نجمہ انصار نجمہ ::::: سامانِ روشنی شبِ ہجراں نہ ہو سکے ::::: Najma Ansar Najma

طارق شاہ نے 'پسندیدہ کلام' کی ذیل میں اس موضوع کا آغاز کیا، ‏جنوری 16, 2016

  1. طارق شاہ

    طارق شاہ محفلین

    مراسلے:
    10,627
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Bookworm

    غزل
    نجمہ نجمہ انصار

    سامانِ روشنی شبِ ہجراں نہ ہو سکے
    پلکوں پہ یہ چراغ فروزاں نہ ہو سکے

    اب کے بھی سوگوار رہا موسمِ بہار
    شاخوں پہ پُھول اب کے بھی خنداں نہ ہو سکے

    کرتے رہے جو چاند سِتاروں سے گفتگو
    وہ آشنائے عظمتِ اِنساں نہ ہو سکے

    ہر سِمت چاندنی ہمیں مِلتی خلوُص کی
    پُورے محبتوں کے یہ ارماں نہ ہو سکے

    نقدِ نظر لُٹاتے رہے اہلِ دِل، مگر
    اِنساں کی آبرُو کے نِگہباں نہ ہو سکے

    نجمہ! نوائے شوق ہے بے کیف، بے اثر
    گر نغمہ ریز تارِ رگِ جاں نہ ہو سکے

    نجمہ نجمہ انصار
     

اس صفحے کی تشہیر