منظوم تراجم، فارسی غزلیات خسرو از حکیم شمس الاسلام ابدالی

فرخ منظور نے 'امیرخسرو' کی ذیل میں اس موضوع کا آغاز کیا، ‏اکتوبر 16, 2007

  1. فرخ منظور

    فرخ منظور لائبریرین

    مراسلے:
    12,698
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Cold
    دلم از بخت گہی شاد نبود
    جانم از بند غم آزاد نبود

    دل ہی قسمت سے کبھی شاد نہ تھا
    بندِغم سے کبھی آزاد نہ تھا

    یکدم از عمر گرانی نگذشت
    کان ہمہ ضائع و برباد نبود

    یک نفس عم ِ گذشتہ میں کبھی
    کب کبھی ضائع و برباد نہ تھا

    گر ببینی دل ویران مرا
    گو ئیا ہیچگہ آباد نبود

    دیکھ لے گر دلِ ویراں کو مرے
    تو کہے گا کبھی آباد نہ تھا

    شب ہمی دانم کو آمد و بس
    بیش ازین خویشتم یاد نبود

    رات کو یاد ہے وہ آئے تھے
    اور کچھ اس کے سوا یاد نہ تھا

    ہر چہ میخواست ہمی کرد طبیب
    ناتوان را سر ِ فریاد نبود

    جو بھی چاہا وہ مسیحا نے کیا
    ضعف سے یارائے فریاد نہ تھا
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 6
  2. فرخ منظور

    فرخ منظور لائبریرین

    مراسلے:
    12,698
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Cold
    من از دست دل دوش دیوانہ بودم

    من از دست دل دوش دیوانہ بودم
    ہمہ شب در افسون و افسانہ بودم

    دل کے ہاتھوں یوں میں دیوانہ رہا
    رات بھر افسون و افسانہ رہا

    ز دل شعلہء شوق مز زد بیادش
    بران شعلہء شوق پروانہ بودم

    دل میں اس کی یاد تھی شعلہ فشاں
    عشق میں، مََیں بن کے پروانہ رہا

    بمسجد رود صبح ہر کس بمذہب
    من نا مسلمان بہ بتخانہ بودم

    جا رہے تھے لوگ مسجد کی طرف
    میں روانہ سوئے بت خانہ رہا

    دل و جان و تم با خیالش یکی شد
    ہمین من در آن جمع بیگانہ بودم

    جان و دل اور تن بدن اس کا خیال
    ایک تھے پر میں ہی بیگانہ رہا

    خرابی خسرو نگفتم برویش
    کہ بی ہوش از آں حسن مستانہ بودم

    منہ پہ خسرو نے نہیں کچھ بھی کہا
    بن کے یوں بے ہوش، مستانہ رہا
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 7
  3. فرخ منظور

    فرخ منظور لائبریرین

    مراسلے:
    12,698
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Cold
    زلف از باد دگر باشد و در شانہ دگر

    زلف از باد دگر باشد و در شانہ دگر
    مست بگرفتہ لب ساغر مستانہ دگر

    زلف ہوتی ہے ہوا میں اور زیبِ شانہ اور
    مست کے لب نے چھوا ہے ساغر مستانہ اور

    در غمت جاں زتنم رفت و خیال تو ہماند
    عاقبت خویش دگر باشد و بیگانہ دگر

    تیرے غم میں جاں گئ پھر بھی رہا تیرا خیال
    عاقبت اپنی ہوا کرتی ہے اور بیگانہ اور

    د آرائی بود سوختن است
    کرم شب تاب دگر باشد و پروانہ دگر

    پیار میں خود کو جلانا اور جلنا ہے دگر
    کرمک شب تاب ہے کچھ اور، ہے پروانہ اور

    گفت مجموع دروغ آنچہ گمان می بردند
    کہ چو خسرو نبود عاقل و فرزانہ دگر

    یہ کہا کہ جھوٹ سمجھے ہیں جو رکھتے ہیں گماں
    ہم نے خسرو سا نہیں دیکھا کہیں فرزانہ اور
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 7
  4. فرخ منظور

    فرخ منظور لائبریرین

    مراسلے:
    12,698
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Cold
    منم بخانہ تن اینجا و جاں بجای دگر

