    میرے ہاتھوں سے روٹھ جائیں گے
    پھر نہ تازہ ہوا چلے گی
    نہ کوئی شمعِ صدا جلے گی
    میں ضبط اور انتظار کے اس حصار میں مدتوں رہا ہوں
    مگر جب اک شام
    وہ پت جھڑ کی آخری شام تھی
    ہوا اپنا آخری گیت گا رہی تھی
    مرے بدن میں مرا لہو خشک ہو رہا تھا
    تو مٹھّیاں میں نے کھول دیں
    اور میں نے دیکھا
    کہ میرے ہاتھوں میں
    کوئی جگنو
    نہ کوئی موتی
    ہتھیلیوں پر فقط مری نامراد آنکھیں دھری ہوئی تھیں
    اور ان میں
    قسمت کی سب لکیریں مری ہوئی تھیں
    ٭٭٭​
     
  9. محمد بلال اعظم

    محمد بلال اعظم لائبریرین

    مراسلے:
    10,288
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Angelic
    اے میرے وطن کے خوش نواؤ!
    (واشنگٹن میں پاکستانی شعراء کی آمد کے موقع پر لکھی گئی)

    اک عمر کے بعد تم ملے ہو
    اے میرے وطن کے خوش نواؤ
    ہر ہجر کا دن تھا حشر کا دن
    دوزخ تھے فراق کے الاؤ
    روؤں کے ہنسوں سمجھ نہ آئے
    ہاتھوں میں ہیں پھول دل میں گھاؤ

    تم آئے تو ساتھ ہی تمہارے
    بچھڑے ہوئے یار یاد آئے
    اک زخم پہ تم نے ہاتھ رکھا
    اور مجھ کو ہزار یاد آئے
    وہ سارے رفیق پا بجولاں
    سب کشتۂ دار یاد آئے

    ہم سب کا ہے ایک ہی قبیلہ
    اک دشت کے سارے ہم سفر ہیں
    کچھ وہ ہیں جو دوسروں کی خاطر
    آشفتہ نصیب و دربدر ہیں
    کچھ وہ ہیں جو خلعت و قبا سے
    ایوانِ شہی میں معتبر ہیں

    سقراط و مسیح کے فسانے
    تم بھی تو بہت سنا رہے تھے
    منصور و حسین سے عقیدت
    تم بھی تو بہت جتا رہے تھے
    کہتے تھے صداقتیں اَمر ہیں
    اَوروں کو یہی بتا رہے تھے

    اور اب جو ہیں جا بجا صلیبیں
    تم بانسریاں بجا رہے ہو
    اور اب جو ہے کربلا کا نقشہ
    تم مدحِ یزید گا رہے ہو
    جب سچ تہہِ تیغ ہو رہا ہے
    تم سچ سے نظر چُرا رہے ہو

    جی چاہتا ہے کہ تم سے پوچھوں
    کیا راز اس اجتناب میں ہے
    تم اتنے کٹھور تو نہیں تھے
    یہ بے حسی کس حساب میں ہے
    تم چپ ہو تو کس طرح سے چپ ہو
    جب خلقِ خدا عذاب میں ہے

    سوچو تو تمہیں ملا بھی کیا ہے
    اِک لقمۂ تر کی قیمت
    غیرت کی فروخت کرنے والو
    اک کاسۂ زَر قلم کی قیمت
    پندار کے تاجرو بتاؤ
    دربان کا در قلم کی قیمت

    ناداں تو نہیں ہو تم کہ سمجھوں
    غفلت سے یہ زہر گھولتے ہو
    تھامے ہوئے مصلحت کی میزاں
    ہر شعر کا وزن تولتے ہو
    ایسے میں سکوت، چشم پوشی
    ایسا ہے کہ جھوٹ بولتے ہو

    اک عمر س عقل و صدق کی لاش
    غاصب کی صلیب پر جڑی ہے
    اس وقت بھی تم غزل سرا ہو
    جب ظلم کی ہر گھڑی کڑی ہے
    جنگل پہ لپک رہے ہیں شعلے
    طاؤس کو رقص کی پڑی ہے

    ہے سب کو عزیز کوئے جاناں
    اس راہ میں سب جئے مرے ہیں
    خود میری بیاضِ شعر میں بھی
    بربادئ دل کے مرثیے ہیں
    میں نے بھی کیا ہے ٹوٹ کر عشق
    اور ایک نہیں کئی کیے ہیں

