میرے لُوں لُوں چیخ پکار وے ۔۔۔فرحت عباس شاہ

محمد بلال اعظم نے 'پنجابی فورم' کی ذیل میں اس موضوع کا آغاز کیا، ‏نومبر 17, 2012

  1. محمد بلال اعظم

    محمد بلال اعظم لائبریرین

    مراسلے:
    10,288
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Angelic
    کبھی سانول موڑ مہار وے

    میرے لُوں لُوں چیخ پکار وے​
    کبھی سانول موڑ مُہار وے​
    مَیں بیچ بڑی منجدھار وے​
    مجھے دریا پار اتار وے​
    میرے ہاتھوں میں چمکے کنگنا​
    مجھے پیا منانے کا ڈھنگ نا​
    میرے ہونٹوں پہ اک مسکان وے​
    تیرے ہاتھوں میں میری جان وے​
    میری زلف نہ چھیڑ ہوا نی​
    آنچل نہ مرا لہرا نی​
    مرا دل ہمراز نہ کرنی​
    مرا پی ناراض نہ کرنی​
    ترے سر پہ حسیں دستار وے​
    ہمیں تیری اداؤں سے پیار وے​
    کہاں کھو گئے تم دلدار وے​
    کہاں جا کے بسایا گھر بار وے​
    کوئی خط پتر نہ تار وے​
    کبھی سانول موڑ مُہار وے​
    میرے لُوں لُوں چیخ پکار وے​
    کبھی سانول موڑ مُہار وے​
    (شاعر: فرحت عباس شاہ)
    (کتاب: صحرا خرید لائے ہیں)
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 3
    • زبردست زبردست × 1

اس صفحے کی تشہیر