    منم بخانہ تن اینجا و جاں بجای دگر
    بدل توئی و سخن بر زباں بجای دگر

    ًمیں گھر میں مکیں ہوں پہ تن و جاں پہ گماں اور
    ہے دل میں بسا تو ہی مگر وردِ زباں اور

    ببوستاں روم از غم ولی چہ سود کہ ہست
    دلم بجای دگر بوستان بجای دگر

    گلشن میں بھی جاؤں تو مجھے فائدہ کیا ہے
    غم دل میں بسا ہو تو گلستاں پہ گماں اور

    مگو کہ یار دگر کن، کنم اگر بینم
    لطافتی کہ تو داری ہمان بجای دگر

    مت کہہ کہ کسی اور کو چاہوں اگر ہو بھی
    ملتا ہے حسیں تجھ سا زمانے میں کہاں اور

    کجابکوے تو ماند نسیم ِ باغ ِ بہشت
    زمین است جای دگر، آسمان بجای دگر

    جنت کو ہوا اور ہے تیری گلی میں
    مٹی کی زمیں اور مگر باغِ جناں اور

    بگو چگونہ توان گفت زندہ خسرو را
    کہ او بجای دگر ماند و جان بجای دگر

    اب تو ہی بتا کس طرح زندہ رہے خسرو
    تھا خود وہ کہیں اور مگر جانِ جہاں اور
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 5
  5. فرخ منظور

    فرخ منظور لائبریرین

    مراسلے:
    12,698
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Cold
    ای سرم را بخاک پات نیاز

    ای سرم را بخاک پات نیاز
    عاشقی را ز سر کنم آغاز

    خاکِ پا تیری میری خوئے نیاز
    عاشقی کا میں پھر کروں آغاز

    گفتی از من نہاں مکن رازت
    کی شنیدی کہ من نگفتم راز

    مجھ سے کہتے ہو راز ِدل نہ چھپا
    کب چھپایا ہے میں نے دل کا راز؟

    یادم آید ز زلف او ای دل
    باز گوئی بما شب است دراز

    یاد کرتا ہے اس کی زلف اے دل
    پھر یہ کہتا ہے میری شب ہے دراز

    گوشہ می گیرم از کماں تو لیک
    میزند غمزہء تو تیرم باز

    چھپ تو جاؤں تیری کماں سے مگر
    مار ڈالے گا غمزہ تیر انداز

    یکدم ای بخت باز روش کن
    چشم محمود را بپای ایاز

    اے مرے بخت پھر سے روشن کر
    چشمِ محمود کو برائے ایاز
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 6
  6. فرخ منظور

    فرخ منظور لائبریرین

    مراسلے:
    12,698
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Cold
    زمن چن دل ربودی، رفت جان نیز

    زمن چن دل ربودی، رفت جان نیز
    کہ در دل داشت شوقت این و آن نیز

    دل تو اڑا لیا تھا گئی جان بھی مزید
    پھر کر دیا ہے بے سروسامان بھی مزید

    ز یاقوت لبت ما را طمع ہا ست
    کزو زندہ اس جان دھم روان نیز

    یاقوت سے لبوں کی ہے خواہش کچھ اس طرح
    زندہ ہے خود بھی اور مری جان بھی مزید

    دلی بودم، شد آن پابند زلفت
    نمی یابم ازو نام و نشان نیز

    دل تھا مگر ہُوا وہ تیری زلف کا اسیر
    نام و نشاں مٹا ہوا، حیران بھی مزید

    سر پابوس تو تنہا نہ دل راست
    کہ مشتاق است جان ناتوان نیز

    سر ہی نہیں ہے دل بھی ہے پابوسِ آرزو
    مشتاق و ناتواں ہے مری جان بھی مزید

    غمت خسرو چہ گوید آشکارا
    کہ نتوان گفت راز تو نہان نیز

    غم تیرا آشکارا تھا خسرو نے کب کہا
    کہ ضعف نے کیا غم پنہان بھی مزید
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 6
  7. فرخ منظور

    فرخ منظور لائبریرین

    مراسلے:
    12,698
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Cold
    تیری خاطر ہے خصومت دل سے

