1. اردو ویب کے سالانہ اخراجات کی مد میں فراخدلانہ تعاون پر احباب کا بے حد شکریہ نیز ہدف کی تکمیل پر مبارکباد۔ مزید تفصیلات ملاحظہ فرمائیں!

    $500.00
    اعلان ختم کریں

سعود عثمانی نشیبِ عُمر ہے' کیسے یہاں چلا جائے۔سعود عثمانی

چوہدری لیاقت علی نے 'پسندیدہ کلام' کی ذیل میں اس موضوع کا آغاز کیا، ‏نومبر 13, 2015

  1. چوہدری لیاقت علی

    چوہدری لیاقت علی محفلین

    مراسلے:
    305
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Bookworm
    نشیبِ عُمر ہے' کیسے یہاں چلا جائے
    چلا نہ جائے مگر کارواں چلا جائے

    ہے سبز جھیل کے اُس پار شہر زاد کا شہر
    اُدھر چلیں کہ سر ِ داستاں چلا جائے ؟

    جَھمَک رہی ہے کسی قریہ ء جمال کی لَو
    تھکن بہت ہے مگر' ہم رَہاں !!! چلا جائے

    میں خود سے مِل ہی نہ پایا تری مَحبّت میں
    جہاں کوئی بھی نہ ہو' اب وہاں چلا جائے

    پکارتا ہے مسلسل وراے جسم کوئی
    تو کیا خیال ہے؟ اے میری جاں ! چلا جائے

    (سعُودؔ عُثمانی )
     

اس صفحے کی تشہیر