    لیکن غمِ عاشقی نہیں ہے
    ایسا جو سبک سری سکھائے
    یہ غم تو وہ خوش مآل غم ہے
    جو کوہ سے جُوئے شیر لائے
    تیشے کا ہنر جنوں کو بخشے
    جو قیس کو کوہکن بنائے

    اے حیلہ گرانِ شہرِ شیریں
    آیا ہوں پہاڑ کاٹ کر میں
    ہے بے وطنی گواہ میری
    ہر چند پھرا ہوں در بدر میں
    بیچا نہ غرورِ نَے نوازی
    ایسا بھی نہ تھا سبک ہنر میں

    تم بھی کبھی ہمنوا تھے میرے
    پھر آج تمہیں یہ کیا ہُوا ہے
    مٹی کے وقار کو نہ بیچو
    یہ عہدِ ستم، جہاد کا ہے
    دریوزہ گری کے مقبروں سے
    زنداں کی فصیل خوشنما ہے


    کب ایک ہی رُت رہی ہمیشہ
    یہ ظلم کی فصل بھی کٹے گی
    جب حرف کہے گا قم بہ اِذنی
    مرتی ہوئی خاک جی اٹھے گی
    لیلائے وطن کے پیرہن میں
    بارود کی بُو نہیں رہے گی

    پھر باندھیں گے ابروؤں کے دوہے
    پھر مدحِ رخ و دہن کہیں گے
    ٹھہرائیں گے ان لبوں کو مطلع
    جاناں کے لیے سخن کہیں گے
    افسانۂ یار و قصۂ دل
    پھر انجمن انجمن کہیں گے
    ٭٭٭​
     
  10. محمد بلال اعظم

    محمد بلال اعظم لائبریرین

    مراسلے:
    10,288
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Angelic
    اے میرے سارے لوگو!

    اب مرے دوسرے بازوپہ وہ شمشیر ہے جو
    اس سے پہلے بھی مرا نصف بدن کاٹ چکی
    اسی بندوق کی نالی ہے مری سمت کہ جو
    اس سے پہلے مری شہ رگ کا لہو چاٹ چکی

    پھر وہی آگ در آئی ہے مری گلیوں میں
    پھر مرے شہر میں بارُود کی بُو پھیلی ہے
    پھر سے "تُو کون ہے میں کون ہوں" آپس میں سوال
    پھر وہی سوچ میانِ من و تُو پھیلی ہے

    مری بستی سے پرے بھی مرے دشمن ہوں گے
    پر یہاں کب کوئی اغیار کا لشکر اترا
    آشنا ہاتھ ہی اکثر مری جانب لپکے
    میرے سینے میں سدا اپنا ہی خنجر اترا

    پھر وہی خوف کی دیوار تذبذب کی فضا
    پھر ہوئیں عام وہی اہلِ ریا کی باتیں
    نعرۂ حُبِّ وطن مالِ تجارت کی طرح
    جنسِ ارزاں کی طرح دینِ خدا کی باتیں

    اس سے پہلے بھی تو ایسی ہی گھڑی آئی تھی
    صبحِ وحشت کی طرح شامِ غریباں کی طرح
    اس سے پہلے بھی تو پیمانِ وفا ٹوٹے تھے
    شیشۂ دل کی طرح آئینۂ جاں کی طرح

    پھر کہاں ہیں احمریں ہونٹوں پہ دعاؤں کے دیے
    پھر کہاں شبنمیں چہروں پہ رفاقت کی ردا
    صندلیں پاؤں سے مستانہ روی روٹھ گئی
    مرمریں ہاتھوں پہ جل بُجھ گیا انگارِ حنا

    دل نشیں آنکھوں میں فرقت زدہ کاجل رویا
    شاخِ بازو کے لئے زلف کا بادل رویا
    مثلِ پیراہنِ گل پھر سے بدن چاک ہوئے
    جیسے اپنوں کی کمانوں میں ہوں اغیار کے تیر
    اس سے پہلے بھی ہوا چاند محبت کا دونیم
    نوکِ دشنہ سے کھچی تھی مری دھرتی پہ لکیر