    مرا بہرت خصومت ہا ست با دل
    کنون با من درین سودا و با دل

    تیری خاطر ہے خصومت دل سے
    تیرا سودا ہے عداوت دل سے

    اگر باد سر زلفت ہمن است
    کجا ما و کجا جان و کجا دل

    تری زلفوں سے ہو اگر کھیلی
    میں رہوں گا نہ شکائیت دل سے

    ز تو از گوشہء چشمی اشارت
    زما عقل و زما جان و زما دل

    گر تری آنکھ اشارہ کردے
    پھر مری عقل کو راحت دل سے

    چہ گویندم کہ دل نہ پند بشنو
    کہ صد منزل زن راہست تا دل

    کیا کروں اس کو نصیحت کے سوا
    عقل کو جان کو فرصت دل سے؟

    بیک دلدار بس کن خسرو از انک
    کہ ننہد ہیچ عاشق جا بجا دل

    ایک محبوب ہے خسرو کے لیے
    ورنہ عاشق کو ہے حرمت دل سے
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 4
  8. فرخ منظور

    فرخ منظور لائبریرین

    مراسلے:
    12,698
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Cold
    عشق تیرا ہے کہ ہر لحظہ فزوں ہوتا ہے

    عشق تو ہر لحظہ فزوں می شود
    دل ز غمت قطرہء خوں می شود

    عشق تیرا ہے کہ ہر لحظہ فزوں ہوتا ہے
    اور دل ہے کہ ترے درد میں خوں ہوتا ہے

    در ہوس سلسلہء زلف تو
    عقل مبدل بجنوں می شود

    یہ ہوس ہے کہ ترا سلسلہء زلفِ دراز
    ہوش اس موڑ پہ تبدیلِ جنوں ہوتا ہے

    بسکہ گراں است سر از جامِ عشق
    زیرِ سرم دستِ ستوں می شود

    بسکہ مشکل ہے اٹھانہ سرِ پیمانہء عشق
    زیرِ سر ہاتھ دھرا ہو تو ستوں ہوتا ہے

    عشق تو ورزیم کہ سلطانِ عقل
    در کفِ عشق تو زبوں می شود

    عشق میں تیرے جئیوں اے مرے سلطانِ خرد
    ہاتھ میں عشق کے آخر تو زبوں ہوتا ہے

    دل دلِ خسرو نگر آنِ آتش است
    کز دہش دودِ بروں می شود

    خسرو کے دل میں سلگتی ہے وہ آتش جس سے
    منہ سے اب اس کے صدا دودِ بروں ہوتا ہے
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 4
  9. فرخ منظور

    فرخ منظور لائبریرین

    مراسلے:
    12,698
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Cold
    غم کشی رو بروئے یار کروں

    غم کشی چند یار خویش کنم
    گریہ بر روزگارِ خویش کنم

    غم کشی رو بروئے یار کروں
    گریہ بہ طرزِ روزگار کروں

    با دل خویش درد خود گویم
    مویہ بر سوگوار خویش کنم

    اپنے دل سے کہوں میں درد اپنا
    اپنی آنکھوں کو سوگوار کروں

    چوں بجز غم کسی نہ محرم ماست
    غمِ خود غم گسار خویش کنم

    کوئی محرم نہیں ہے غم کے سوا
    کیوں نہ پھر غم کو غمگسار کروں

    دل نہ و جان نہ پیش تو چہ کنم
    کہ ترا شرمسار خویش کنم

    دل ہی اپنا نہ جان اپنی ہے
    کس لیے تجھ کو شرمسار کروں

    یا ر باید بوقت خوردن غم
    خسرو خستہ یار خویش کنم

    غم میں ایک دوست کی ضرورت ہے
    خسرو کو روبروئے یار کروں
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 4
  10. فرخ منظور

    فرخ منظور لائبریرین

    مراسلے:
    12,698
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Cold
    مہی گذشت کہ چشمم مجالِ خواب ندارد

    مہی گذشت کہ چشمم مجالِ خواب ندارد
    مرا شبی است سیہ رو کہ ماہتاب ندارد

    گیا وہ چاند نظر کو مجالِ خواب نہیں
    شبِ سیہ کے مقدر میں ماہتاب نہیں

    نہ عقل ماند نہ دانش نہ صبر ماند نہ طاقت
    کسی چنین دل بیچارہء خراب ندارد

    رہے نہ ہوش و خرد اور نہ ہی صبر و شکیب
    کسی کا دل بھی یوں بیچارہ و خراب نہیں

    تو ای کہ بامہ من خفتہ ای بناز، شبت خوش
    منم کہ روز مراد من آفتاب ندارد

    تُو میرے چاند سے شب بھر رہا ہے محوِ نیاز
    میں وہ ہوں جس کے مقدّر میں آفتاب نہیں

    چو گویمت کہ بخوابم خوش است دیدن رویت
    نخند بیہدہ پر بیدلی کہ خواب ندارد

    میں کیا کہوں کہ ترا خواب بھی ہے عید مجھے
    نہ ہنس تو اس پہ کہ مجھ کو نصیبِ خواب نہیں

    زحالِ خسرو پرُسی، چہ پرسی اش کہ ز حیرتے
    بپیش روی تو جز خامشی جواب ندارد

    ہمارے حال کا خسرو سے پوچھ حیرت سے
    کہ تیرے سامنے جز خامشی جواب نہیں

     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 3
  11. فرخ منظور

    فرخ منظور لائبریرین

    مراسلے:
    12,698
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Cold
    می نوش کہ دورِ شادمانی است
    خوش باش کہ روز کامرانی است

    شراب پی کہ یہی دورِ شادمانی ہے
    خوشی منا کہ ترا روزِ کامرانی ہے

    مغرور مشو ببانگِ نایی
    کاواز در ای کاروانی است

    غرور کر نہ کر فانی ہے بانسری کی صدا
    یہ وہ صدا ہے جو آوازِ کاروانی ہے

    ہر دم کہ خوشدلی بر آید
    سرمایہ حاصل جوانی است

    ہر ایک لمحہ جو عیش و نشاط میں گزرے
    اصل وہی ہے وہی حاصلِ جوانی ہے

    عشق آمد و عقل رخت پر بست
    ای ہم ز کمالِ کاردانی است

    ورودِ عشق ہوا عقل کو ملی فرصت
    یہ کس کمال کا اندازِ کار دانی ہے

    خسرو بگزاف چند لافی
    بانگ دھل از تہی میانی است

    یہ چند بار جو دعویٰ کیا ہے خسرو نے
    صدائے دھل ہے بظاہر بڑی سہانی ہے

     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 3
  12. فرخ منظور

    فرخ منظور لائبریرین

    مراسلے:
    12,698
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Cold
    می گذشت کہ چشمم مجالِ خواب ندارد
    مرا شبی اس سیہ رو کہ ماہتاب ندارد

    گیا وہ چاند نظر کو مجالِ خواب نہیں
    شبِ سیہ کے مقدّر میں ماہتاب نہیں

    نہ عقل ماند نہ دانش نہ صبر ماند نہ طاقت
    کسی چنینِ دلِ بیچارۂ خراب ندارد

    رہے نہ ہوش و خرد اور نہ ہی صبر و شکیب
    کسی کا دل بھی یوں بیچارہ و خراب نہیں

    تو ای کہ بمہ من خفتہ ای بناز شبت خوش
    منم کہ روز مراد من آفتاب ندارد

    میں کیا کہوں کہ ترا خواب بھی ہے عید مجھے
    نہ ہنس تُو اس پہ کہ مجھ کو نصیبِ خواب نہیں

    زحالِ خسرو پرسی چہ پرسی اش کہ زحیرت
    بپیش روی تو جز خامشی جواب ندارد

    ہمارے حال کا خسرو سے پوچھ حیرت سے
    کہ تیرے سامنے جز خامشی جواب نہیں

     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 3
  13. فرخ منظور

    فرخ منظور لائبریرین

    مراسلے:
    12,698
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Cold
    باز با دردِ جدائی چوں کنم
    باز با ہجرِ آشنائی چوں کنم