    آج ایسا نہیں ، ایسا نہیں ہونے دینا
    اے مرے سوختہ جانو مرے پیارے لوگو
    اب کے گر زلزلے آئے تو قیامت ہوگی
    میرے دلگیر مرے درد کے مارے لوگو
    کیسی غاصب کسی ظالم کسی قاتل کے لیے
    خود کو تقسیم نہ کرنا مرے سارے لوگو
    ٭٭٭​
     
  11. محمد بلال اعظم

    محمد بلال اعظم لائبریرین

    مراسلے:
    10,288
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Angelic
    نامۂ جاناں

    مدتوں بعد ملا نامۂ جاناں لیکن
    نہ کوئی دل کی حکایت نہ کوئی پیار کی بات
    نہ کسی حرف میں محرومئ جاں کا قصّہ
    نہ کسی لفظ میں بھولے ہوئے اقرار کی بات
    نہ کسی سطر پہ بھیگے ہوئے کاجل کی لکیر
    کہ کہیں ذکر جدائی کا نہ دیدار کی بات

    بس وہی ایک مضموں، کہ مرے شہر کے لوگ
    کیسے سہمے ہوئے رہتے ہیں گھروں میں اپنے
    اتنی بے نام خموشی ہے کہ دیوانے بھی
    کوئی سودا نہیں رکھتے سروں میں اپنے
    اب قفس ہی کو نشیمن کا بدل جان لیا
    اب کہاں طاقتِ پرواز پروں میں اپنے

    وہ جو دو چار سُبو کش تھے کہ جن کے دم سے
    گردشِ جام بھی تھی رونقِ میخانہ بھی تھی
    وہ جو دو چار نوا گر تھے کہ جن کے ہوتے
    حرمتِ نغمہ بھی تھی جرأتِ رندانہ بھی تھی
    کوئی مقتل کوئی زنداں کوئی پردیس گیا
    چند ہی تھے کہ روش جن کی جداگانہ تھی

    اب تو بس بردہ فروشی ہے جدھر بھی جاؤ
    اب تو ہر کوچہ و کُو مصر کا بازار لگے
    سرِ دربار ستادہ ہیں بیاضیں لے کر
    وہ جو کچھ دوست کبھی صاحبِ کردار لگے
    غیرتِ عشق کہ کل مالِ تجارت میں نہ تھی
    آج دیکھو تو ہیں انبار کے انبار لگے

    ایسا آسیب زدہ شہر کہ دیکھا نہ سنا
    ایسی دہشت ہے کہ پتھر ہوئے سب کے بازو
    در و دیوارِ خرابات وہی ہیں لیکن
    نہ کہیں قلقلِ مینا ہے نہ گل بانگِ سبو
    بے دلی شیوۂ اربابِ محبت ٹھہرا
    اب کوئی آئے کہ جائے "تَنَنا ہُو یا ہُو"
    ٭٭٭​
     
  12. محمد بلال اعظم

    محمد بلال اعظم لائبریرین

    مراسلے:
    10,288
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Angelic
    مسندِ پیرِ مغاں

    اُڑا کے بادِ فنا لے گئی ہے شہر کا شہر
    نہ بام و در رہے باقی نہ جسم و جاں میرے
    کسے کسے میں پکاروں کسے کسے روؤں
    تڑپ رہے ہیں شناسا کہاں کہاں میرے

    کسی کا کاسۂ سر ہے فضا میں سر گرداں
    کوئی نگارِ دل آرا و دو نیم ہو کے گرا
    تڑخ گیا ہے کسی کا بدن صراحی سا
    کسی کا شیشۂ جاں دستِ ناتواں سے گرا

    دلوں پہ برق گری سنگِ محتسب کی طرح
    نہ کوئی رند نہ رطلِ گراں سلامت ہے
    بساطِ میکدہ ویراں ہوئی تو غم کیسا
    خوشا کہ مسندِ پیرِ مغاں سلامت ہے
    ٭٭٭​
     
  13. محمد بلال اعظم

    محمد بلال اعظم لائبریرین

    مراسلے:
    10,288
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Angelic
    بیادِ فیض