    پھر ہوا دردِ جدائی کیا کروں
    پھر ہوی ہجر آشنائی کیا کروں

    دل زجان چو بر کنم روزِ وداع
    ترک آن ترکِ ختائی چوں کنم

    جان و دل کا کیا کروں روزِ وداع
    چھوڑ دوں ترکِ ختائی ، کیا کروں

    عقل گوید پارسائی پیشہ کن
    مست عشقم پارسائی چوں کنم

    عقل کہتی ہے کہ بن جا پارسا
    عشق ہو تو پارسائی کیا کروں

    گفتمش روزِ وداعِ دوستاں
    گر بزودی باز نائی چوں کنم

    دوستوں سے یہ کہا روزِ وداع
    گر خبر جلدی نہ آئی کیا کروں

    گفت کای مستغرق دریای عشق
    خسروم من بی وفائی چوں کنم

    یہ کہا کہ اے غریقِ نہرِ عشق
    ہوں میں خسرو ، بے وفائی کیا کروں

     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 5
  14. فرخ منظور

    فرخ منظور لائبریرین

    مراسلے:
    12,698
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Cold
    باز بوی گل مرا دیوانہ کرد
    باز عقلم را صبا بیگانہ کرد

    پھر آج بوئے گُل مجھے دیوانہ کر گئی
    پھر عقل سے صبا مجھے بیگانہ کر گئی

    گل چو شمع خوبروئی بر فروخت
    بلبل بیچارہ را پروانہ کرد

    اس پھول کی شمع میں ڈھل جانے کی روش
    بلبل غریب تھی جسے پروانہ کر گئی

    جانِ من آں آشنا گوئی توئی
    گو مرا از جان خود بیگانہ کرد

    تو جانِ جاں ہے اور میری آشنا بھی ہے
    کیسے کہوں کہ جان سے بیگانہ کر گی

    من نمی دانم کہ چوں باشد پری
    شکل تو باری مرا دیوانہ کرد

    کیسی پری کہاں کی پری کیا خبر مجھے
    اِک شکل تھی تری مجھے دیوانہ کر گئی

    از دل خسرو چہ پرسی حالِ او
    قبلہ را درکار ایں بت خانہ کرد

    اب پوچھتے ہو کیا دلِ خسرو کا حالِ زار
    کعبے کو اس کی کیفیت بت خانہ کر گئی

     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 3
  15. فرخ منظور

    فرخ منظور لائبریرین

    مراسلے:
    12,698
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Cold
    گفتم کہ روشن از قمر گفتا کہ رخسار منست
    گفتم کہ شیرین از شکر گفتا کہ گفتار منست

    ترجمہ
    پوچھا کہ روشن چاند سے؟ بولا مرا رخسار ہے
    پوچھا کہ میٹھی قند سے؟ بولا مری گفتار ہے

    گفتم طریق عاشقان گفتا وفاداری بود
    گفتم مکن جور و جفا، گفتا کہ این کار منست

    ترجمہ
    پوچھا طریقِ عاشقاں؟ بولا وفاداری مری
    پوچھا کہ یہ جور و جفا؟ بولا مری سرکار ہے


    گفتم کہ مرگِ ناگہاں، گفتا کہ درد هجر من
    گفتم علاج زندگی ،گفتا کہ دیدار منست

    ترجمہ
    پوچھا کہ مرگِ عاشقاں؟ بولا کہ میرا ہجر ہے
    پوچھا علاجِ زندگی؟ بولا مرا دیدار ہے

    گفتم بہاری یا خزاں گفتا کہ رشکِ حسنِ من
    گفتم خجالت کبک را گفتا کہ رفتارِ منست

    ترجمہ
    پوچھا بہارو یا خزاں؟ بولا کہ میں رشکِ چمن
    پوچھا خجالت کبک کو؟ بولا مری رفتار ہے

    گفتم کہ حوری یا پری ، گفتا کہ من شاه ِ بتاں
    گفتم کہ خسرو ناتوان گفتا پرستار منست

    ترجمہ

    پوچھا پری ہو یا حور ہو؟ بولا کہ میں شاہِ جہاں
    پوچھا کہ خسرو ناتواں؟ بولا مرا بیمار ہے
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 2

اس صفحے کی تشہیر