    قلم بدست ہوں حیران ہوں کہ کیا لکھوں
    میں تیری بات کے دنیا کا تذکرہ لکھوں

    لکھوں کہ تُو نے محبت کی روشنی لکھی
    ترے سخن کو ستاروں کا قافلہ لکھوں

    جہاں یزید بہت ہوں، حسین اکیلا ہو
    تو کیوں نہ اپنی زمیں کو بھی کربلا لکھوں

    ترے بغیر ہے ہر نقش "نقشِ فریادی"
    تو پھول "دستِ صبا" پر ہے آبلہ لکھوں

    مثالِ "دستِ تہہِ سنگ" تھی وفا ان کی
    سو کس طرح انہیں یارانِ با صفا لکھوں

    حدیثِ کوچۂ قاتل ہے نامۂ زنداں
    سو اس کو قصۂ تعزیرِ ناروا لکھوں

    جگہ جگہ ہیں "صلیبیں مرے دریچے میں"
    سو اسمِ عیسیٰ و منصور جا بجا لکھوں

    گرفتہ دل ہے بہت "شامِ شہر یاراں" آج
    کہاں ہے تُو کہ تجھے حالِ دلبرا لکھوں

    کہاں گیا ہے "مرے دل مرے مسافر" تُو
    کہ میں تجھے رہ و منزل کا ماجرا لکھوں

    تو مجھ کو چھوڑ گیا لکھ کے "نسخہ ہائے وفا"
    میں کس طرح تجھے اے دوست بے وفا لکھوں

    "شہید جسم سلامت اٹھائے جاتے ہیں"
    خدا نکردہ کہ میں تیرا مرثیہ لکھوں
    ٭٭٭​
    نوٹ:
    استادِ محترم الف عین صاحب، اس مصرع کے لئے
    جہاں یزید بہت ہوں، حسین اکیلا ہو​
    مجھے رضی اللہ تعالیٰ عنہ کی مختصر شکل نہیں ملی، لہٰذا آپ ڈال دیجیے گا۔
     
  14. محمد بلال اعظم

    محمد بلال اعظم لائبریرین

    مراسلے:
    10,288
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Angelic
    پردیس میں جاتے سال کی آخری رات

    جاتے سال کی آخری شب ہے
    چہل چراغ کی روشنیوں سے
    بادۂ گلگلوں کی رنگت سے
    جگر جگر کرتے پیمانے
    جیسے جاتے سال کی گھڑیاں
    پون سے دیپ کی آخری قُربت
    جیسے دید کی آخری ساعت
    جلتی بُجھتی سی پھلجڑیاں
    آؤ آخری رات ہے سال کی
    دل کہتا ہے شوق وصال کی
    سب شمعیں ساری خوشبوئیں
    تن من میں رس بس جانے دو
    دیکھو آج کی رات ستارے
    گُم صُم ہیں آکاش کنارے
    جاگ رہے ہیں سوچ رہے ہیں
    جاتے سال کی آخری شب ہے
    کل کا سورج کیسا ہو گا
    ٭٭٭​
     
  15. محمد بلال اعظم

    محمد بلال اعظم لائبریرین

    مراسلے:
    10,288
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Angelic
    ابو جہاد

    ابو جہاد مرا دل لہو لہو ہے مگر
    معاف کر کہ ترے دشمنوں کے ساتھ ہیں ہم
    ترا جنوں ترا ایثار محترم لیکن
    جو سچ کہوں تو ترے قاتلوں کے ساتھ ہیں ہم

    ہمی تو ہیں وہ ستمگر کہ مصلحت جن کی
    دراز دستئ قاتل کا دل بڑھاتی ہے
    ہم اس قبیلۂ عشاق سے نہیں کہ جنہیں
    ندیمِ دوست سے خوشبوئے دوست آتی ہے

    جو ترے دل میں تپکتا تھا آبلے کی طرح
    وہی تو دُکھ ہے جو چھالا مری زبان کا ہے
    ہم اک سناں کے ہدف ایک تیر کے بسمل
    اگر ہے فرق تو بس ہاتھ یا کمان کا ہے

    تُو دشتِ بے وطنی میں لہو لہان ہوا
    ہم اپنے گھر میں ہی سینہ فگار پھرتے ہیں
    غلام گردشِ زنداں سے صحنِ مقتل تک
    ابھی رسن بہ گلو میرے یار پھرتے ہیں

    وہ جس نے خون اچھالا ترے شہیدوں کا
    اُسی کی تیغ ہمارے سروں پہ چمکی ہے
    وہی تو ایک ہے جلّاد جس کے ہاتھوں نے
    ہر اک چراغ سے چہرے کی لو قلم کی ہے

    ابو جہاد ہمارا جہاد ایک سا ہے
    وہ سر زمین تری ہو کہ سر زمیں میری
    رہِ وفا میں ترا خوں بہے کہ میرا لہو
    دریدہ ہو ترا دامن کہ آستیں میری

    چلیں گے ساتھ رفاقت کے پرچموں کے لیے
    جہاں جہاں سے بھی ساتھی ہمیں پکاریں گے
    اگر ہے دشنہ و خنجر زبان قاتل کی
    تو ہم بھی حرفِ وفا کی زرہ سنواریں گے
    ٭٭٭​
     
  16. محمد بلال اعظم

    محمد بلال اعظم لائبریرین

    مراسلے:
    10,288
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Angelic
    ہچ ہائیکر

    میں کہ دو روز کا مہمان ترے شہر میں تھا
    اب چلا ہوں تو کوئی فیصلہ کر بھی نہ سکوں
    زندگی کی یہ گھڑی ٹوٹتا پل ہو جیسے
    کہ ٹھہر بھی نہ سکوں اور گزر بھی نہ سکوں

    مہرباں ہیں تری آنکھیں مگر اے مونسِ جاں
    ان سے ہر زخمِ تمنّا تو نہیں بھر سکتا
    ایسی بے نام مسافت ہو تو منزل کیسی
    کوئی بستی ہو بسیرا ہی نہیں کر سکتا

    ایک مُدّت ہوئی لیلائے وطن سے بچھڑے
    اب بھی رِستے ہیں مگر زخم پرانے میرے
    جب سے صرصر مرے گلشن میں چلی ہے تب سے
    برگِ آوارہ کی مانند ٹھکانے میرے

    آج اس شہر کل اُس شہر کا رستہ لینا
    "ہائے کیا چیز غریب الوطنی ہوتی ہے"
    یہ سفر اتنا مسلسل ہے کہ تھک ہار کے بھی
    "بیٹھ جاتا ہوں جہاں چھاؤں گھنی ہوتی ہے"

    تو بھی ایسا ہی دل آرام شجر ہے جس نے
    مجھ کو اس دشتِ قیامت سے بچائے رکھا
    ایک آشفتہ سر و آبلہ پا کی خاطر
    کبھی زلفوں کبھی پلکوں کو بچھائے رکھا

    دکھ تو ہر وقت تعاقب میں رہا کرتے ہیں
    یوں پناہوں میں کہاں تک کوئی رہ سکتا ہے
    کب تلک ریت کی دیوار سنبھالے کوئی
    وہ تھکن ہے کہ مرا جسم بھی ڈھے سکتا ہے

    اجنبی شہر نئے لوگ پرائی گلیاں
    زندگی ایسے قرائن میں کٹے گی کیسے
    تیری چاہت بھی مقدّس تری قربت بھی بہشت
    دیس پردیس کی تفریق گھٹے گی کیسے

    ناگزیر آج ہُوا جیسے بچھڑنا اپنا
    کل کسی روز ملاقات بھی امکان میں ہے
    میں یہ پیراہنِ جاں کیسے بدل سکتا ہوں
    کہ ترا ہاتھ مرے دل کے گریبان میں ہے
    ٭٭٭​
     
  17. محمد بلال اعظم

    محمد بلال اعظم لائبریرین

    مراسلے:
    10,288
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Angelic
    ٹائپنگ مکمل
    میڈیا فائر لنک

    استادِ محترم الف عین صاحب
    فاتح بھائی
    قیصرانی بھائی
    مقدس آپی

    لیکن اس کتاب میں صرف 14 یا 15 نظمیں ہیں لہٰذا میرے خیال میں یہ بہتر ہو گا کہ پسِ انداز موسم اور کچھ دوسری کتابوں کو ایک جگہ کر دیا جائے اور فراز کی نظموں سے ہی کوئی عنوان رکھ لیا جائے۔
    بہرحال اب دیکھتا ہوں کہ، اگلے مرحلے میں کس کی شروع کرنی ہے۔
     

اس صفحے کی تشہیر